وزارت دفاع
azadi ka amrit mahotsav g20-india-2023

دفاعی شعبے میں خود انحصاری

Posted On: 19 DEC 2022 4:33PM by PIB Delhi

حکومت نے پچھلے کچھ سالوں میں کئی پالیسی اقدامات کیے ہیں اور دفاعی سازوسامان کے مقامی ڈیزائن، ترقی اور تیاری کی حوصلہ افزائی کے لیے اصلاحات لائی ہیں، اس طرح ملک میں دفاعی مینوفیکچرنگ اور ٹیکنالوجی میں خود انحصاری کو فروغ دیا گیا ہے۔ ان اقدامات میں، دیگر باتوں کے ساتھ، دفاعی حصول کے طریقہ کار (DAP) -2020 کے تحت گھریلو ذرائع سے خریدو انڈین (IDDM) زمرے کے سرمائے کی اشیاء کی ترجیح کے مطابق خریداری شامل ہے۔ سروسز کی کل 411 آئٹمز کی چار ’مثبت انڈیجنائزیشن لسٹ‘ اور ڈیفنس پبلک سیکٹر انڈرٹیکنگز (DPSUs) کی کل 3,738 اشیا میں سے تین ’مثبت انڈیجنائزیشن لسٹ‘ کا نوٹیفکیشن، جس کے لیے ان کے خلاف اشارہ کردہ ٹائم لائن سے آگے کی درآمد پر پابندی ہوگی؛ طویل مدتی مدت کے ساتھ صنعتی لائسنسنگ کے عمل کو آسان بنانا؛ براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری (ایف ڈی آئی) کی پالیسی کو آزادانہ بنانا؛ جو خودکار راستے کے تحت 74 فیصد ایف ڈی آئی کی اجازت دیتا ہے۔ طریقہ کار کو آسان بنانا؛ مشن ڈیف اسپیس کا آغاز؛ سٹارٹ اپس اور مائیکرو، اسمال اینڈ میڈیم انٹرپرائزز (MSMEs) کو شامل کرکے ڈیفنس ایکسیلنس (iDEX) اسکیم کے لیے اختراعات کا آغاز؛ پبلک پروکیورمنٹ (میک ان انڈیا کو ترجیح) آرڈر 2017 کا نفاذ؛ ہندوستانی صنعتوں بشمول MSMEs کے ذریعہ دیسی بنانے کی سہولت فراہم کرنے کے لیے سریجن نام کے ایک انڈیجنائزیشن پورٹل کا آغاز؛ سرمایہ کاری کو راغب کرنے پر زور کے ساتھ آفسیٹ پالیسی میں اصلاحات اور دفاعی مینوفیکچرنگ کے لیے اعلیٰ ملٹی پلائرز کو تفویض کرکے ٹیکنالوجی کی منتقلی؛ اور دو دفاعی صنعتی راہداریوں کا قیام، ایک ایک اتر پردیش اور تمل ناڈو میں؛ صنعت کے لیے R&D بجٹ کا 25 فیصد مختص کرنا؛ ملکی ذرائع سے خریداری وغیرہ کے لیے فوجی جدید کاری کے دفاعی بجٹ میں بتدریج اضافہ وغیرہ۔

ہماری دفاعی صنعت اب مختلف قسم کی اعلیٰ درجے کی ضروریات کو تیار کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ ٹینک، بکتر بند گاڑیاں، جنگی ہوائی جہاز، ہیلی کاپٹر، جنگی جہاز، آبدوزیں، میزائل، الیکٹرانک آلات، خاص مرکب دھاتیں، خاص مقصد کے اسٹیل، اور گولہ بارود کی اقسام۔ ملک کے اندر ہماری مسلح افواج کو درکار دفاعی ساز و سامان کی تیاری میں مکمل آتم نر بھرتا حاصل کرنے کی سمت میں تیزی سے پیش رفت ہوئی ہے۔ ان اقدامات کے نتیجے میں 155 ایم ایم آرٹلری گن سسٹم ’دھنش‘، ہلکے لڑاکا طیارے ’تیجس‘، سرفیس ٹو ایئر میزائل سسٹم ’آکاش‘، مین بیٹل ٹینک ’ارجن‘ سمیت کئی جدید ترین مصنوعات، -90 ٹینک، T-72 ٹینک، آرمرڈ پرسنل کیریئر، چیتا ہیلی کاپٹر، ایڈوانسڈ لائٹ ہیلی کاپٹر، ہائی موبیلٹی ٹرک، INS کلواری، INS کھندیری، INS چنئی، اینٹی سب میرین وارفیئر کارویٹ (ASWC)، ارجن آرمرڈ ریپیئر اینڈ ریکوری وہیکل، 155 ملی میٹر گولہ بارود کے لیے بائی ماڈیولر چارج سسٹم (BMCS)، میڈیم بلٹ پروف وہیکل (MBPV)، ویپن لوکٹنگ ریڈار (WLR)، انٹیگریٹڈ ایئر۔ کمانڈ اینڈ کنٹرول سسٹم (آئی اے سی سی ایس)، سافٹ ویئر ڈیفائنڈ ریڈیوز (ایس ڈی آر)، بغیر پائلٹ ٹارگٹ ہوائی جہاز کے لیے لکشیہ پیراشوٹ، بیٹل ٹینک کے لیے آپٹو الیکٹرانک سائٹس، واٹر جیٹ فاسٹ اٹیک کرافٹ، انشور پیٹرول ویسل، آف شور پیٹرول ویسل، فاسٹ انٹرسیپٹر بوٹ، لینڈنگ۔ گزشتہ چند سالوں کے دوران ملک میں 25 ٹی ٹگز وغیرہ تیار کیے گئے ہیں۔

مزید برآں، پہلی بار، ہماری صنعت کی طرف سے تیار کی گئی ہندوستان میں تیار کردہ ایڈوانسڈ ٹوویڈ آرٹلری گن (اے ٹی جی) ہووٹزر گن، دہلی کے لال قلعہ میں یوم آزادی کی تقریب کے دوران 21 توپوں کی سلامی کا حصہ تھی۔

دفاع اور ایرو اسپیس میں اختراعات اور ٹیکنالوجی کی ترقی کو فروغ دینے کے لیے اپریل 2018 میں دفاع کے لیے ایک انوویشن ایکو سسٹم کا آغاز کیا گیا تھا جس میں MSMEs، سٹارٹ اپس، انفرادی اختراعی، R&D انسٹی ٹیوٹ اور اکیڈمیا شامل تھے۔ iDEX انہیں اختراعات/R&D انجام دینے کے لیے گرانٹس/فنڈنگ اور دیگر معاونت فراہم کرتا ہے۔ iDEX کے تحت، 233 مسائل کھولے گئے ہیں، 310 اسٹارٹ اپس کو منسلک کیا گیا ہے، 140 معاہدوں پر دستخط کیے گئے ہیں۔ آئی ڈی ای ایکس کے تحت ’آئی ڈی ای ایکس پرائم‘ فریم ورک 2022 میں شروع کیا گیا ہے تاکہ 10 کروڑ روپے تک کی گرانٹ ان ایڈ کے ساتھ اسٹارٹ اپس کی مدد کی جا سکے تاکہ اعلیٰ درجے کے حل کی ترقی کو ممکن بنایا جا سکے۔

اکتوبر 2022 تک دفاعی شعبے میں کام کرنے والی 366 کمپنیوں کو کل 595 صنعتی لائسنس جاری کیے گئے ہیں۔

حکومت نے پچھلے تین سالوں میں یعنی 2019-20 سے 2021-22 تک اور موجودہ سال (2022-23 ستمبر 2022 تک) میں 2,46,989.38 کروڑ روپے کی 163 تجاویز کو قبولیت کی ضرورت (AoN) کی منظوری دی ہے۔ کیپٹل پروکیورمنٹ کے مختلف زمروں کے تحت جو DAP-2020 کے مطابق گھریلو مینوفیکچرنگ کو فروغ دیتے ہیں۔

مجموعی خریداری میں گھریلو خریداری کا حصہ اوپر کے رجحان پر رہا ہے۔ 2018-19 میں، گھریلو خریداری کل خریداری کا 54 فیصد رہی، یہ تعداد 2019-20 میں 59 فیصد اور 2020-21 میں 64 فیصد تک پہنچ گئی۔ اس سال اسے گھریلو خریداری کے لیے بڑھا کر 68 فیصد کر دیا گیا ہے، اس بجٹ میں سے 25 فیصد نجی صنعت سے خریداری کے لیے مختص کیا گیا ہے۔
ملکی وسائل سے دفاعی مصنوعات کی خریداری پر حکومت کی توجہ کے ساتھ، گزشتہ چار سالوں میں یعنی 2018-19 سے 2021-22 کے دوران غیر ملکی ذرائع سے دفاعی خریداری پر خرچ 46 فیصد سے کم ہو کر 36 فیصد رہ گیا ہے۔

دفاعی وزیر مملکت جناب اجے بھٹ نے آج راجیہ سبھا میں جناب راکیش سنہا کے تحریری جواب میں یہ معلومات فراہم کی۔

                                               **************

ش ح۔ ف ش ع- م ف

U: 14046



(Release ID: 1884973) Visitor Counter : 125


Read this release in: English , Tamil