مکانات اور شہری غریبی کے خاتمے کی وزارت
azadi ka amrit mahotsav

شہری امور سے متعلق قومی ادارے (این آئی یو اے) کے سی-کیوب اور ڈبلیو آر آئی انڈیا نے فطرت پر مبنی حل کے لیے انڈیا فورم کا آغاز کیا

نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف اربن افیئرز (این آئی یو اے) اور ورلڈ ریسورسز انسٹی ٹیوٹ انڈیا (ڈبلیو آر آئی انڈیا) نے شہری آب و ہوا کی لچک پیدا کرنے کے لیے ماحولی نظام پر مبنی خدمات اور فطرت پر مبنی حل کے لیے قومی پلیٹ فارم کا آغاز کیا

Posted On: 29 JUN 2022 5:45PM by PIB Delhi

نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف اربن افیئرز (این آئی یو اے) کے کلائمیٹ سینٹر فار سٹیز (این آئی یو اے سی-کیوب)، ورلڈ ریسورس انسٹی ٹیوٹ انڈیا (ڈبلیو آر آئی انڈیا) اور ان کے شراکت داروں نے آج پولینڈ میں گیارہویں عالمی شہری فورم میں شہری فطرت پر مبنی حل (این بی ایس) کے لئے بھارت کا پہلا قومی اتحاد پلیٹ فارم لانچ کیا۔

ماحولی نظام پر مبنی خدمات اور فطرت پر مبنی حل تیزی سے آب و ہوا کی تبدیلی سے پیدا ہونے والے چیلنجوں جیسے گرمی، شہری سیلاب، ہوا اور پانی کی آلودگی اور طوفان کے اضافے سے نمٹنے کے لیے سرمایہ کاری مؤثر اور پائیدار طریقوں کے طور پر ابھر رہے ہیں۔ موسمیاتی تبدیلی کے اثرات کو کم کرنے کے ساتھ ساتھ این بی ایس مختلف سماجی چیلنجوں سے نمٹنے کے ساتھ ساتھ متعدد ماحولیاتی فوائد فراہم کرنے میں بھی مدد کرتا ہے جس میں غیر محفوظ اور کمزور شہری برادریوں کی لچک پیدا کرنا جو موسمیاتی تبدیلی کی وجہ سے تباہی سے سب سے زیادہ متاثر ہوتے ہیں۔

فطرت پر مبنی حل کے لئے انڈیا فورم کا مقصد این بی ایس کاروباریوں، حکومتی اداروں اور ہم خیال تنظیموں کا ایک مجموعہ بنانا ہے، تاکہ شہری فطرت پر مبنی حل کی پیمائش میں مدد مل سکے۔

  • ایک مشترکہ زبان کا تعین کرنا اور ایسے فوائد کو بتانا جو مقامی سطح پر موجودہ این بی ایس اقدامات کو بڑھانے سمیت اس سے متعلق کارروائیوں سے آگاہ کرتے ہیں۔
  • کثیر اسٹیک ہولڈر کوآرڈینیشن کے ذریعے سرمایہ کاری کو آگے بڑھانا اور ترسیل کے طریقہ کار کو مضبوط کرنا۔
  • مطلع شدہ پالیسیوں، منصوبوں اور پروجیکٹ اقدامات کے ذریعے بھارت میں شہری ماحولی نظام پر مبنی خدمات اور فطرت پر مبنی حل کو مرکزی دھارے میں لانا

پلیٹ فارم کے آغاز کی تقریب میں این آئی یو اے کے ڈائریکٹر، جناب ہتیش ویدیا نے کہا کہ ‘‘یہ ضروری ہے کہ جب ہم آب و ہوا کی کارروائیوں پر کام کرتے ہیں اور اپنے گرین احاطے کو بڑھاتے ہیں تو ہمارے پاس کم لاگت اور پائیدار نقطہ نظر ہونا ضروری ہے۔ یہاں یہ ہے کہ فطرت پر مبنی حل (این بی ایس) کو بھارت کی لچک اور موافقت کی حکمت عملی کے حصے کے طور پر ترجیح دی جانی چاہئے’’۔

اس تقریب میں جی زیڈ انڈیا، انڈیا کلائمیٹ کولیبریٹو، دی نیچر کنزروینسی، ڈبلیو ڈبلیو ایف انڈیا اور ویٹ لینڈز انٹرنیشنل جیسی بنیادی پارٹنر تنظیموں کے نمائندوں نے فورم کے مقاصد کو باہمی تعاون کے ساتھ حاصل کرنے کے لیے اپنی کوششوں کا عہد کیا۔

فورم کے بارے میں بات کرتے ہوئے ڈبلیو آر آئی انڈیا کے سی ای او، ڈاکٹر او پی اگروال نے کہا کہ ‘‘فورم کے بنیادی شراکت داروں کی طاقتوں اور وسائل کو یکجا کرنے سے پورے ماحولی نظام کو درپیش اہم صلاحیت کے چیلنجوں سے نمٹا جا سکتا ہے۔ یہ شہری فطرت پر مبنی حل کو مرکزی دھارے میں لانے اور تیز رفتار کرنے میں زیادہ توجہ مرکوز کرنے کے قابل بنائے گا، جبکہ انفرادی تنظیمی کوششوں کو بڑھانے میں بھی مدد کرے گا۔’’

‘انڈیا فورم فار نیچر بیسڈ سلوشنز’ کی قیادت نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف اربن افیئرز کلائمیٹ سینٹر فار سٹیز (این آئی یو اے سی-کیوب) کر رہی ہے اور سٹیز فار فاریسٹ پہل کے تحت ورلڈ ریسورسز انسٹی ٹیوٹ انڈیا (ڈبلیو آر آئی انڈیا) کے ذریعے لنگر انداز ہے۔ اسے کیٹرپلر فاؤنڈیشن، محکمہ ماحولیات، خوراک اور دیہی امور، حکومت برطانیہ (ڈی ای ایف آر اے) اور ناروے کے بین الاقوامی موسمیاتی اور جنگلاتی اقدام (این آئی سی ایف آئی) کی طرف سے تعاون حاصل ہے۔

 

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ش ح۔م ع۔ع ن

                                                                                                                                      (U: 7090)



(Release ID: 1838095) Visitor Counter : 55


Read this release in: English , Hindi