سائنس اور ٹیکنالوجی کی وزارت
azadi ka amrit mahotsav g20-india-2023

ایڈوانسڈ میٹریل اینڈ پروسیس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ (اے ایم پی آر آئی)، بھوپال نے ریڈ مڈ کو ایکس رے شیلڈنگ ٹائلوں میں تبدیل کیا


ٹائلوں کا استعمال تشخیصی ایکس رے، سی ٹی سکینر رومز، کیتھ لیبز، ہڈیوں کے معدنی کثافت اور دانتوں کے ایکسرے میں ریڈی ایشن شیلڈنگ ڈھانچے کی تعمیر کے لیے کیا جا سکتا ہے

Posted On: 29 OCT 2022 7:36PM by PIB Delhi

سی ایس آئی آر-ایڈانسڈ مٹیرئلز اور پروسیز ریسرچ انسٹی ٹیوٹ (اے ایم پی آرآئی) نے ایک مخصوص وزن کے فیصد میں اعلی زمرے کی اشیاء اور جوڑنے والی اشیاء کو ملاکر سیرامک ​​روٹ کے ذریعے ماحول دوست اور اقتصادی طور پر قابل عمل انداز میں ریڈ میڈ کو ایکسرے شیلڈنگ ٹائلوں میں تبدیل کیا ہے۔ 12 ملی میٹر موٹی ٹائلوں میں 100 کے وی پر 2.1 ملی میٹر لیڈ کے مساوی کشندگی ہوتی ہے۔ اس کے علاوہ، تیار شدہ ٹائل میں 34 نیوٹن فی مربع ملی میٹر کی لچکدار طاقت اور 3369 نیوٹن کی زبردست طاقت ہے۔ ان ٹائلوں کو زہریلے لیڈ شیٹس کے بجائے ریڈی ایشن شیلڈنگ ڈھانچے کی تعمیر کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے تاکہ عوام کو تشخیصی ایکسرے، سی ٹی سکینر رومز، کیتھ لیبز، بون منرل ڈینسٹی، ڈینٹل ایکس ریز وغیرہ میں ریڈی ایشن کے خطرات سے بچایا جا سکے۔

s.jpg

آج پالم پور میں منعقدہ ڈائریکٹرز کانفرنس کے دوران، ڈی جی، سی ایس آئی آر اور سکریٹری ڈی ایس آئی آر، حکومت ہند ڈاکٹر این۔ کلیاسالوی نے بروشر کا پہلا شمارہ جاری کیا ہے، جس میں ٹیکنالوجی کے بنیادی اصولوں، اس کے استعمال، میسرز پرزم جانسن کی تجارتی کاری اور ٹیکنالوجی شروعات تک موضوع سے متعلق  کامیابی کی کہانی کی مکمل تفصیل دی گئی ہے۔

‘‘لیڈ فری ایکس رے شیلڈنگ ٹائلز’’ کی تیاری کے مکمل علم کو سی ایس آئی آر، نئی دہلی میں  دس جون 2019 کو میسرز پرزم جانسن لمیٹیڈ کو منتقل کر دیا گیا تھا۔ سی ایس آئی آر –اے ایم پی آر آئی اور میسرز پرزم جانسن لمیٹیڈ نے اس پر مل کر کام کیا ہے اور اس ٹیکنالوجی کو لیبارٹری سے صنعت کی سطح تک ترقی دی ہے اور 14اپریل 2022  کو پائلٹ پیمانے پر مشترکہ مفت ایکس رے شیلڈنگ ٹائلز (30x1.2 cm3) بنائے گئے تھے۔ تیار شدہ ٹائلوں کا تجربہ اور منظوری ہندوستان کے اٹامک انرجی ریگولیٹری بورڈ (اے ای آربی) نے کی ہے۔ مصنوعات کی تجارت کاری آئی این ایس کٹابومن، تمل ناڈو میں شروع ہو چکی ہے۔

سرخ مٹی ایک فضلہ ہے جو باکسائٹ سے ایلومینا بنانے کے بیئر عمل میں پیدا ہوتا ہے۔ اسے باکسائٹ کی باقیات  کے طور پر بھی جانا جاتا ہے۔ ریڈ مڈ کو اعلی حجم کم اثر فضلہ کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔ بیئر کے عمل کے ذریعے باکسائٹ خام سے ایک ٹن ایلومینا کی پیداوار میں تقریباً 1 سے 1.5 ٹن آرایم پیدا کیا جا رہا ہے۔ اس کی زیادہ الکلینٹی اور بھاری عناصر الگ ہونے کی وجہ سے اسے زہریلا سمجھا جاتا ہے۔ عالمی سطح پرسالانہ تقریباً 17.5 کروڑ  ٹن آرایم پیدا ہورہی  ہے اور خاص طور پر بنائے گئے تالابوں میں جمع کی جاتی ہے جو کیچڑ سے گھرے ہوئے ہوتے ہیں۔ ان میں بھارت ہر سال تقریباً 90 لاکھ ٹن ریڈ مڈ  پیدا کر رہا ہے۔ یہ خاص تالاب اکثر  ٹوٹ جاتے ہیں اور مٹی، زمینی پانی اور ہوا کو آلودہ کرتے ہیں اور انسانوں اور جنگلی حیات دونوں کے لیے مہلک بن جاتے ہیں۔

سرخ کیچڑ کم استعمال ہونے والے صنعتی فضلات میں سے ایک ہے اور ایلومینا کی پیداوار میں اضافے اور اس کے استعمال کے لیے مناسب ٹیکنالوجی کی کمی کی وجہ سے برسوں سے اس کی مقدار میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ اگرچہ سائنسی برادری نے سرخ مٹی کی 700 سے زیادہ ایپلی کیشنز کو پیٹنٹ کیا ہے، لیکن زیادہ لاگت، کم عوامی قبولیت، ماحولیاتی مسائل، اور محدود مارکیٹ کی وجہ سے صرف چند ہی صنعت تک پہنچے ہیں۔ قابل ذکر ہے کہ صنعتوں کی طرف سے سیمنٹ، اینٹوں، خام لوہے کے ذرائع وغیرہ کی پیداوار کے لیے صرف 3-4 فیصد سرخ مٹی استعمال کی گئی ہے (یعنی سیمنٹ کی پیداوار کے لیے دس سے پندرہ  لاکھ ٹن (ایم ٹی) ، لوہے کی پیداوار کیلئے  دو سے 12  لاکھ ٹن ، اور  تعمیراتی سازوسامان کے لیے پانچ سے 10 لاکھ ٹن اور پگمینٹس ، کیٹالسٹ، سیرامکس وغیرہ بنانے کے لیے تین لاکھ ٹن)۔ سرخ مٹی کا فائدہ مند استعمال ایک عالمی مسئلہ بنتا جا رہا ہے۔ سرخ کیچڑ میں 30سے 55 فیصد فیرک آکسائیڈ ہوتا ہے، جو کہ ایکس- اور گاما شعاعوں جیسی اعلیٰ توانائی والی آئنائزنگ تابکاری کو کم کرنے کے لیے موزوں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ش ح۔ ع ح

Uno-13166



(Release ID: 1880220) Visitor Counter : 88


Read this release in: English , Hindi