کامرس اور صنعت کی وزارتہ

برآمدات میں اضافے  کی غرض سے مناسب بنیادی ڈھانچے کی تخلیق کے لیے تجارتی بنیادی ڈھانچہ برائے برآمداتی منصوبہ(ٹی آئی ای ایس)) نافذ کیا جا رہا ہے

Posted On: 15 MAR 2023 8:23PM by PIB Delhi

 مالی سال 2017-18 برآمدات میں اضافے کے لیے مناسب انفراسٹرکچر بنانے میں مرکزی اور ریاستی حکومت کی ایجنسیوں کی مدد کرنے کے لیے محکمہ تجارت، حکومت ہند،  ٹریڈ انفراسٹرکچر فار ایکسپورٹ اسکیم (ٹی آئی ای ایس) کو نافذ کر رہا ہے۔  کامرس اور صنعت کی وزارت میں ریاستی وزیر، محترمہ انوپریہ پٹیل نے آج ایک پارلیمانی سوال کے جواب میں یہ بات کہی۔ اس اسکیم کے تحت، ریاستوں/مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں برآمدی ڈھانچے کو قائم کرنے یا اپ گریڈ کرنے کے لیے مرکزی/ریاستی حکومت کی ملکیت والی ایجنسیوں (یا ان کے  مشترکہ پروگراموں جن میں وہ خود  بڑے اسٹیک ہولڈرز ہیں) کو گرانٹ ان ایڈ کی شکل میں مالی امداد فراہم کی جاتی ہے۔ ریاستیں اپنی نافذ کرنے والی ایجنسیوں کے ذریعے بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں کے لیے اس اسکیم سے فائدہ اٹھا سکتی ہیں جن میں اہم برآمدی روابط جیسے بارڈر ہاٹ، لینڈ کسٹم اسٹیشن، کوالٹی ٹیسٹنگ اور سرٹیفیکیشن لیبز، کولڈ چینز، تجارتی فروغ کے مراکز، برآمدی گودام اور پیکیجنگ، ایس ای زیڈس اور بندرگاہوں/ہوائی اڈوں کا کارگوٹرمنلز شامل ہیں۔ اصطلاحات اسکیم کے رہنما خطوط https://commerce.gov.in/trade-promotion/trade-promotion-assistance/ پر دستیاب ہیں۔

مزید برآں، سینٹرل بورڈ آف بالواسطہ ٹیکس اور کسٹمز(سی بی آئی سی) ، محکمہ محصولات نے شپنگ بلوں میں ضلعی سطح کی تفصیلات کو شامل کرنے  کی غرض سے برآمدی ڈیٹا کو ہموار کرنے کے لیے سرکلر نمبر 09/2020 - کسٹمز مورخہ 05.02.2020 جاری کیا ہے۔ اضلاع کی سطح پر برآمدی ڈیٹا کو زیادہ مؤثر طریقے سے حاصل کرنے کے لیے بھی ایسا ہی کیا گیا ہے جس سے برآمدات کے فروغ کی کوششوں میں مدد ملے گی۔

کامرس کا محکمہ ریاستی حکومتوں / مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے ساتھ فعال طور پر بات چیت  اور رابطہ کاری میں مشغول رہا ہے تاکہ ملک سے سامان اور خدمات کی برآمدات کو فروغ دینے کے لیے ریاست کی طاقتوں کے جائزے کی بنیاد پر ایک جامع برآمدی حکمت عملی تیار کرنے میں ان کی مدد کر سکے۔

ٹی آئی ای ایس کے تحت، مالی سال 20-2019، 21-2020، 22-2021  اور 23-2022 (9 مارچ 2023 تک) کے دوران کل 40 برآمدی بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں کے لیے مالی امداد کی منظوری دی گئی ہے۔ محکمہ تجارت کی اسکیم کے تحت پچھلے تین سالوں میں سے ہر ایک اور موجودہ سال کے دوران جاری کیے گئے فنڈز کی ریاستی تفصیلات ذیل میں دی گئی ہیں:

ٹی آئی ای ایس کے تحت منظور شدہ اور جاری کردہ فنڈز کی تفصیلات (مالی سال 20-2019 سے مالی سال 23-2022تک ) (09.03.2023 تک)

 

 

نمبرشمار

ریاست /مرکز کے زیرانتظام علاقے کا نام

سال

نئے منظورشدہ پروجکٹوں کی تعداد

جاری کئے گئے ٹی آئی ای ایس فنڈز( کروڑ روپئے میں )

1.

کرناٹک

2019-20

0

2.65*

2020-21

0

0

2021-22

0

0.35*

2022-23

5

25.92

Total

5

28.92

2.

کیرالہ

2019-20

1

10

2020-21

0

0

2021-22

1

18.09*

2022-23

0

0

Total

2

28.09

3.

منی پور

2019-20

0

0

2020-21

0

5.63*

2021-22

0

0

2022-23

0

0

Total

0

5.63

4.

آندھرا پردیش

2019-20

0

9.9856*

2020-21

2

13**

2021-22

0

0

2022-23

1

1.40

Total

3

24.3856

5.

تمل ناڈو

2019-20

5

15.91*

2020-21

1

14.4584*

2021-22

4

22.94

2022-23

3

28.16*

Total

13

81.4684

6.

مدھیہ پردیش

2019-20

0

8.04*

2020-21

0

0

2021-22

0

0

2022-23

0

0

Total

0

8.04

7.

اتر پردیش

2019-20

0

0.48

2020-21

0

0

2021-22

0

0

2022-23

1

2.74

Total

1

3.22

8

مہاراشٹر

2019-20

0

1.52*

2020-21

1

6.37^

2021-22

0

0

2022-23

0

0

Total

1

7.89

9

تریپورہ

2019-20

0

0

2020-21

2

2.58**

2021-22

0

0

2022-23

0

0

Total

2

2.58

10

مغربی بنگال

2019-20

0

0

2020-21

0

0

2021-22

0

6.83*

2022-23

0

0

Total

0

6.83

11

ہماچل پردیش

2019-20

0

0

2020-21

0

0

2021-22

1

10

2022-23

1

0

Total

2

10

12

چندی گڑھ

2019-20

0

0

2020-21

0

0

2021-22

0

2.82*

2022-23

0

0

Total

0

2.82

13

آسام

2019-20

2

5.7725

2020-21

0

5.6875*

2021-22

0

3.96*

2022-23

0

0

Total

2

15.42

14

پنجاب

2019-20

2

0

2020-21

0

5.77*

2021-22

1

10

2022-23

0

3.43

Total

3

19.20

15

جھارکھنڈ

2019-20

1

9.80

2020-21

0

0

2021-22

0

0

2022-23

0

0

Total

1

9.80

16

سکم

2019-20

0

0

2020-21

1

8.87

2021-22

0

0

2022-23

0

0

Total

1

8.87

17

ہریانہ

2019-20

1

0

2020-21

0

6.06*

2021-22

0

0

2022-23

0

0

Total

1

6.06

18

بہار

2019-20

0

0

2020-21

0

0

2021-22

0

0

2022-23

1

2.88

Total

1

2.88

19

میگھالیہ

2019-20

0

0

2020-21

0

0

2021-22

0

0

2022-23

1

2.41

Total

1

2.41

20

راجستھان

2019-20

0

0

2020-21

0

0

2021-22

0

0

2022-23

1

3.56

Total

1

3.56

 

 

Grant

Total

40

278.074

*پچھلے مالی سال میں منظور شدہ پہلے سے منظور شدہ پروجیکٹ/نئے پروجیکٹ کے لیے بعد کی قسطوں کی ادائیگی بھی شامل ہے۔

 

** فنڈز جن کی تقسیم ابھی باقی ہے۔

^فنڈ مختص کیا گیا لیکن اس کے بعد یہ منصوبہ مالی سال 2022-23 میں منسوخ کر دیا گیا۔

 

پی ایم گتی شکتی نیشنل ماسٹر پلان  (این ایم پی) میں جی آئی ایس پر مبنی پلیٹ فارم کی شکل میں ایک ڈیجیٹل سسٹم ہے جو ملک میں بنیادی ڈھانچے سے متعلق جغرافیائی اعداد و شمار اور حکومت کی مختلف وزارتوں/محکموں کی منصوبہ بندی کے پورٹریٹ کو مربوط کرتا ہے۔ مرکز میں تمام بنیادی ڈھانچہ اور اقتصادی وزارتوں/محکموں اور ریاستوں/مرکز کے زیر انتظام علاقوں نے بھی اپنی مرضی کے مطابق منصوبہ بندی کے پورٹل بنائے ہیں جو پی ایم گتی شکتی  این ایم پی کے ساتھ مربوط ہیں۔ یہ ڈیجیٹل نظام بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں کی مربوط منصوبہ بندی اور ان کے مطابقت پذیر عمل درآمد کے لیے ڈیٹا پر مبنی فیصلہ سازی میں مدد کرتے ہیں۔ پی ایم گتی شکتی میکانزم کو اپناتے ہوئے بنیادی ڈھانچے میں پائی جانے والی 150 سے زیادہ  سنگین خامیوں کی نشاندہی کی گئی ہے۔ اس کا مقصد لاجسٹکس کی لاگت کو کم کرنا اور ملک میں اقتصادی سرگرمیوں کی حمایت کرنا ہے۔

ڈیوٹی ڈرا بیک اسکیم درآمدی مواد پر کسٹم ڈیوٹی اور گھریلو  مواد پر سنٹرل ایکسائز ڈیوٹی کے واقعات کو کم سے کم کرتی ہے جو برآمدی سامان کی تیاری میں استعمال ہوتے ہیں۔ یہ اسکیم کسٹمز ایکٹ، 1962 کی دفعات کے مطابق چلائی جاتی ہے، جسے کسٹمز اور سنٹرل ایکسائز ڈیوٹی ڈرا بیک رولز، 2017 کے ساتھ پڑھا جاتا ہے۔ برآمدی مصنوعات پر ڈیوٹی کی کمی اس بات کو یقینی بناتی ہے کہ برآمدات بین الاقوامی مارکیٹ میں مسابقتی رہیں۔ گزشتہ دو برسوں  اور موجودہ سال کے لیے کل ای ڈی آئی پر مبنی ڈیوٹی ڈرا بیک اخراجات مندرجہ ذیل ہیں:-

 

مالی سال

رقم (کروڑ روپئے میں )**

2020-21

18128

2021-22

23920

23-2022(اکتوبر 2022 تک )

17261

 

جی ایس ٹی کے تحت ایکسپورٹ پر ٹیکس چھوٹ کا کوئی بندوبست نہیں ہے۔ تاہم، برآمد کنندگان یا تو (i) سامان یا خدمات یا دونوں کی برآمد پر ادا کردہ ٹیکس کی واپسی کا دعویٰ کرنے کے اہل ہیں۔ یا (ii) سامان یا خدمات کے سلسلے میں غیر استعمال شدہ ان پٹ ٹیکس کریڈٹ یا دونوں جو ٹیکس کی ادائیگی کے بغیر برآمد کیے گئے ہیں۔ جی ایس ٹی کے تحت برآمد کنندگان کو آئی جی ایس ٹی کی ادائیگی کے ساتھ خدمات کی برآمد اور آئی جی ایس ٹی کی ادائیگی کے بغیر سامان اور خدمات کی برآمد پر فراہم کردہ رقم کی واپسی درج ذیل ہے:

 

مالی سال

رقم (کروڑ روپئے میں )**

2019-20

31632.61

2020-21

52050.25

2021-22

66781.89

2022-23  ( 28 فروری 2023 تک)

63417.55

 

ایکسپورٹ پروڈکٹ  اسکیم میں ڈیوٹیوں اور ٹیکسوں کی معافی (آر او ڈی ٹی ای پی ):آر او ڈی ٹی ای پی اسکیم 2021 میں شروع کی گئی ہے اور اسے محکمہ تجارت کے ذریعہ  مشتہر کیا گیا ہے اور سی بی آئی سی کے ذریعہ اس کا نظم وضبط چلایا جاتا ہے ۔ اسکیم محدود بجٹ والی ہے۔ اسکیم کے تحت مختص بجٹ حسب ذیل ہے:-

 

مالی سال

رقم (کروڑ روپئے میں )**

2021-22

12454

2022-23

13699

 

 

ریاستی اور مرکزی ٹیکس اور لیویز (آر او ایس سی ٹی ایل) اسکیم کی چھوٹ: آر او ایس سی ٹی ایل اسکیم کو محکمہ تجارت کے ذریعہ مشتہر کیا جاتا ہے اور سی بی آئی سی کے زیر انتظام ہے۔ اسکیم بجٹ تک محدود ہے۔ اسکیم کے تحت مختص بجٹ حسب ذیل ہے:-

 

مالی سال

رقم (کروڑ روپئے میں )**

2021-22

6946

2022-23

7640

 

 

**********

 

 

ش ح۔ س ب۔ ف ر

 

U. No.2787



(Release ID: 1907427) Visitor Counter : 105


Read this release in: English