کامرس اور صنعت کی وزارتہ

لداخ پروڈیوز برانڈ کے تحت خوبانی کی برآمدات کو مرکز کی طرف سے رفتار دی گئی


دو ہزار بائس کے سیزن کے دوران لداخ سے سنگاپور ، ماریشس، ویتنام کو 35 میٹرک ٹن تازہ خوبانی برآمد کی گئی

Posted On: 14 SEP 2022 6:20PM by PIB Delhi

نئی دہلی، 14ستمبر، 2022/ کامرس و صنعت کی وزارت نے لداخ سے زرعی اور خوردنی کی اشیاء کی برآمدات کو  بڑھاوا دینے کے مقصد سے اپنے برآمدات کے فروغ کے  ادارے ایپیڈا کے ذریعے لداخ ایپری کوٹ برانڈ کےتحت لداخ سے اس کی برآمد میں اضافے کا عمل شروع کیا ہے۔

امید کی جاتی ہے کہ خوبانی اور دیگر زرعی مصنوعات کی برآمدات کو فروغ دینے کی جانب ایپیڈا کے اقدامات سے خطے کی مجموعی ترقی کی رفتار میں تیزی آئے گی۔ ایپیڈا کی برآمدات کو بڑھاوا دینےکی حکمت عملی میں خوبانی کے پودوں  یا درختوں کی کینوپی مینجمنٹ پر خاص توجہ دی گئی ہے کہ اس میں ایک جیسی اور بہتر کوالٹی کی فصل  ہو۔ اس سے دیرپا مارکیٹنگ ، مصنوعات کو ترقی دینے ، تحقیق و ترقی اور خوبانی کی برانڈ کو فروغ دینے میں مدد ملے گی۔

ایپیڈا نے لداخ کے باغبانی کے محکمے کے ساتھ مل کر بیداری مہم منعقد کرنے کا منصوبہ بھی بنایا ہے۔  یہ مہم کرگل اور لیہ میں کینوپی مینجمنٹ کے ذریعےچلائی جائے گی۔  ایپیڈا مرکز کے زیر انتظام علاقے لداخ کے ساتھ مل کر بنیادی ڈھانچے کی برآمدات کو فروغ دینے کی جانب بھی کام کر رہا ہے۔

لداخ خوبانی کے لیے جی آئی ٹیگ حاصل کرنے کی سمت میں بھی کام جاری ہے۔قابل ذکر بات یہ ہے کہ لداخ میں پیدا ہونے والی خوبانی کا ایک بڑا حصہ مقامی طور پر کھایا جاتا ہے اور صرف تھوڑی سی مقدار خشک شکل میں فروخت کی جاتی ہے۔

کسی بھی مصنوعات کی برآمد کو فروغ دینے میں لاجسٹک سپورٹ کے اہم کردار کو مدنظر رکھتے ہوئے، خطے سے ہموار برآمدات کے لیے، اے پی ای ڈی اے مارکیٹ کنیکٹیویٹی سکیم- پرویز (پرواز) کی طرز پر قریبی بین الاقوامی کلیئرنس پورٹ تک ہوائی اور سڑک کے ذریعے خوبانی کے لیے لاجسٹک سپورٹ کو بڑھانے کے لیے کام کر رہا ہے۔

ایپیڈا نے  سال 2021 کے دوران مرکز کے زیر انتظام علاقے لداخ سے خوبانی کے تازہ پھلوں کی برآمد کی نشاندہی کی تھی۔اور اسے خوبانی سیزن 2021 کے اختتام پر زیر سماعت دبئی کو فراہم کیا گیا تھا۔ اپنے منفرد ذائقے اور خوشبو کی وجہ سے اس مصنوعات کی بین الاقوامی سطح پر بہت زیادہ مانگ تھی اور ساتھ ہی اس پروڈکٹ کی قبولیت بھی تھی۔

ایپیڈا نے خوبانی کی کاشت کے موسم کے آغاز سے عین قبل 14 جون 2022 کو لیہ میں ایک بین الاقوامی خریدار فروخت کنندہ میٹنگ کا بھی اہتمام کیا۔
ہندوستان، امریکہ، بنگلہ دیش، عمان، دبئی، ماریشس وغیرہ جیسے ممالک کے 30 سے ​​زیادہ خریدار مرکز کے زیر انتظام علاقے لداخ سے خوبانی اور دیگر زرعی مصنوعات کے پروڈیوسروں اور سپلائی کرنے والوں کے ساتھ بات چیت کرنے کے لیے جمع ہوئے تھے۔

اس کے نتیجے میں 2022 کے سیزن کے دوران پہلی بار لداخ سے 35 میٹرک ٹن تازہ خوبانی مختلف ممالک کو برآمد ہوئی۔ 2022 کے سیزن میں زیرِ آزمائش کے دوران کھیپ سنگاپور، ماریشس، ویتنام جیسے ممالک کو بھی بھیجی گئی۔

لداخ ملک کا سب سے بڑا خوبانی پیدا کرنے والا ملک ہے جس کی کل پیداوار 15,789 ٹن ہے جو کل پیداوار کا تقریباً 62 فیصد ہے۔ اس خطے نے تقریباً 1,999 ٹن خشک خوبانی کی پیداوار کی، جس سے یہ ملک میں خشک خوبانی کا سب سے بڑا پیدا کرنے والا  ہے۔ لداخ میں خوبانی کی کاشت کا کل رقبہ 2,303 ہیکٹر ہے۔

لداخ کی خوبانی کو ان کے ذائقے اور پتھر کے رنگ کی بنیاد پر دو قسموں میں تقسیم کیا گیا ہے۔کڑوی گٹھلی والے پھل کھنٹے کہلاتے ہیں جس کا مطلب کڑوا ہوتا ہے۔ دوسری طرف، میٹھی گٹھلی والے پھلوں کو نیارمو کہا جاتا ہے، جس کا مطلب میٹھا ہے۔ ان کو بیج پتھر کے رنگ کی بنیاد پر دو ذیلی گروپوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ سفید بیج پتھر والے پھل کو راکٹاس کارپو کہتے ہیں (رکتیس کا مطلب ہے بیج، کارپو کا مطلب سفید) دوسری جانب، بھورے سیڈ اسٹون والے پھل کو راکتسے ناکپو یعنی نیارمو (کالا بیج) کہا جاتا ہے۔

۔۔۔

 

 

ش ح ۔ اس۔ ت ح ۔                                              

U - 10253



(Release ID: 1859392) Visitor Counter : 197


Read this release in: English , Hindi