کامرس اور صنعت کی وزارتہ

جناب پیوش گوئل نے غریب ممالک کے درمیان لچکدار سپلائی چین بنانے، تجارت بڑھانے اور سیاحت کو فروغ دینے کے لیے نئی شراکت داری قائم کرنے پر زور دیا


بھارت جنوب میں دلچسپی رکھنے والے ممالک کے ساتھ ترجیحی تجارتی معاہدے کرنے کے لیے کھلا ہے: ’وائس آف گلوبل ساؤتھ سمٹ‘ میں جناب گوئل

جناب گوئل نے کووڈ-19 کی تشخیص اور علاج تک ’’ٹرپس‘‘ کی چھوٹ کی توسیع کے لیے کوششوں کو دوگنا کرنے پر زور دیا

Posted On: 13 JAN 2023 7:24PM by PIB Delhi

نئی دلی،13 جنوری،2023/  بھارت نے 13-12 جنوری 2023 کو ایک خصوصی ورچوئل سمٹ - "وائس آف گلوبل ساؤتھ سمٹ" کی میزبانی کی تھیم کے تحت "آواز کی وحدت، مقصد کی وحدت"۔ وزیر اعظم کے ذریعہ، اور 8 وزارتی اجلاس کی میزبانی بھارت کے متعلقہ کابینہ کے وزراء نے کی۔

تجارت اور صنعت، امور صارفین، خوراک اور عوامی تقسیم اور ٹیکسٹائل کے مرکزی وزیر جناب پیوش گوئل نے آج تجارت اور صنعت کے وزراء کے اجلاس کی میزبانی کی، جس کا موضوع تھا - 'جنوب میں ہم آہنگی کی ترقی: تجارت، ٹیکنالوجی، سیاحت، وسائل ' بینن، بوسنیا اور ہرزیگووینا، برونڈی، وسطی افریقی جمہوریہ، کوٹ ڈیوائر، جمہوری جمہوریہ کانگو، گبون، ہیٹی، ملائیشیا، میانمار، جنوبی سوڈان، تیمور لیسٹے اور زمبابوے کے 13 ممالک کے معزز وزراء نے شرکت کی۔

اپنے ابتدائی کلمات میں وزیر موصوف نے غریب ممالک پر زور دیا کہ وہ نئی شراکتیں اور نظام قائم کریں تاکہ فیصلہ سازی میں غریب ملکوں کی عکاسی ہو سکے ۔ وزیر موصوف نے کہا کہ سربراہی اجلاس کا مقصد غریب ملکوں سے متعلق مسائل اور جی 20، اقوام متحدہ اور دیگر کثیر جہتی ترتیبات جیسے اہم عالمی فورموں کے سامنے ان مسائل پر توجہ دینا ہے۔ اس اجلاس کے موضوع پر اظہار خیال کرتے ہوئے جناب گوئل نے کہا کہ یہ غریب ممالک کی ترقی کے کلیدی ستون ہیں۔

عالمی تجارت اور خاص طور پر ترقی پذیر ممالک پر کووڈ-19 کے اثرات کا ذکر  کرتے ہوئے، انہوں نے لچکدار سپلائی چینز بنانے کے لیے مل کر کام کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے ضروری ادویات کی عالمی سپلائی کو غیر سیاسی کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ انہوں نے کہا، "جون 2022 میں جنیوا میں منعقدہ ڈبلیو ٹی او کی وزارتی کانفرنس میں، بھارت، جنوبی افریقہ، اور دیگر ترقی پذیر ممالک نے ویکسین تک مساوی اور سستی رسائی فراہم کرنے والے ’ٹرپس‘ چھوٹ کے فیصلے کو حاصل کرنے کے لیے مل کر کام کیا۔ ہم ڈبلیو ٹی او میں ’ٹرپس‘ کی چھوٹ کو کووڈ19 کی تشخیص اور علاج تک بڑھانے کے لیے اپنی کوششوں کو دوگنا کر دیں گے۔

جناب گوئل نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ غریب ممالک اب دنیا کی نصف سے زیادہ اقتصادی ترقی میں حصہ لے  رہے ہیں اور 2021 میں غریب ملکوں کی تجارت 5.3  ٹریلین امریکی ڈالرتک پہنچ  رہی ہے۔ اس سلسلے میں، انہوں نے اپنے تمام ممالک کے باہمی فائدے کے لیے تجارتی روابط بڑھانے پر زور دیا۔

اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ بھارت 2008 سے کم ترقی یافتہ ممالک (ایل ڈی سیز) کو ڈیوٹی فری ٹیرف ترجیح (ڈی ایف ٹی پی) اسکیم کے ذریعے یک طرفہ ڈیوٹی فری مارکیٹ تک رسائی فراہم کر رہا ہے، انہوں نے کہا کہ بھارت ترجیحی تجارتی معاہدوں میں داخل ہونے کے لیے  (پی ٹی ایز) جنوب میں دلچسپی رکھنے والے ممالک کے ساتھ بھی کھلا ہے۔

ترقی پذیر دنیا میں کامیابی کے لیے کنیکٹیویٹی کو ایک اہم عنصر قرار دیتے ہوئے، جناب گوئل نے بھارت کی قومی لاجسٹک پالیسی (این ایل پی) اور پی ایم-گتی شکتی کو اس سمت میں اٹھائے گئے اقدامات کے طور پر بتایا۔ انہوں نے کہا کہ غریب ممالک رابطے کے ان ماڈلز میں بہترین طریقوں کا تبادلہ کرنے کے لیے مل کر کام کر سکتے ہیں جو ہم اپنے ممالک میں استعمال کرتے ہیں۔

جناب گوئل نے کہا کہ غریب ممالک بھی عالمی سرمایہ کاری کو آگے بڑھانے میں مدد کر رہے ہیں۔ بھارتی کمپنیاں بیرون ملک بھی بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کر رہی ہیں، بشمول غریب  ممالک میں۔ ترقی پذیر ممالک کے درمیان مالی تعاون ترقی پذیر ممالک کو عالمی پالیسی کے مباحثوں میں مزید مشغول ہونے اور بین الاقوامی ایجنڈے کی تشکیل کے قابل بنا رہا ہے۔

ترقی کے لیے ٹیکنالوجی کے استعمال پر زور دیتے ہوئے، جناب گوئل نے بھارت کے اس تجربے کو شیئر کیا کہ ایک جامع ڈیجیٹل فن تعمیر سماجی و اقتصادی تبدیلی لا سکتا ہے۔ انہوں نے یو پی آئی کی مثالوں کا حوالہ دیا جس نے بھارت کے ڈیجیٹل پیمنٹ لینڈ اسکیپ، کوون پلیٹ فارم کو تبدیل کردیا ہے جس نے بھارت کے کووڈ - 19 ویکسینیشن پروگرام کی کامیابی میں کلیدی کردار ادا کیا ہے۔

سیاحت کے بارے میں، جناب گوئل نےکہا  کہ ترقی پذیر ممالک اب کووڈ کے اثرات سے تیزی سے ابھر رہے ہیں، اور سیاحت کے شعبےمیں  پچھلے ایک سال میں تیزی آئی ہے۔ انہوں نے سیاحت کے فروغ کے لیے غریب ممالک کے ساتھ مل کر کام کرنے پر زور دیا۔ جناب گوئل نے کہا  کہ جنوب کے بہت سے غریب ممالک کے پاس ان وسائل کے بڑے ذخائر ہیں اور اس بات پر زور دیا کہ ہمیں ایسے وسائل کو جنوب کے فائدے کے لیے استعمال کرنے کے لیے مل کر کام کرنا چاہیے۔

جناب گوئل نے یہ کہتے ہوئے اختتام کیا کہ بھارت عالمی جنوب کے ساتھ اپنے ترقیاتی تجربے کا اشتراک کرنے کے لیے تیار ہے، اور دوسرے ساتھی ممالک سے سیکھنے اور ہماری مشترکہ پائیدار اور جامع ترقی کے لیے مزید بات چیت اور تعاون کے لیے ہماری مشترکہ تشویش کے معاملات کو سامنے لانے کے لیے تیار ہے۔

***********

ش ح۔و ا ۔ ع ا                                                   

U 459



(Release ID: 1891165) Visitor Counter : 107


Read this release in: English , Marathi , Hindi