وزارت آیوش

دیہی اور شہری علاقوں میں  آیوش کا  فروغ

Posted On: 09 FEB 2021 12:30PM by PIB Delhi

نئی دہلی ،9؍ فروری  2021: قومی شماریات کے دفتر (این ایس او) ایم او ایس پی آئی کے ذریعے  جولائی 2017 – جون  2018  کے درمیان  کرائے گئے  این ایس  ایس   کے  75  ویں  دور  سے ، جو اشارات  ہندوستان میں  صحت کے حوالے سے  سامنے آئے ہیں، وہ بہت اہم ہیں۔ یہ پایا گیا کہ  95.4  فیصد  مریضوں نے  اپنا علاج  ایلوپیتھی  سے کرایا ، جب کہ  ملکی سطح پر  آیوش (آیوروید،  یوگا  اور  نیچر پیتھی،  یونانی ، سدھا اور  ہومیوپیتھی) کے ذریعے  علاج کرانے والے  مریضوں کی  شرح  محض  4.4  فیصد  ہے۔

دیہی اور  شہری علاقوں  میں  تفصیل  درج ذیل ہے:

پورے ملک میں  اُن مریضوں  کی تعداد  کا فیصد ، جنہوں نے  ایلوپیتھی اور  آیوش  سے اپنا  علاج کرایا ہے

شعبہ

علاج کرا نے والے مریضوں کا فیصد

ایلوپیتھی

آیوش

 

دیہی

95.4

4.5

 

شہری

95.4

4.3

 

 کُل

95.4

4.4

 

 

  ذریعہ: ہندوستان میں صحت  کے حوالے سے    سماجی  تناسب 75  واں  دور (این ایس ایس کے آئی – 75؍ 25.0،   www.mospi.gov.in)

قومی شماریات کے دفتر (این ایس او)  نے  خصوصی طور پر  آیوش  کے حوالے سے  سروے  نہیں کرایا ہے، بلکہ اجتماعی  حیثیت سے  صحت  اور  اس سے جڑے  معاملات  پر  سروے کرایا ہے۔ مزید  یہ کہ  آیوش  نظام  کچھ اس طرح کا نہیں ہے کہ  آیوش  کے ذریعے  فراہم کردہ  تمام  سہولیات  کی بنیاد پر  کوئی سروے  کرایا جاسکے۔

ہندوستان میں  صحت  کے حوالے سے  سماجی کھپت کو لے کر  این ایس ایس  نے  15 ویں دور کا  ، جو  سروے کیا ہے،  اس میں  یہ بات سامنے آئی ہے کہ  شہری علاقوں کے مقابلے  دیہی  علاقوں کے  مردوں  نے  آیوش  سے  اپنا علاج  کرانے کو  ترجیح دی ہے (یہ تعداد 0.6  فیصد ) جب کہ  شہری علاقوں میں  یہ تناسب  بہت کم ہے۔ اسی طرح  شہری خواتین کے مقابلے  دیہی خواتین  کے ذریعے  آیوش  سے علاج  کرانے کا  تناسب  بہت کم ہے۔ شہری  اور دیہی  علاقوں میں  آیوش سے علاج کرانے والے  مردوخواتین  کی تفصیل  درج ذیل ہے:

 

شعبہ

آیوش سے علاج کرا نے والے مریضوں کا فیصد

مرد

خواتین

 

دیہی

4.2

4.7

 

شہری

3.6

5.1

 

کُل

4.1

4.8

 

  ذریعہ: ہندوستان میں صحت  کے حوالے سے  سماجی  تناسب 75  واں  دور (این ایس ایس کے آئی – 75؍ 25.0،   www.mospi.gov.in)

بہر حال  حکومت ہند  ریاستوں  اور  مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے ذریعے  قومی آیوش  مشن کے  نام سے ، جو  اسکیم  نافذ کر رہی ہے، اس کی  خصوصیات  یہ ہیں:

  1. تعاون کرنے والی  ریاستوں ؍ مرکز کےزیر انتظام علاقوں میں  جدید  آیوش  اسپتالوں کی تعمیر  ، آیوش اسپتالوں اور   ڈسپنسریز  کی تجدید کاری، آیوش  دواؤں  کی  سپلائی، تاکہ  آیوش خدمات تک  لوگوں کی  بہتر طور پر رسائی  ہوسکے۔
  2. ریاستوں  ؍  مرکز کے زیر انتظام علاقوں  کو  مضبوط کرکے  آیوش  تعلیمی اداروں  کو  مضبوطی  فراہم کرنا ، تاکہ  تعلیمی اداروں کے  بنیادی  ڈھانچے میں  بہتری لائی جاسکے۔
  3. آیوش  فارمیسی اور  دواؤں  کا تجربہ کرنے والی  لیبارٹریاں قائم کرکے  آیوروید ، سدھا  اور یونانی  و  ہومیوپیتھی  (اے ایس یو  اینڈ  ایچ)  دواؤں  کے معیار  کو  بہتر  بنایا جاسکے۔
  4. میڈی کلینکل پلانٹوں  کی  حوصلہ افزائی کے لئے  اے ایس یو  اور  ایچ  کچی اشیاء  کے  پائیدار  دستیابی۔

اس کے علاوہ  2014  میں  این اے ایم  کے قیام  کے بعد سے موجودہ تاریخ تک  وزارت  میں  ریاستوں ؍ مرکز کے ذریعے زیر انتظام علاقوں میں  این اے ایم کے تحت  مختلف نوعیت کی  سرگرمیوں کو  انجام دینے کے لئے  2583.666 کروڑ روپے  کی مالی  امداد  بھی جاری کرچکی ہے۔

یہ  معلومات  وزیر مملکت (  آیوروید ، یوگا،  نیچر و پیتھی، یونانی،  سدھا اور ہومیوپیتھی کی وزارت) جناب  کرن رجیجو  (اضافی چارج) نے  آج راجیہ سبھا میں  اپنے ایک تحریری جواب میں دی۔

 

********

ش ح۔ج ق ۔ق ر

(10.02.2021)

U : 1364



(Release ID: 1696693) Visitor Counter : 36