وزارت ماہی پروری، مویشی پروری و ڈیری

جناب پرشوتم روپالا نے مویشی پروری اور ڈیری کے محکمے کی 9 سال کی اہم کامیابیوں اور اقدامات کے بارے میں میڈیا کو جانکاری دی


محکمہ مویشیوں کی بڑی بیماریوں کے مکمل کنٹرول اور خاتمے اور بنیادی ڈھانچے کی ترقی کے لیے کئی پروگراموں کو نافذ کر رہا ہے: جناب روپالا

اے ایچ ڈی کسانوں کے لیے 27.65 لاکھ سے زیادہ تازہ کسان کریڈٹ کارڈ منظور کیے گئے: جناب روپالا

ہندوستان دنیا میں انڈے کی پیداوار میں تیسرے اور گوشت کی پیداوار میں آٹھویں نمبر پر ہے: جناب پرشوتم روپالا

Posted On: 27 JUN 2023 5:33PM by PIB Delhi

ہندوستان میں مویشیوں اور پولٹری کے وسیع وسائل ہیں، جو دیہی عوام کی سماجی و اقتصادی حالت کو بہتر بنانے میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ مویشی پالن ایک اہم ذریعہ معاش کی سرگرمی ہے، یہ آمدنی میں اضافہ، روزگار کے مواقع فراہم کرتا ہے۔ مویشی پالن کے ذریعے زرعی تنوع دیہی آمدنی میں اضافے کے بنیادی محرکات میں سے ایک ہے۔

مرکزی وزیر جناب پرشوتم روپالا نے میڈیا سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ محکمہ برائے مویشی پالن اور ڈیری نے گزشتہ نو سال کے دوران فی جانور پیداواری صلاحیت میں بہتری کے لیے کئی اہم اقدامات کیے ہیں۔ پیداواری صلاحیت میں اضافے سے ملک کی مارکیٹ اور برآمدی منڈی کے لیے زیادہ دودھ، گوشت اور مویشیوں کے پروڈکٹس کی پیداوار میں مدد ملے گی۔ محکمہ مویشیوں کی بڑی بیماریوں کے مکمل کنٹرول اور خاتمہ اور بنیادی ڈھانچے کی ترقی کے لیے متعدد پروگراموں پر عمل پیرا ہے۔ محکمہ دیگر وزارتوں اور اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ خاص طور پر لائیو اسٹاک سیکٹر کے ذریعے کاشتکاروں کی آمدنی میں اضافہ کرنے میں مدد کرنے کے مشترکہ مقصد کے تناظر میں کوششوں کو مربوط اور ہم آہنگ کر رہا ہے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image0018FB0.jpg

مویشی پروری اور ڈیری کا محکمہ تمام اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ کام کرنے کے لیے پرعزم ہے اور کسانوں کی دہلیز پر معیاری خدمات کی فراہمی کے لیے زیادہ سے زیادہ تعاون فراہم کرے گا۔

مختلف اسکیموں، پروگراموں کے تحت محکمہ مویشی پروری اور ڈیری کے شعبے کی اہم کامیابیاں اور اقدامات درج ذیل ہیں:

مویشی پروری کا شعبہ

مویشی پروری کا شعبہ ہندوستانی معیشت میں زراعت کا ایک اہم ذیلی شعبہ ہے۔ یہ 15-2014 سے 21-2020 (مستقل قیمتوں پر) کے دوران 7.93 فیصد کی مجموعی سالانہ شرح ترقی (سی اے جی آر) سے بڑھی۔ کل زراعت اور اس سے منسلک شعبے میں مویشیوں کا حصہ مجموعی ویلیو ایڈیڈ (جی اے وی) 12:11:5027-06-2023  (مستقل قیمتوں پر) 24.38 فیصد (15-2014) سے بڑھ کر 30.87 فیصد (21-2020) ہو گیا ہے۔ مویشی پالن کے سیکٹر نے 21-2020 میں کل جی وی اے کا 6.2 فیصد حصہ دیا۔

مویشیوں کی آبادی

ملک میں 20ویں مویشی مردم شماری کے مطابق تقریباً 303.76 ملین گائے (گائے، بھینس، متھون اور یاک)، 74.26 ملین بھیڑیں، 148.88 ملین بکریاں، 9.06 ملین سور اور تقریباً 851.81 ملین پولٹری ہیں۔

ڈیری سیکٹر

ڈیری واحد سب سے بڑی زرعی اجناس ہے جو قومی معیشت میں 5 فیصد کا حصہ ڈالتی ہے اور 8 کروڑ سے زیادہ کسانوں کو براہ راست روزگار فراہم کرتی ہے۔ ہندوستان دودھ کی پیداوار میں پہلے نمبر پر ہے جو عالمی دودھ کی پیداوار کا 23 فیصد حصہ تعاون کرتا ہے۔ دودھ کی پیداوار گزشتہ 8 سال میں 51.05 فیصد بڑھ کر 15-2014 کے دوران 146.3 ملین ٹن سے بڑھ کر 22-2021 کے دوران 221.06 ملین ٹن ہوگئی۔ دودھ کی پیداوار گزشتہ 8 سال میں 6.1 فیصد کی سالانہ شرح نمو (سی اے جی آر) سے بڑھ رہی ہے جبکہ دنیا میں دودھ کی پیداوار 1.2 فیصد سالانہ کے حساب سے بڑھ رہی ہے۔ دودھ کی فی کس دستیابی 22-2021 میں 444 گرام فی دن ہے جبکہ 2021 کے دوران عالمی اوسط 394 گرام یومیہ تھی۔

انڈے اور گوشت کی پیداوار

فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن کارپوریٹ شماریاتی ڈیٹا بیس (ایف اے او ایس ٹی اے ٹی) کے پیداواری اعداد و شمار (2020) کے مطابق ہندوستان دنیا میں انڈے کی پیداوار میں 3 ویں اور گوشت کی پیداوار میں 8 ویں نمبر پر ہے۔ ملک میں انڈے کی پیداوار 15-2014 میں 78.48 بلین سے بڑھ کر 22-2021 میں 129.60 بلین تک پہنچ گئی ہے۔ ملک میں انڈے کی پیداوار 7.4 فیصد سالانہ کی شرح (سی اے جی آر) سے بڑھ رہی ہے۔ انڈے کی فی کس دستیابی 2021-22 میں 95 انڈے سالانہ ہے۔ ملک میں گوشت کی پیداوار 15-2014 میں 6.69 ملین ٹن سے بڑھ کر 22-2021 میں 9.29 ملین ٹن ہو گئی ہے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002I6JR.jpg

مویشی پالن اور ڈیری کی اسکیمیں

راشٹریہ گوکل مشن: دیسی بوائین نسلوں کی ترقی اور تحفظ کے لیے

راشٹریہ گوکل مشن کی اہم کامیابیاں/اقدامات

  • ملک گیر مصنوعی افزائش نسل پروگرام- کسانوں کی دہلیز پر مصنوعی افزائش نسل خدمات کی فراہمی: آج تک، 5.71 کروڑ جانوروں کا احاطہ کیا جا چکا ہے، 7.10 کروڑ مصنوعی تخم کاری کی گئی ہے اور اس پروگرام کے تحت 3.74 کروڑ کسانوں کو فائدہ پہنچا ہے۔
  • ملک میں آئی وی ایف ٹیکنالوجی کا فروغ: پروگرام کے تحت اب تک 19248 قابل عمل جنین تیار کیے گئے، 8661 قابل عمل جنین منتقل کیے گئے اور 1343 بچھڑے پیدا ہوئے۔
  • جنس کی چھانٹی شدہ منی کی پیداوار: ملک میں صرف مادہ بچھڑوں کی پیداوار کے لیے 90 فیصد درستگی کے لیے جنس کی چھانٹی شدہ منی کی پیداوار متعارف کرائی گئی ہے۔ پروگرام کے تحت، کسانوں کو 750 روپے کی سبسڈی یا 50 فیصد کی ترتیب شدہ حمل کی قیمت کا 50 فیصد فراہم کیا جاتا ہے۔
  • ڈی این اے کی بنیاد پر جینومک انتخاب: نیشنل ڈیری ڈویلپمنٹ بورڈ نے مقامی نسلوں کے اعلیٰ جانوروں کے انتخاب کے لیے انڈسچپ تیار کیا ہے اور ریفرل آبادی بنانے کے لیے چپ کے ذریعے 25000 جانوروں کو جین ٹائپ کیا گیا ہے۔ دنیا میں پہلی بار بھینسوں کے جینومک انتخاب کے لیے بی یو ایف ایف سی ایچ آئی پی تیار کیا گیا ہے اور اب تک 8000 بھینسوں کو ریفرل آبادی بنانے کے لیے جین ٹائپ کیا گیا ہے۔
  • جانوروں کی شناخت اور سراغ لگانے کی اہلیت: 53.5 کروڑ جانوروں (گائے، بھینس، بھیڑ، بکرے اور سور) کی شناخت اور 12 ہندسوں کی یو آئی ڈی نمبر کے ساتھ پولی یوریتھین ٹیگ کا استعمال کرتے ہوئے رجسٹر کیا جا رہا ہے۔
  • مویشیوں کے بچے کی جانچ اور نسل کا انتخاب: گر، شیوال کی مقامی نسل مویشیوں اور مرہ، مہسانہ کی بھینس کی مقامی نسل کے لیے اولاد کی جانچ کا پروگرام لاگو کیا گیا ہے۔
  • نیشنل ڈیجیٹل لائیو اسٹاک مشن: محکمہ برائے مویشی پالن اور ڈیری، حکومت ہند نے این ڈی ڈی بی کے ساتھ ایک ڈیجیٹل مشن، “نیشنل ڈیجیٹل لائیوسٹاک مشن (این ڈی ایل ایم) شروع کیا ہے۔ اس سے جانوروں کی پیداواری صلاحیت کو بہتر بنانے، جانوروں اور انسانوں دونوں کو متاثر کرنے والی بیماریوں پر قابو پانے، ملکی اور برآمدی منڈیوں کے لیے معیاری مویشیوں کو یقینی بنانے میں مدد ملے گی۔
  • نسل کو بڑھانے کے فارم: اس اسکیم کے تحت پرائیویٹ کاروباریوں کو کیپیٹل لاگت پر 50فیصد (2 کروڑ روپے فی فارم تک) سبسڈی دی جاتی ہے۔ اب تک، ڈی اے ایچ ڈی کی طرف سے 76 درخواستیں منظور کی گئی ہیں اور 14.22 کروڑ روپے سبسڈی کے طور پر این ڈی ڈی بی کو جاری کیے گئے ہیں۔

 

ڈیری کی ترقی کے لیے قومی پروگرام: معیاری دودھ کے لیے بنیادی ڈھانچہ بنانا اور مضبوط کرنا جس میں کولڈ چین کا بنیادی ڈھانچہ شامل ہے جو کسان کو صارف سے جوڑتا ہے۔ 28 ریاستوں اور 2 مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں 185 پروجیکٹوں کو منظوری دی گئی ہے جس کی کل لاگت  3015.35 کروڑ روپے ہے۔ 15-2014 سے 23-2022 (20.06.2023) تک (مرکزی حصہ 2297.25 کروڑ روپے)۔ روپے کی کل رقم 20.06.2023 تک اسکیم کے تحت منظور شدہ نئے پروجیکٹوں کے نفاذ کے لیے 1769.29 کروڑ روپے جاری کیے گئے ہیں۔ روپے کی رقم منظور شدہ پروجیکٹوں کے تحت 1314.42 کروڑ کا استعمال کیا گیا ہے۔

ڈیری سرگرمیوں میں مصروف ڈیری کوآپریٹیو اور فارمر پروڈیوسر تنظیموں کو تعاون کرنا: کوآپریٹو سوسائٹیز اور فارمر پروڈیوسرز تنظیموں کو ڈیری سرگرمیوں میں مصروف عمل کرنے کے لیے نرم ورکنگ کیپٹل لون فراہم کرکے مدد کرنا تاکہ مارکیٹ کے شدید منفی حالات یا قدرتی حالات کی وجہ سے بحران پر قابو پایا جا سکے۔ 30.04.2023 تک، 21-2020 سے، این ڈی ڈی بی نے ملک بھر کی 60 دودھ یونینوں کے لیے 37,008.89 کروڑ روپے کے ورکنگ کیپیٹل لون کی رقم کے مقابلے میں 513.62 کروڑ روپے کی سود کی امدادی رقم کی منظوری دے دی ہے اور 373 روپے جاری کیے ہیں۔ 201.45 کروڑ بطور باقاعدہ سود کی رعایت اور 171.85 کروڑ روپے اضافی سود کی رعایت کے طور پر)۔

ڈیری پروسیسنگ اینڈ انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ فنڈ (ڈی آئی ڈی ایف): دودھ کی پروسیسنگ، ٹھنڈا کرنے اور قیمتوں میں اضافے کے بنیادی ڈھانچے کو بنانے/جدید بنانے کے لیے دودھ کی پروسیسنگ، چِلنگ اور ویلیو ایڈڈ مصنوعات کی سہولیات وغیرہ۔ ڈی آئی ڈی ایف کے تحت، 31.05.2023 تک، 37 منصوبے منظور کیے گئے ہیں۔ روپے کے کل اخراجات کے ساتھ 6776.86 کروڑ اور روپے 2353.20 کروڑ روپے کے قرض کے مقابلے میں قرض دیا گیا ہے۔ 4575.73 کروڑ روپے کی رقم 88.11 کروڑ روپے نابارڈ کو سود کی امداد کے طور پر جاری کیے گئے ہیں۔

قومی لائیو اسٹاک مشن: اسکیم کا فوکس روزگار پیدا کرنے، کاروباری ترقی کی طرف ہے۔ فی جانور پیداوری میں اضافہ اور اس طرح گوشت، بکری کے دودھ، انڈے اور اون کی بڑھتی ہوئی پیداوار کو نشانہ بنانا۔ نیشنل لائیوسٹاک مشن کے تحت، پہلی بار، مرکزی حکومت افراد، ایس ایچ جیز، جے ایل جیز، ایف پی اوز، سیکشن 8 کمپنیوں، ایف سی اوز کو ہیچریوں اور بروڈر مدر یونٹس، بھیڑوں اور بکریوں کی افزائش کے ساتھ پولٹری فارم قائم کرنے کے لیے براہ راست 50فیصدسبسڈی فراہم کر رہی ہے۔ فارم، سور کا فارم اور فیڈ اور چارہ یونٹ۔ اب تک ڈی اے ایچ ڈی کی طرف سے 661 درخواستوں کو منظوری دی گئی ہے اور 236 مستفیدین کو سبسڈی کے طور پر 50.96 کروڑ روپے جاری کیے گئے ہیں۔

اینیمل ہسبنڈری انفراسٹرکچر ڈیولپمنٹ فنڈ: انفرادی کاروباریوں، نجی کمپنیوں، ایم ایس ایم ای، فارمرز پروڈیوسرز آرگنائزیشنز (ایف پی او) اور سیکشن 8 کمپنیوں کے ذریعے سرمایہ کاری کی ترغیب دینے کے لیے (i) ڈیری پروسیسنگ اور ویلیو ایڈیشن انفراسٹرکچر اور (ii) گوشت کے بنیادی ڈھانچے میں اضافی ویلیو اسٹرکچر کے قیام کے لیے اور (iii) اینیمل فیڈ پلانٹ (iv) مویشی/بھینس/بھیڑ/بکری/سور اور تکنیکی طور پر معاون پولٹری فارموں کے لیے نسل کی بہتری کی ٹیکنالوجی اور نسل کی ضرب کاری کے فارم۔ اب تک بینکوں کے ذریعے منظور کیے گئے 309 پروجیکٹوں کی کل پروجیکٹ لاگت 7867.65 کروڑ روپے ہے اور کل پروجیکٹ کی لاگت میں سے 5137.09 کروڑ روپے مدتی قرض ہے۔ 58.55 کروڑ روپے کی رقم سود کی امداد کے طور پر جاری کی گئی ہے۔

مویشیوں کی صحت اور بیماریوں کی روک تھام پروگرام: ویکسینیشن کے ذریعے معاشی اور زونوٹک اہمیت کی حامل جانوروں کی بیماریوں کی روک تھام، کنٹرول اور روک تھام کے لیے۔ آج تک، کانوں پر ٹیگ لگائے گئے جانوروں کی کل تعداد تقریباً 25.04 کروڑ ہے۔ ایف ایم ڈی کے دوسرے دور میں اب تک 24.18 کروڑ جانوروں کو ٹیکہ لگایا جا چکا ہے۔ ایف ایم ڈی ویکسینیشن کا راؤنڈ III جاری ہے اور اب تک 4.66 کروڑ جانوروں کو ٹیکے لگائے گئے ہیں۔ اب تک 2.19 کروڑ جانوروں کو بروسیلا سے بچاؤ کے ٹیکے لگائے جا چکے ہیں۔ 16 ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں 1960 موبائل ویٹرنری یونٹس (ایم وی یوز) کو جھنڈا لگایا گیا ہے۔ جن میں سے 1181 ایم وی یوز 10 ریاستوں میں کام کر رہے ہیں۔

مویشی مردم شماری اور مربوط نمونہ سروے اسکیم:

مربوط نمونہ سروے: بڑے لائیواسٹاک پروڈکٹس (ایم ایل پی) جیسے دودھ، انڈے، گوشت اور اون کے تخمینے سامنے لانے کے لیے۔ تخمینوں کو محکمہ کے بنیادی حیوانات کے شماریات کی سالانہ اشاعت (بی اے ایچ ایس) میں شائع کیا گیا ہے۔ حال ہی میں 22-2021 کی مدت کے لیے بنیادی مویشیوں کے اعدادوشمار (بی اے ایچ ایس)- 2022 شائع ہوا ہے۔

مویشیوں کی مردم شماری: دیہی اور شہری علاقوں میں گھریلو سطح تک مویشیوں کی آبادی، انواع اور نسل کے لحاظ سے عمر، جنس کی ساخت وغیرہ کے بارے میں معلومات فراہم کرنا۔ حال ہی میں، تمام ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے محکمہ حیوانات کی شرکت کے ساتھ سال 2019 میں 20ویں مویشیوں کی مردم شماری مکمل ہوئی ہے۔ 20ویں لائیوسٹاک مردم شماری 2019 کے نام سے آل انڈیا رپورٹ شائع کی گئی ہے جس میں مویشیوں کی انواع کے لحاظ سے اور ریاست وار آبادی پر مشتمل ہے۔ مذکورہ بالا کے علاوہ، محکمہ نے لائیو سٹاک اور پولٹری پر نسل کے لحاظ سے رپورٹ بھی شائع کی ہے (20ویں مویشیوں کی مردم شماری پر مبنی)۔

دودھ کوآپریٹیو اور دودھ پیدا کرنے والی کمپنیوں کے ڈیری فارمرز کے لیے کسان کریڈٹ کارڈز (کے سی سی): اب تک،اے ایچ ڈی کسانوں کے لیے 27.65 لاکھ سے زیادہ تازہ کے سی سیز منظور کیے گئے ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ش ح۔ م ع۔ع ن

 (U: 6548)



(Release ID: 1935781) Visitor Counter : 115


Read this release in: English , Hindi , Odia , Tamil , Telugu