بجلی کی وزارت

سولر پینلوں پر معیار اور توانائی کی کارکردگی کو ظاہر کرنے والا ایک اسٹار لیبل ہوگا اور یہ پروگرام پہلے دو سالوں کے لیے رضاکارانہ ہوگا


’’سولر پینلوں کی ا سٹار لیبلنگ سے شہریوں کو فیصلے لینے میں مدد ملے گی‘‘: مرکزی وزیر برائے بجلی اور نئی اور قابل تجدید توانائی جناب آر کے سنگھ

’’اسٹار لیبلنگ سے سولر پینل 2030 تک کاربن ڈائی آکسائیڈ کے اخراج میں 30 ملین ٹن سالانہ کمی کرے گا‘‘

بجلی اور نئی و قابل تجدید توانائی کے مرکزی وزیر جناب آر کے سنگھ کا کہنا ہےکہ حکومت چند سالوں کے بعد 100 فیصد دیسی ساخت (میڈ ان انڈیا) کے سولر پینلوں پر توجہ مرکوز کرے گی

Posted On: 20 OCT 2023 5:37PM by PIB Delhi

حکومت سولر پینلوں کے لیے معیاری اور اسٹار لیبلنگ پروگرام لے کر آئی ہے۔ یہ پروگرام آج 20 اکتوبر 2023 کو نئی دہلی میں مرکزی وزیر برائے بجلی اور نئی و قابل تجدید توانائی جناب آر کے سنگھ کے ذریعے   شروع کیا گیا۔ یہ پروگرام ملک کے شہریوں کو بیورو آف انرجی ایفیشنسی (بی ای ای) کے ذریعہ تیار کردہ اسٹار لیبلنگ اسکیم کے تحت تیار کردہ پی وی ماڈیولز کی خریداری کے لیے باخبر فیصلے کرنے میں مدد کرے گا جو عام طور پر سولر پینل کے نام سے جانے جاتے ہیں۔ یہ اسکیم یکم جنوری 2024 سے 31 دسمبر 2025 تک کی مدت کے لیے ہے۔ اس مدت کے لیے، کوئی لیبلنگ فیس بھی نہیں ہوگی۔

ایک طرف، کارکردگی کے معیارات کی تشکیل صارفین کو ان اخراجات اور توانائی کی بچت کے بارے میں بہتر معلومات فراہم کرے گی جو وہ شمسی پینل کے استعمال سے اٹھائیں گے۔ اس کے ساتھ ساتھ، یہ کوشش قابل تجدید توانائی کے حصے کو بڑھانے اور 2030 تک جی ڈی پی کے اخراج کی شدت کو 45 فیصد تک کم کرنے کے حکومت کے بڑے ہدف میں بھی حصہ ڈالتی ہے۔

’’اب تک، صارفین کے پاس انسٹالرز کی ہدایات پر عمل کرنے کے علاوہ کوئی آپشن نہیں تھا۔ لیکن اسٹار لیبلنگ پروگرام کی آمد سے شہری یہ جان سکتے ہیں کہ سولر پینل کا کون سا برانڈ کم یا زیادہ موثر ہے۔‘‘

وزیرموصوف نے کہا کہ معیارات اور لیبلنگ پروگرام عوامی مفاد میں ہے اور یہ پروگرام عام آدمی اور خواتین کو کس طرح بااختیار بنائے گا جو اپنے گھروں میں سولر پینل لگانا چاہتے ہیں۔  انہوں نے کہا کہ اب جب کہ حکومت شمسی چھت کے پروگرام کو فروغ دے رہی ہے، عام شہری کو اندازہ نہیں ہے کہ کون سا سولر پینل زیادہ یا کم موثر ہے؟ فی الحال یہ صرف بیچنے والے اور انسٹالر پر منحصر ہے۔ ایسی صورتحال میں انسٹالر کچھ بھی کہہ سکتا ہے اور صارف کے پاس اسے چیک کرنے کا کوئی طریقہ نہیں ہے۔ لیکن اب، جو بھی ایسی چھت لگانا چاہتا ہے وہ خود دیکھ سکتا ہے کہ کون سا سولر ماڈیول زیادہ کارآمد ہے اور کون سا کم۔

"سولر پینلوں کو فعال کرنے والا ستارہ 2030 تک کاربن ڈائی آکسائیڈ کے اخراج میں 03 کروڑ ٹن سالانہ کمی کرے گا"

جناب سنگھ نے کہا کہ مفاد عامہ کے علاوہ اس پروگرام کا دوسرا محرک توانائی کی منتقلی پر حکومت کی توجہ ہے۔ انہوں نےکہا ’’اسٹار لیبلنگ کا ہمارا پروگرام دنیا میں سرفہرست ہے اور بیورو آف انرجی ایفیشنسی (بی ای ای) کے صرف 3 سے 4 پروگراموں کے نتیجے میں، مجموعی طور پر، کاربن ڈائی آکسائیڈ کے اخراج میں تقریباً 5 کروڑ 80 لاکھ ٹن سالانہ کمی واقع ہوئی ہے۔ کاربن ڈائی آکسائیڈ کے اخراج میں سالانہ 30 کروڑ ٹن کمی۔ اندازہ یہ ہے کہ اسٹار شمسی پینل کو فعال کرنے سے 2030 تک کاربن ڈائی آکسائیڈ کے اخراج میں 03 کروڑ ٹن سالانہ کمی آئے گی۔ یہ اس کرہ ارض اور انسانوں کی بقا کے لیے ضروری ہے۔‘‘

بجلی اور نئی اور قابل تجدید توانائی کے وزیر نے شمسی پینل کے تمام مینوفیکچررز سے کہا کہ وہ آئیں اور خود کو اسٹار لیبلنگ پروگرام میں درج کرائیں:

وزیرموصوف نے صنعت پر زور دیا کہ وہ اسٹار لیبلنگ پروگرام کے تحت خود کو رجسٹر کریں۔ جناب سنگھ نے کہا کہ یہ پروگرام ابتدائی دو سال تک کےلئے  رضاکارانہ ہے اور اس کے بعد اسے لازمی بنایا جائے گا۔انہوں نے کہا ’’ آج، ہم نے صارفین کو بہتر انتخاب کرنے کا اختیار دیا ہے۔ یہ پروگرام ابتدائی دو سال کے لیے رضاکارانہ ہے اور پھر ایک سال کے بعد ہم اس کا جائزہ لیں گے اور اگر ہمیں معلوم ہوا کہ انڈسٹری لیبلنگ کے لیے آگے نہیں آرہی تو ہم اسے لازمی قرار دیں گے کیونکہ یہ عوامی مفاد کا معاملہ ہے۔ میں تمام ماڈیول مینوفیکچررز سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ خود کو پینل میں شامل کریں۔‘‘

"کچھ سالوں کے بعد، ہمارے پینل 100 فیصد ہندوستان میں بنائے جائیں گے اور بہترین معیار کے ہوں گے"

مرکزی وزیر نے کہا کہ حکومت بہترین معیار کے 100 فیصد دیسی ساختہ (میڈ ان انڈیا) سولر پی وی ماڈیول کی سمت کام کرے گی۔انہوں نے کہا ’’ہم 2 سال بعد ایک پالیسی لائیں گے، جس کے تحت پی وی سیل بھی ہندوستان میں تیار کیے جائیں گے اور کہیں اور سے درآمد نہیں کیے جائیں گے۔ اگلے دو سالوں میں، ہم ہندوستان میں ویفرز بنانے پر توجہ دیں گے تاکہ ہمارے سولر پینل 100 فیصد ہندوستان میں بنائے جائیں اور اعلیٰ معیار کے سولر پینل ہوں، جہاں پہلے سیل اور پھر ان کے لیے ویفر بھی ہندوستان میں بنائے جائیں گے۔ ہندوستان  کسی دوسرے بہترین سے مطمئن نہیں ہوگا،ہمیں بہترین کے علاوہ کچھ نہیں چاہیے۔ لہذا، وقت کے ساتھ ماڈلز اور مینوفیکچررز (اے ایل ایم ایم) کی منظور شدہ فہرست سے کم موثر پینلوں کو ہٹا دیا جائے گا اور پرانے ماڈلز کو حکومت کی طرف سے تعاون نہیں کیا جائے گا۔‘‘

"اسٹار لیبلنگ پروگرام عام شہریوں کو غیرمعمولی رہنمائی فراہم کرے گا"

مرکزی توانائی کے سکریٹری جناب پنکج اگروال نے کہا کہ اسٹار لیبلنگ پروگرام خوردہ صارفین کو شمسی پینل کے مختلف ماڈلز کے درمیان بہتر فرق کرنے کے قابل بنا کر صحیح انتخاب کرنے کے قابل بنائے گا جو فی الحال ایک جیسے نظر آتے ہیں۔ انہوں نے کہا"اسٹار لیبلنگ پروگرام ایک ایسی مارکیٹ میں مصنوعات کی تفریق لائے گا جہاں اب تک مصنوعات کو مکمل طور پر کموڈیٹائز کیا گیا ہے۔ فی الحال شہری یہ نہیں جانتا کہ کون سی پروڈکٹ اچھی ہے۔ یہ پروگرام شہریوں کو صحیح انتخاب کرنے میں مدد کرے گا۔"

"سولر روف ٹاپ کی ترقی میں عام صارفین کو بڑا حصہ ڈالنا ہو گا"

سکریٹری نے کہا کہ حکومت سولر روف ٹاپس کو اپنانے کو وسعت دینے کی کوشش کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا’’بھارت کی زیرصدارت جی20 مباحثوں کے دوران، جی20 رہنماؤں نے سال 2030 تک ہماری توانائی کی کارکردگی کو دوگنا کرنے کا مینڈیٹ پیش کیا۔ ہندوستان نے اپنا معیار اور لیبلنگ پروگرام بھی شروع کیا ہے اور اس میدان میں عالمی رہنما بن گیا ہے جس کی وجہ سے ہم اپنی توانائی کی کارکردگی کے ذریعے اپنے کاربن فوٹ پرنٹ کو ہر سال تقریباً 58 ملین ٹن تک کم کرنے میں کامیاب ہوئے ہیں۔ ہم اب گرڈ پیمانے پر شمسی توانائی کی تعیناتی میں بھی عالمی رہنما ہیں اور اب شمسی چھتوں میں توسیع کے خواہاں ہیں، جس میں عام شہری اور خوردہ صارف کا بھی کلیدی کردار ہوگا۔‘‘

"سولر پینلز کی ترقی تیزی سے ہوئی ہے، اب اور 2030 کے درمیان 200 گیگاواٹ سولر پینل کی گنجائش شامل کی جائے گی۔"

جناب ابھے باکرے، ڈائرکٹر جنرل، بیورو آف انرجی ایفیشنسی (بی ای ای) نے کہا کہ سولر پی وی ماڈیولز کی ترقی زبردست رہی ہے اور مزید بڑھے گی۔ انہوں نے کہا"اب سے اور 2030 کے درمیان، ہمیں امید ہے کہ کم از کم 200 گیگا واٹ شمسی پینل، زمین پر نصب اور سولر روف ٹاپ دونوں شامل کریں گے، کیونکہ اب ہمارے پاس موسمیاتی تبدیلی سے نمٹنے کا ایک پرجوش منصوبہ ہے۔"

یہ پروگرام موثر کارکردگی پر مبنی ہے۔ جناب ابھے باکرے، ڈائرکٹر جنرل، بی ای ای نے کہا کہ یہ پروگرام موثر کارکردگی پر مبنی ہے اور اس سے شمسی پی وی ماڈیول کی کارکردگی میں موجودہ سطح سے 2 فیصد اضافہ متوقع ہے۔ مزید برآں، کارکردگی میں بہتری کی وجہ سے، بجلی کی پیداوار میں بھی 33 گیگا واٹ گھنٹے (جی ڈبلیو ایچ) فی سال اضافہ اور سالانہ 27,000 ٹن سی او 2 کے اخراج میں کمی کی توقع ہے۔

اس کے اثرات کی وضاحت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ عام 10 مربع میٹر چھت والے علاقے پر 1 اسٹار پینل کی جگہ 2 اسٹار سولر پینل لگانے سے 1 اسٹار کے مقابلے میں تقریباً 12 فیصد اضافی بجلی پیدا ہوگی۔ 4 اسٹار اور 5 اسٹار پینلوں کے ساتھ، سولر پینل کی کارکردگی میں یہ اضافہ 29 فیصد سے 35 فیصد تک ہوسکتا ہے۔

اس وقت ایسی 15 ڈیوائسز لازمی نظام میں ہیں، یعنی ایسی ڈیوائسز کو بغیر لیبل کے مارکیٹ میں فروخت نہیں کیا جاسکتا، جب کہ 19 ایسی ڈیوائسز رضاکارانہ نظام میں ہیں جہاں مارکیٹ ابھی تیار ہونے کے مراحل میں ہے۔

اس پروگرام پر ایک پریزنٹیشن یہاں دیکھیجا سکتی ہے۔

************

 

 

ش ح۔ ج ق     ۔ م  ص

 (U:  123 )



(Release ID: 1969993) Visitor Counter : 83


Read this release in: English , Hindi