جدید اور قابل تجدید توانائی کی وزارت

گرین ہائیڈروجن کی لاگت کو کم کرنے کے سلسلے میں نیشنل گرین ہائیڈروجن مشن کی کوششیں

Posted On: 09 AUG 2023 5:30PM by PIB Delhi

نئی اور قابل تجدید توانائی اور بجلی کے مرکزی وزیر جناب آر کے سنگھ نے 8 اگست 2023 کو راجیہ سبھا میں دو سوالوں کے تحریری جواب میں یہ اطلاع دی ہے کہ گرین ہائیڈروجن کو قابل تجدید بجلی کا استعمال کرتے ہوئے پانی کے برقی تجزیہ کے ذریعے اور حرارتی و کیمیکل اور حیاتیاتی کیمیکل وسائل کے استعمال کے ذریعے بائیو ماس سے پیدا کیا جا سکتا ہے۔ اس وقت ملک میں قابل تجدید ذرائع سے ہائیڈروجن کی پیداوار بہت محدود ہے۔ کئی اداروں نے بھارت میں گرین ہائیڈروجن/گرین امونیا کے لیے پیداواری سہولیات قائم کرنے کے منصوبوں کا اعلان کیا ہے۔ تاہم یہ ابھی ابتدائی مرحلے میں ہیں۔

وزیر موصوف نے بتایا کہ الیکٹرولائزرز کی لاگت اور اس میں کام آنے والا مواد قابل تجدید توانائی گرین ہائیڈروجن کی پیداواری لاگت کے دو بڑے اجزاء ہیں۔ سرمائے کے اخراجات، پانی کی فراہمی اور علاج، ذخیرہ اور تقسیم، ہائیڈروجن کو مناسب مشتقات میں تبدیل کرنا، اور بنیادی ڈھانچے کو فعال کرنا بھی کسی خاص ایپلی کیشن کے لیے گرین ہائیڈروجن کی حتمی باہم رسائی کی لاگت میں اپنا کردار ادا کرے گا۔ وزیر موصوف نے وضاحت کی کہ کس طرح نیشنل گرین ہائیڈروجن مشن ان پہلوؤں میں لاگت میں کمی کو ممکن بنانے کے لیے ضروری اقدامات کرنے کی کوشش کرتا ہے۔

وزیر موصوف نے بتایا کہ 4 جنوری 2023 کو مرکزی کابینہ نے 19,744 کروڑ روپے کے قومی گرین ہائیڈروجن مشن کو منظوری دی۔ مشن کا بنیادی مقصد گرین ہائیڈروجن اور اس کے مشتقات کی پیداوار، استعمال اور برآمد کے لیے ہندوستان کو ایک عالمی مرکز بنانا ہے۔ مشن کے حصے کے طور پر درج ذیل اجزاء کا اعلان کیا گیا ہے:

  1. برآمدات اور گھریلو استعمال کے ذریعے طلب پیدا کرنے میں سہولت فراہم کرنا؛

  2. گرین ہائیڈروجن ٹرانزیشن (ایس آئی جی ایچ ٹی) پروگرام کے لیے منصوبہ جاتی اقدامات ، 17,490 کروڑ روپے کی لاگت کے ساتھ ایک بڑا مالی اقدام۔ یہ پروگرام الیکٹرولائزرز کی گھریلو مینوفیکچرنگ اور گرین ہائیڈروجن کی پیداوار میں مدد کے لیے دو الگ الگ مالی ترغیباتی میکانزم پر مشتمل ہے۔

  3. سبز سٹیل، نقل و حرکت، جہاز رانی ، غیر ارتقاضی توانائی کی ایپلی کیشنز، بائیو ماس سے ہائیڈروجن کی پیداوار، ہائیڈروجن کی ذخیرہ کاری وغیرہ کے لیے تجرباتی منصوبے؛

  4. گرین ہائیڈروجن مراکز کی ترقی؛

  5. بنیادی ڈھانچے کی ترقی کے لیے تعاون؛

  6. ضوابط اور معیارات کا ایک مضبوط فریم ورک قائم کرنا؛

  7. ریسرچ اینڈ ڈویلپمنٹ پروگرام؛

  8. مہارت کی ترقی کے پروگرام؛ اور

  9. عوامی آگاہی اور رابطہ کاری پروگرام۔

مشن کے پاس گرین ہائیڈروجن یا اس کے مشتقات کے استعمال کے لیے مراعات کا کوئی انتظام نہیں ہے۔

اس مشن سے 2030 تک سالانہ 5 میلن میٹرک ٹن (ملین میٹرک ٹن) گرین ہائیڈروجن کی پیداواری صلاحیت کی ترقی متوقع ہے، جس سے جیواشم ایندھن کی درآمد پر انحصار کو کم کرنے میں مدد ملے گی۔ مشن کے اہداف کے حصول سے 2030 تک جیواشم ایندھن کی درآمدات میں مجموعی طور پر 1 لاکھ کروڑ روپے کی کمی متوقع ہے۔ تقریباً 50 ملین میٹرک ٹن سالانہ سی او 2 کے اخراج کو گرین ہائیڈروجن کے ہدف شدہ مقدار کی پیداوار اور استعمال کے ذریعے روکنے کی امید ہے۔

مشن کا مقصد گرین ہائیڈروجن پروڈکشن ٹکنالوجی کو تیار کرنا اور اس کی پیمائش کرنا اور اسے سستی اور وسیع پیمانے پر قابل رسائی بنانا ہے۔

وزیر موصوف نے بتایا کہ حکومت کی طرف سے دیگر اقدامات بھی کئے جا رہے ہیں تاکہ ہندوستان کو بشمول دیگر،گرین ہائیڈروجن کی پیداوار، استعمال اور برآمد کے لئے عالمی مرکز میں تبدیل کیا جا سکے۔

گرین ہائیڈروجن اور گرین امونیا کے پروڈیوسروں کو 31 دسمبر 2030 سے پہلے شروع کیے گئے پروجیکٹوں کے لیے بین ریاستی ٹرانسمیشن چارجز کی چھوٹ 25 سال کی مدت کے لیے دی گئی ہے۔

بجلی ( سبز توانائی تک کھلی رسائی کے ذریعے قابل تجدید توانائی کو فروغ دینا) رولز، 2022، جو جون 2022 میں مشتہر کیا گیا ہے، نے گرین ہائیڈروجن کی پیداوار کے لیے کھلی رسائی کے ذریعے قابل تجدید توانائی کی فراہمی میں سہولت فراہم کرنے کے لیے دفعات بیان کی ہیں۔

*************

( ش ح ۔س ب ۔ رض (

U. No.8173



(Release ID: 1947317) Visitor Counter : 93


Read this release in: Telugu , English , Punjabi