وزارت دفاع
azadi ka amrit mahotsav

دفاع میں ‘میک ان انڈیا’ اور ‘آتم نربھر بھارت’ کو فروغ دینے کے لیے دفاعی حصول کے طریقہ کار 2020 میں ترمیم کی گئی

تینوں مسلح فورسز اور انڈین کوسٹ گارڈ کی تمام جدید ضروریات کو خریداری کی نوعیت سے قطع نظر مقامی طور پر حاصل کیا جائے گا

ملکی صنعت پر مالی بوجھ کو کم کرنے کے لیے انٹیگریٹی پیکٹ بینک گارنٹی کی ضرورت ختم کر دی گئی

Posted On: 25 APR 2022 7:16PM by PIB Delhi

دفاع میں ‘میک ان انڈیا’ اور ‘آتم نربھر بھارت’ کو مزید فروغ دینے اور کاروبار کرنے میں آسانی کے لیے دفاع کے حصول کے طریقہ کار (ڈی اے پی) 2020 میں درج ذیل طریقے سے  دفاعی خریداری کونسل (ڈی اے سی) کی طرف سے دی گئی منظوریوں کی بنیاد پر ترمیم کی گئی ہے:

·        آگے بڑھتے ہوئے دفاعی خدمات اور انڈین کوسٹ گارڈ کی تمام جدید تقاضوں کو حصولی کی نوعیت سے قطع نظر مقامی طور پر حاصل کیا جانا ہے۔ دفاعی ساز و سامان کی درآمد/ سرمایہ کے حصول کی غیر ملکی صنعت سے سورسنگ صرف ایک استثناء ہونا چاہیے اور اسے دفاعی خریداری کونسل (ڈی اے سی)/وزیر دفاع کی مخصوص منظوری کے ساتھ کیا جانا چاہیے۔

·        جیسا کہ وزارت خزانہ کی طرف سے مشورہ دیا گیا ہے اور مالی تحفظات کو برقرار رکھتے ہوئے بھارتی دفاعی صنعت پر مالی بوجھ کو کم کرنے کے لیے انٹیگریٹی پیکٹ بینک گارنٹی (آئی پی بی جی) کی ضرورت کو ختم کر دیا گیا ہے۔ اس کے بجائے ارنسٹ منی ڈپازٹ (ای ایم ڈی) کو تمام حصول کے معاملات کے لیے ایک بولی سیکیورٹی کے طور پر لیا جائے گا جس کی ایکپٹنس آف نیسیسیٹی (اے او این) کی لاگت 100 کروڑ روپے سے زیادہ ہے۔ ای ایم ڈی منتخب وینڈر کے لیے معاہدوں پر دستخط کرنے تک درست ہو گا اور انتخاب کے اعلان کے بعد باقی وینڈرز کو واپس کر دیا جائے گا۔ معاہدے کے بعد، انٹیگریٹی پیکٹ کا احاطہ پرفارمنس کم وارنٹی بینک گارنٹی (پی ڈبلیو بی جی) کے ذریعے کیا جائے گا۔ مزید برآں حکومت ہند کی موجودہ پالیسی کے مطابق بہت چھوٹی، چھوٹی صنعتوں (ایم ایس ایز) سے ای ایم ڈی کی ضرورت نہیں ہے۔

·        ملک میں وسیع پیمانے پر شرکت اور وسیع بنیاد پر مقامی دفاعی مینوفیکچرنگ سیکٹر کی حوصلہ افزائی کے لیے خریداری کے معاملات میں آرڈر کی کل مقدار کو شارٹ لسٹ شدہ دکانداروں کے درمیان تقسیم کیا جانا چاہیے، جہاں بھی قابل عمل ہو۔ مزید برآں دیگر تکنیکی طور پر اہل بولی دہندگان کو جن کو کنٹریکٹ نہیں دیا گیا ہے، افواج کی طرف سے ایک سرٹیفکیٹ جاری کیا جائے گا جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ پروڈکٹ کا کامیابی سے ٹرائل کیا گیا ہے، تاکہ وینڈروں کو دوسری منڈیوں کی تلاش میں سہولت فراہم کی جا سکے۔

·        ایک ایکو سسٹم کی تشکیل کے لیے جو جدت کو فروغ دیتا ہے اور تحقیقی و ترقیاتی اداروں، تعلیمی اداروں، صنعتوں، سٹارٹ اپس اور انفرادی اختراع کاروں کو شامل کر کے دفاع میں ٹیکنالوجی کی ترقی کی حوصلہ افزائی کرتا ہے، آئی ڈیکس فریم ورک کو اپریل 2018 میں وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے شروع کیا تھا۔ دفاعی حصول طریقہ کار کی موجودہ دفعات آپس میں منسلک ہیں۔ ‘بائی (انڈین- آئی ڈی ڈی ایم)’ کے طریقہ کار کے لیے عملے کی تشخیص، سی این سی اور آئی ڈی ای ایکس خریداری کے لیے معاہدہ دینے کا طریقہ کار، جس میں آرڈر دینے سے پہلے تقریباً دو سال کا طویل عرصہ شامل ہوتا ہے۔ ملک کے ابھرتے ہوئے اسٹارٹ اپ ٹیلنٹ پول کو خود کفیل اور مقامی بنانے کے دو منتروں میں اپنا حصہ ڈالنے کے قابل بنانے کے لیے ڈی اے پی 2020 کے آئی ڈیکس طریقہ کار کے تحت خریداری کے عمل کو آسان بنایا گیا ہے۔ اس کو آسان بنانے کے ساتھ اے او این کی گرانٹ سے لے کر معاہدے پر دستخط کرنے کا وقت کم ہوکر 22 ہفتے رہ جائے گا۔

·        ڈی ای پی 2022 کا میک-II طریقہ کار، جس میں پروٹوٹائپ ڈیولپمنٹ کے مرحلے پر صنعت کی مالی اعانت سے چلنے والے منصوبوں کے ذریعے دفاعی سازوسامان کو مقامی بنانا شامل ہے، پروٹوٹائپس کے واحد مرحلے کے مشترکہ ٹرائلز کو شامل کرکے اور ڈیلیگیٹ کیسز میں ابتدائی خریداریوں کے لیے مقدار کی جانچ اور اسکیلنگ کے ذریعے آسان بنایا گیا ہے۔ آسان بنانے کے بعد میک II کے طریقہ کار میں ٹائم لائنز 122 سے 180 ہفتوں کی موجودہ کل مدت سے کم کرکے 101 سے 109 ہفتوں تک رہ جائیں گی۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

ش ح۔م ع۔ع ن

                                                                                                                                      (U: 4688)



(Release ID: 1820022) Visitor Counter : 42


Read this release in: English , Hindi , Odia