قانون اور انصاف کی وزارت

آن لائن سماعت کے لیے ای-کورٹس پروجیکٹ

Posted On: 16 MAR 2023 3:45PM by PIB Delhi

قانون اور انصاف کے مرکزی وزیر جناب کرن رجیجو نے راجیہ سبھا میں ایک سوال کے تحریری جواب میں فراہم کی کہ حکومت نے ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے انصاف تک رسائی کو بہتر بنانے کے مقصد سے ضلعی اور ماتحت عدالتوں کو کمپیوٹرائز کرنے کے لیے ملک میں ای-کورٹس مربوط مشن موڈ پروجیکٹ شروع کیا ہے۔ نیشنل ای گورننس پلان کے ایک حصے کے طور پر یہ پروجیکٹ 2007 سے ہندوستانی عدلیہ کے آئی سی ٹی کی ترقی کے لیے "ہندوستانی عدلیہ میں انفارمیشن اور کمیونیکیشن ٹیکنالوجی کے نفاذ کے لیے قومی پالیسی اور ایکشن پلان" کی بنیاد پر زیر عمل ہے۔ ای کورٹس پروجیکٹ کو ای-کمیٹی سپریم کورٹ آف انڈیا اور محکمہ انصاف کے اشتراک سے نافذ کیا جا رہا ہے۔ منصوبے کا پہلا مرحلہ 2011-2015 کے دوران نافذ کیا گیا تھا۔ منصوبے کا دوسرا مرحلہ 2015 میں شروع ہوا جس کے تحت اب تک 18,735 ضلعی اور ماتحت عدالتوں کو کمپیوٹرائز کیا جا چکا ہے۔

عدالتوں کی آئی سی ٹی قابلیت کو بڑھانے کے لیے سپریم کورٹ کی ای کمیٹی اور محکمہ انصاف کے ذریعے ای کورٹس پروجیکٹ کے تحت درج ذیل اقدامات کئے گئے ہیں:

  1. وائیڈ ایریا نیٹ ورک (ڈبلیو اے این)  پروجیکٹ کے تحت 2976 کورٹ سائٹس کو 10 ایم بی پی ایس سے 100 ایم بی پی ایس بینڈوتھ کی رفتار کے ساتھ شروع کیا گیا ہے۔
  2. کیس انفارمیشن سافٹ ویئر(سی آئی ایس) جو ای کورٹ خدمات کی بنیاد بناتا ہے اپنی مرضی کے مطابق فری اینڈ اوپن سورس سافٹ ویئر (ایف او ایس ایس) پر مبنی ہے جسے این آئی سی نے تیار کیا ہے۔ فی الحال سی آئی ایس نیشنل کور ورژن 3.2 ضلعی عدالتوں میں لاگو کیا جا رہا ہے اور سی آئی ایس نیشنل کور ورژن 1.0 کو ہائی کورٹس میں لاگو کیا جا رہا ہے۔
  3. نیشنل جوڈیشل ڈیٹا گرڈ (این جے ڈی جی) احکامات، فیصلوں اور مقدمات کا ایک ڈیٹا بیس ہے، جسے ای کورٹس پروجیکٹ کے تحت ایک آن لائن پلیٹ فارم کے طور پر بنایا گیا ہے۔ یہ ملک کی تمام کمپیوٹرائزڈ ضلعی اور ماتحت عدالتوں کی عدالتی کارروائیوں/فیصلوں سے متعلق معلومات فراہم کرتا ہے۔ مدعی 22.38 کروڑ سے زیادہ مقدمات اور 20.83 کروڑ سے زیادہ احکامات / فیصلوں (01.03.2023 تک) کے سلسلے میں کیس کی صورتحال کی معلومات تک رسائی حاصل کر سکتے ہیں۔ 2020 میں اوپن اے پی آئیز متعارف کرائے گئے ہیں تاکہ مرکزی اور ریاستی حکومتوں اور مقامی اداروں سمیت ادارہ جاتی مدعیان کو این جے ڈی جی ڈیٹا تک رسائی کی اجازت دی جائے تاکہ زیر التواء نگرانی اور تعمیل کو بہتر بنایا جا سکے۔
  4. ای کورٹس پروجیکٹ کے حصے کے طور پر ایس ایم ایس پش اینڈ پل (2,00,000 ایس ایم ایس روزانہ بھیجے جاتے ہیں)، ای میل (2,50,000 بھیجے گئے) کے ذریعے وکلاء/مقدمات کو کیس کی حیثیت، کاز لسٹ، فیصلوں وغیرہ کے بارے میں روزانہ حقیقی وقت کی معلومات فراہم کرنے کے لیے 7 پلیٹ فارم بنائے گئے ہیں)، کثیر لسانی اور ٹیکٹائل ای کورٹس سروسز پورٹل (روزانہ 35 لاکھ ہٹس)، جے ایس سی (جوڈیشل سروس سینٹرز) اورانفو کیوسکس۔ اس کے علاوہ وکلاء کے لیے موبائل ایپ کے ساتھ الیکٹرانک کیس مینجمنٹ ٹولز (ای سی ایم ٹی) بنائے گئے ہیں (31 جنوری 2023 تک کل 1.64 کروڑ ڈاؤن لوڈ) اور ججز کے لیے جسٹ آئی ایس ایپ (31 دسمبر 2022 تک 18,407 ڈاؤن لوڈز)۔ جسٹ آئی ایس موبائل ایپ اب آئی او ایس میں بھی دستیاب ہے۔
  5. 17 ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں 21 ورچوئل عدالتیں ٹریفک چالان کے مقدمات کو نمٹانے کے لیے کام کر چکی ہیں۔ 21 ورچوئل عدالتوں کے ذریعہ 2.40 کروڑ سے زیادہ مقدمات نمٹائے گئے ہیں اور 33 لاکھ (33,57,972) سے زیادہ مقدمات میں 31.01.2023 تک 359.34 کروڑ روپے سے زیادہ کا آن لائن جرمانہ وصول کیا گیا ہے۔ ہندوستان کی سپریم کورٹ 4,02,937 سماعتیں (لاک ڈاؤن کی مدت کے آغاز سے 31.01.2023 تک) کرکے عالمی رہنما کے طور پر ابھری۔ ہائی کورٹس (77,67,596 مقدمات اور ماتحت عدالتوں میں 1,84,95,235 مقدمات) نے 24.12.2022 تک 2.63 کروڑ ورچوئل سماعتیں کیں۔ 3240 کورٹ کمپلیکس اور اسی طرح کی 1272 جیلوں کے درمیان VC کی سہولیات بھی فعال کی گئی ہیں۔ 2506 VC کیبنز اور 14,443 کورٹ رومز کے VC آلات کے لیے بھی فنڈز جاری کیے گئے ہیں۔ ورچوئل سماعتوں کو فروغ دینے کے لیے 1500 VC لائسنس حاصل کیے گئے ہیں۔ 1732 ڈاکیومنٹ ویژولائزرس کی خریداری کے لیے 7.60 کروڑ روپے جاری کیے گئے ہیں۔
  6. نئے ای فائلنگ سسٹم (ورژن 3.0) کو اپ گریڈ شدہ خصوصیات کے ساتھ قانونی کاغذات کی الیکٹرانک فائلنگ کے لیے متعارف کرایا گیا ہے۔ ای فائلنگ کے قوانین کا مسودہ تیار کیا گیا ہے اور اسے اپنانے کے لیے ہائی کورٹس کو بھیج دیا گیا ہے۔ کل 19 ہائی کورٹس نے 31.01.2023 تک ای فائلنگ کے ماڈل رولز کو اپنایا ہے۔ مزید برآں 25 ہائی کورٹس کے دائرہ اختیار کے تحت 19 ڈسٹرکٹ کورٹس نے 31.01.2023 تک ای فائلنگ کے ماڈل رولز کو اپنایا ہے۔
  7. مقدمات کی ای فائلنگ کے لیے فیس کی الیکٹرانک ادائیگی کے اختیار کی ضرورت ہوتی ہے جس میں کورٹ فیس اور جرمانے شامل ہوتے ہیں جو براہ راست کنسولیڈیٹڈ فنڈ کو قابل ادائیگی ہوتے ہیں۔ کل 20 ہائی کورٹس نے اپنے اپنے دائرہ اختیار میں ای ادائیگیوں کو لاگو کیا ہے۔ کورٹ فیس ایکٹ میں 31.12.2022 تک 21 ہائی کورٹس میں ترمیم کی گئی ہے۔
  8. نیشنل سروس اینڈ ٹریکنگ آف الیکٹرانک پروسیسز (این ایس ٹی ای پی) کو ٹیکنالوجی سے چلنے والے عمل کو پیش کرنے اور سمن جاری کرنے کے لیے شروع کیا گیا ہے۔ اسے فی الحال 28 ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں نافذ کیا گیا ہے۔
  9. بینچ کی تلاش، کیس کی قسم، کیس نمبر، سال، درخواست گزار/ مدعا علیہ کا نام، جج کا نام، ایکٹ، سیکشن، فیصلہ: تاریخ سے تاریخ تک اور مکمل متن کی تلاش جیسی خصوصیات کے ساتھ ایک نیا "ججمنٹ سرچ" پورٹل شروع کیا گیا ہے۔ یہ سہولت سب کو مفت فراہم کی جا رہی ہے۔
  10. نیشنل جوڈیشل ڈیٹا گرڈ (این جے ڈی جی) کے ذریعے بنائے گئے ڈیٹا بیس کا موثر استعمال کرنے اور عوام کو معلومات فراہم کرنے کے لیے 25 ہائی کورٹس میں 39 ایل ای ڈی ڈسپلے میسج سائن بورڈ سسٹم نصب کیے گئے ہیں۔
  11. ای فائلنگ اور ای کورٹس کی خدمات کے بارے میں وسیع پیمانے پر بیداری اور واقفیت پیدا کرنے اور "ہنر مندی کی تقسیم" سے نمٹنے کے لیے ای فائلنگ سے متعلق ایک دستی اور "ای فائلنگ کے لیے رجسٹریشن کیسے کریں" پر ایک بروشر انگریزی، ہندی اور 11 علاقائی زبانوں میں دستیاب کرایا گیا ہے۔ وکلاء ای کورٹ سروسز کے نام سے ایک یوٹیوب چینل بنایا گیا ہے جس میں ای فائلنگ پر ویڈیو ٹیوٹوریل ہیں۔ سپریم کورٹ آف انڈیا کی ای کمیٹی نے ICT خدمات کے بارے میں تربیت اور بیداری کے پروگرام منعقد کیے ہیں۔ ان پروگراموں نے تقریباً 5,13,080 اسٹیک ہولڈرز کا احاطہ کیا ہے، جن میں ہائی کورٹ کے ججز، ضلعی عدلیہ کے ججز، کورٹ اسٹاف، ججز/ڈی ایس اے کے درمیان ماسٹر ٹرینرز، ہائی کورٹس کا تکنیکی عملہ اور ایڈووکیٹ شامل ہیں۔

پروجیکٹ کا مرحلہ دوم اپنی تکمیل کے قریب ہے اور ای کورٹس مرحلہ سوم کے لیے تفصیلی پروجیکٹ رپورٹ (ڈی پی آر) کو 21 اکتوبر 2022 کو ای کمیٹی، سپریم کورٹ آف انڈیا نے حتمی شکل دے دی ہے اور اس کی منظوری دے دی گئی ہے۔ اخراجات کی مالیاتی کمیٹی (ای ایف سی) کی میٹنگ 23.02.2023 کو ہوئی۔ دیگر ای کورٹس پروجیکٹ مرحلہ سوم کی مطلوبہ منظوریاں پیشگی مرحلے میں ہیں۔ پروجیکٹ کے تیسرے مرحلے میں مختلف نئی خصوصیات کی سہولت کا تصور کیا گیا ہے، جن میں سے چند ڈیجیٹل اقدامات ہیں جو ڈیجیٹل اور پیپر لیس عدالتوں کو گھیرے ہوئے ہیں جن کا مقصد عدالت میں عدالتی کارروائی کو ڈیجیٹل فارمیٹ کے تحت لانا ہے۔ آن لائن عدالت جو ڈیجیٹل طور پر فعال سماعتوں کی مختلف شکلوں کی کھوج اور اپنانے کے ذریعے عدالت میں قانونی چارہ جوئی یا وکلاء کی موجودگی کو ختم کرنے پر توجہ مرکوز کرتی ہے۔ ورچوئل عدالتوں کے دائرہ کار کو ٹریفک کی خلاف ورزیوں کے فیصلے سے آگے بڑھانا؛ ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجیز جیسے مصنوعی ذہانت اور اس کے ذیلی سیٹ جیسے آپٹیکل کریکٹر ریکگنیشن (او سی آر) وغیرہ کا استعمال زیر التواء کیس کے تجزیہ، مستقبل میں قانونی چارہ جوئی کی پیش گوئی وغیرہ کے لیے۔

 ای کورٹس کے بنیادی ڈھانچے کی ترقی کے لیے پچھلے تین سالوں کے دوران جاری کیے گئے فنڈز ضمیمہ I میں دیے گئے ہیں۔

ان عدالتوں کی تفصیلات جہاں ورچوئل سماعت ہو رہی ہے ضمیمہ II میں دی گئی ہے۔

ہائی کورٹ کے ججوں کو آن لائن سماعت کرنے کی ٹیکنالوجی سے واقف کرانے کے لیے تربیتی پروگرام منعقد کیے گئے۔

ان تعلیمی پروگراموں کی تفصیلات جو نیشنل جوڈیشل اکیڈمی کی جانب سے ای کورٹس/ای-کمیٹی برائے ہائی کورٹ کے ججوں پر منعقد کی گئی تھیں ذیل میں دی گئی ہیں:

نمبر شمار

پروگرام نمبر

پروگرام کا نام

پروگرام کی تاریخ

شرکاء کی تعداد

1

ص-1276

ای کورٹس پروجیکٹ اور مصنوعی ذہانت کے ابھرتے ہوئے تصور کے ذریعے ہندوستانی عدلیہ کی ICT قابلیت پر ہائی کورٹ کے ججوں کے لیے ورکشاپ

08 اور 09/01/2022

24

2

ص -1300

ہائی کورٹ کے ججز کے لیے ماسٹر ٹرینر پروگرام (ای کمیٹی)

21/08/2022

25

3

ص-1313

ای کمیٹی نیشنل کانفرنس (ای کمیٹی)

06/11/2022

31

4

ص-1334

ای کورٹس تعارفی پروگرام اور کمپیوٹر کی مہارتوں میں اضافہ پروگرام - سطح I اور II (ای کمیٹی)

05/03/2023

31

ای کورٹس پر مندرجہ بالا خصوصی پروگراموں کے علاوہ موجودہ تعلیمی سال 2022-23 کے لیے نیشنل جوڈیشل اکیڈمی کی جانب سے منعقد کی جانے والی علاقائی کانفرنسوں میں سے ہر ایک میں دو سیشن مکمل طور پر ای-کورٹس کے لیے وقف ہیں۔ موجودہ تعلیمی سال کے دوران یعنی 2022-23، NJA نے 8 علاقائی کانفرنسوں کا شیڈول بنایا ہے، جن میں سے اب تک 5 پروگرام منعقد کیے جا چکے ہیں جن میں شرکاء کی کل تعداد 625 تھی (جس میں ہائی کورٹ کے جسٹس اور جوڈیشل افسران شامل ہیں)۔

ضمیمہ-I

آن لائن سماعت کے لیے ای کورٹس پروجیکٹ کے حوالے سے 16/03/2023 کے راجیہ سبھا کے سوال نمبر 1885 کے جواب میں بیان کا حوالہ دیا گیا ہے۔ پچھلے تین سالوں کے دوران انفراسٹرکچر کی ترقی کے لیے  جاری کیے گئے فنڈز یہ ہیں:

نمبر شمار

ہائی کورٹس

2019-20

2020-21

2021-22

1

الہ آباد

15.04

13.79

0.00

2

آندھرا پردیش

0.00

1.96

0.00

3

بمبئی

0.00

8.86

0.00

4

کلکتہ

0.00

4.93

0.00

5

چنڈی گڑھ

4.44

2.34

0.00

6

دہلی

0.00

3.00

0.00

7 (a)

گوہاٹی
(اروناچل پردیش)

0.98

1.52

1.26

7 (b)

گوہاٹی (آسام)

13.68

6.11

3.49

7 (c)

گوہاٹی (میزورم)

0.51

0.72

0.30

7 (d)

گوہاٹی ناگالینڈ

0.70

0.83

0.84

8

گجرات*

0.00

3.48

0.00

9

ہماچل پردیش

0.00

2.00

0.00

10

جموں وکشمیر اور لداخ

0.00

1.00

0.00

11

جھارکھنڈ

5.53

2.98

0.00

12

کرناٹک

9.15

4.29

0.00

13

کیرالا

0.00

2.83

1.58

14

مدھیہ پردیش

11.21

6.28

0.00

15

مدراس

0.00

4.73

0.00

16

منی پور

0.61

1.30

0.76

17

میگھالیہ

0.92

2.32

2.23

18

اڈیشہ

13.46

3.37

0.00

19

پٹنہ

7.08

5.44

0.00

20

پنجاب و ہریانہ

0.00

4.55

0.00

21

راجستھان

1.29

10.58

1.62

22

سکم

1.61

1.01

0.77

23

تلنگانہ

0.00

1.79

0.00

24

تریپورہ

2.24

4.44

0.95

25

اتراکھنڈ

0.00

1.28

0.00

کُل

88.44

107.74

13.80

*گجرات ہائی کورٹ نے 13.12 کروڑ روپے جاری کر دیئے۔ کل استعمال میں جاری کردہ فنڈز شامل ہیں۔

 

ضمیمہ II

16/03/2023 کے راجیہ سبھا کے سوال نمبر 1885 کے جواب میں آن لائن سماعت کے لیے ای کورٹس پروجیکٹ کے حوالے سے بیان کا حوالہ دیا گیا ہے۔ ان عدالتوں کی تفصیلات جہاں ورچوئل سماعت ہو رہی ہے اور 31 جنوری 2023 تک ورچوئل سماعتوں کے ذریعے سنے گئے مقدمات کی تفصیلات یہ ہیں:

31 جنوری 2023 تک ورچوئل سماعتوں کے ذریعے سنے گئے مقدمات کی تفصیلات کے ساتھ ان عدالتوں کی تفصیلات جہاں ورچوئل سماعت ہو رہی ہے۔

نمبر شمار

ہائی کورٹ

ہائی کورٹوں میں سماعتوں کی تعداد

ضلع عدالتوں میں سماعتوں کی تعداد

کُل سماعتیں

1

الہ آباد

241390

4114257

4355647

2

آندھرا پردیش

380252

1412770

1793022

3

بمبئی

38305

80818

119123

4

کلکتہ

139053

81940

220993

5

چھتیس گڑھ

103097

43160

146257

6

دہلی

317729

4502342

4820071

7

گوہاٹی –اروناچل پردیش

2292

8128

10420

8

گوہاٹی-آسام

266160

333777

599937

9

گوہاٹی-میزورم

3963

13268

17231

10

گوہاٹی-ناگالینڈ

930

650

1580

11

گجرات

388929

192808

581737

12

ہماچل پردیش

183904

100200

284104

13

جموں وکشمیر اور لداخ

257708

458532

716240

14

جھارکھنڈ

218343

641727

860070

15

کرناٹک

1170814

123066

1293880

16

کیرالا

160411

541229

701640

17

مدھیہ پردیش

668369

782248

1450617

18

مدراس

1424427

347900

1772327

19

منی پور

38695

15288

53983

20

میگھالیہ

2859

27554

30413

21

اڈیشہ

288674

247949

536623

22

پٹنہ

275754

2116523

2392277

23

پنجاب وہریانہ

581047

1873547

2454594

24

راجستھان

229688

179006

408694

25

سکم

482

12227

12709

26

تلنگانہ

299031

190327

489358

27

تریپورہ

10585

12564

23149

28

اتراکھنڈ

74705

41430

116135

کُل

7767596

18495235

26262831

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ش ح۔ م ع۔ع ن

 (U: 2813)



(Release ID: 1907857) Visitor Counter : 128


Read this release in: English , Tamil