الیکٹرانکس اور اطلاعات تکنالوجی کی وزارت

جناب راجیو چندر شیکھر نے سی ڈیک کے زیر انعقاد کوانٹم کمپیوٹنگ ایکو سسٹم پر دو روزہ سمپوزیم کا افتتاح کیا


وزیر اعظم کا وژن دنیا بھر کے شراکت داروں / کھلاڑیوں کے ساتھ بھارت پر مرکوز کوانٹم ٹیک ایکو سسٹم کو تشکیل دینا ہے:  جناب راجیو چندر شیکھر

کوانٹم کمپیوٹنگ بھارت کے ٹیکیڈ میں ترقی اور توسیع کا مرکزی موضوع ہوگا:  جناب راجیو چندر شیکھر

Posted On: 30 JAN 2023 8:10PM by PIB Delhi

الیکٹرانکس اور انفارمیشن ٹکنالوجی اور ہنرمندی کی ترقی اور انٹرپرینیورشپ کے وزیر مملکت جناب راجیو چندر شیکھر نے آج کہا کہ کوانٹم کمپیوٹنگ بھارت کی ترقی اور بھارت کے ٹیکیڈ میں توسیع کا مرکزی موضوع ہوگا۔

یہ وزیر اعظم جناب نریندر مودی کا وژن ہے کہ وہ دنیا بھر کے شراکت داروں اور کھلاڑیوں کے ساتھ مل کر بھارت پر مرکوز کوانٹم ٹیک ایکو سسٹم کو تشکیل دیں۔ ہم اسٹارٹ اپس، آر اینڈ ڈی لیبارٹریوں، اعلی تعلیمی اداروں کے ساتھ جدت طرازی کا ایک ایکو سسٹم بنانے کے لیے مل کر کام کر رہے ہیں۔ جناب راجیو چندر شیکھر نے سی ڈیک، پونے میں کوانٹم کمپیوٹنگ ایکو سسٹم پر منعقدہ دو روزہ سمپوزیم کا ورچوئل افتتاح کرتے ہوئے کہا کہ کوانٹم کمپیوٹنگ بھارت کے ٹیکیڈ میں ترقی اور توسیع کا مرکزی موضوع ہوگا۔

سمپوزیم کا مقصد کوانٹم کمپیوٹنگ میں بھارت کی صلاحیتوں کو پیش کرنا ہے۔ اس کا مقصد کوانٹم کمپیوٹرز کے بلڈنگ بلاکس بنانے والی ٹیکنالوجیز، سسٹمز اور سب سسٹمز کی جستجو کرنا اور تجارتی پیمانے پر کوانٹم کمپیوٹر کی تعمیر کے لیے کلیدی اسٹیک ہولڈوں کے درمیان ہم آہنگی پیدا کرنا ہے۔

جناب راجیو چندر شیکھر نے کوانٹم کمپیوٹنگ کے تباہ کن کردار کے بارے میں بات کی اور نشاندہی کی کہ یہ اگلا بڑا خیال ہونے جا رہا ہے جو عام طور پر ٹکنالوجی اور خاص طور پر کمپیوٹنگ میں زبردست انقلاب پیدا کرے گا۔

وزیر موصوف نے کہا کہ ہمیں جدت طرازی، اسٹارٹ اپس، ریسرچ لیبز، اعلیٰ تعلیمی اداروں، ملکی کمپنیوں، غیر ملکی کمپنیوں، غیر ملکی ماہرین تعلیم پر مشتمل ایک مکمل ایکو سسٹم کی تعمیر کے لیے مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے تاکہ بھارت پر مرکوز کوانٹم ایکو سسٹم تشکیل دیا جا سکے جو دنیا بھر کے دیگر شراکت داروں اور کھلاڑیوں کے ساتھ بہت اچھا کام کرے۔

اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ کوانٹم کمپیوٹنگ جیسی ٹکنالوجیاں بھارت کی دہائی میں ملک کی اقتصادی توسیع کا مرکز ہوں گی، جناب راجیو چندر شیکھر نے کہا، ’’ایک طرف ہم کوانٹم اور ہائی پرفارمنس کمپیوٹنگ میں صلاحیتیں پیدا کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں اور دوسری طرف ہم صارفین کی مصنوعات تیار کرنا چاہتے ہیں۔ ڈیجیٹل مصنوعات، آلات اور حل اور 1.2 بلین بھارتیوں کو زیادہ ڈیجیٹل بااختیار بناتے ہیں جو 2025-2026 تک انٹرنیٹ سے جڑ جائیں گے۔‘‘

وزیر موصوف نے کہا کہ عزت مآب وزیر اعظم جناب نریندر مودی جی کا وژن بھارت کو محض ٹکنالوجی کے صارفین سے آرکیٹیکٹ، ڈیزائنر اور ٹکنالوجی کے پروڈیوسر کے طور پر تبدیل کرنا ہے اور انھوں نے بتایا کہ کس طرح حکومت نے گذشتہ آٹھ برسوں میں شروع سے ہی الیکٹرانکس مینوفیکچرنگ ایکو سسٹم تشکیل دیا ہے اور بھارت کو الیکٹرانکس کی عالمی سپلائی چین میں ایک قابل اعتماد شراکت دار بنا دیا ہے۔

اس تقریب میں ایم ای آئی ٹی وائی کے سکریٹری جناب الکیش شرما، ایڈیشنل سکریٹری جناب بھوویش کمار، کینیڈا کی کیلگری یونیورسٹی کے پروفیسر بیری سینڈرز، آکسفورڈ یونیورسٹی اور چیئر کوانٹرول اوکس، برطانیہ کے پروفیسر اینڈریو برگس، سی ڈی اے سی کے ڈی جی جناب ای میگیش، آئی ٹی میں آر اینڈ ڈی کی گروپ کوآرڈینیٹر محترمہ سنیتا ورما، ایم ای آئی ٹی وائی، ڈاکٹر ایکتا کپور، ایف ایف ٹی ڈوژن، ڈی ایس ٹی کی سربراہ، ڈی ایس ٹی نے بھی شرکت کی۔ ان کے علاوہ ڈاکٹر پریتی بنزل، سائنسداں 'جی' اور ایڈوائزر، پی ایس اے، بھارت سرکار، کرنل اے کے ناتھ (ریٹائرڈ)، ایگزیکٹو ڈائریکٹر، کارپوریٹ اسٹریٹجی اینڈ سی-ڈی اے سی، پونے، ڈاکٹر انندتا بنرجی، ایڈجنکٹ سائنٹسٹ، سی-ڈی اے سی آر اینڈ ڈی اور بھارت، اسرائیل، نیدرلینڈز، سوئٹزرلینڈ، فن لینڈ اور امریکہ کی ریسرچ لیبز اور صنعتوں کے سینئر سائنسدان بھی اس تقریب میں موجود تھے۔

***

(ش ح - ع ا - ع ر)

U. No. 1012



(Release ID: 1894854) Visitor Counter : 109


Read this release in: English , Hindi