زراعت اور کاشتکاروں کی فلاح و بہبود کی وزارت

زراعت میں انٹرنٹ آف تھنگس  اورمصنوعی ذہانت


حکومت نے زراعت میں مصنوعی ذہانت اورانٹرنٹ آف تھنگس (آئی  اوٹی) کااستعمال کرتے ہوئے مختلف سرگرمیوں کا آغاز کیاہے

ایپلی کیشنز میں صحیح کھیتی باڑی، زراعتی ڈرونز اور ہوپنگ سسٹمز، مویشیوں کی نگرانی، موسمی  حالات کی نگرانی، اسمارٹ گرین ہاؤسز،مصنوعی ذہانت اورانٹرنٹ آف تھنگس پر مبنی کمپیوٹر امیجنگ وغیرہ شامل ہیں

زراعت اور کسانوں کی بہبود کے محکمہ نے 5 معلوماتی ساجھیداروں اور 24 ایگری بزنس انکیوبیٹرز کا تقرر کیا تاکہ مالی امداد فراہم کرکے اور ماحولیاتی نظام کی پرورش کرکے اختراعات اور زرعی کاروبار کو فروغ دیا جا سکے

Posted On: 20 DEC 2022 7:04PM by PIB Delhi

زراعت اورکسانوں  کے بہبود کے مرکزی وزیر جناب نریندرسنگھ تومرنے آ ج لوک سبھا میں ایک تحریری جواب میں بتایا کہ حکومت نے زراعت میں انٹرنیٹ آف تھنگز (آئی  او ٹی) اور مصنوعی ذہانت (اے  آئی) کا استعمال کرتے ہوئے مختلف سرگرمیاں شروع کی ہیں،کچھ سرگرمیاں ذیل میں دی گئی ہیں:

سائنس اور ٹیکنالوجی کا محکمہ (ڈی ایس ٹی) بین الضابطہ سائبر فزیکل سسٹمز (این ایم ۔آئی سی پی ایس) پر ایک قومی مشن نافذ کر رہا ہے۔ اس مشن کے تحت، 25 جدید ٹکنالوجی کے ورٹیکلس (ٹی آئی  ایچ ایس) ملک بھر میں قومی اہمیت کے اعلیٰ اداروں میں جدید ٹیکنالوجی کے ورٹیکل میں قائم کیے گئے ہیں۔ ان میں سے تین ٹی  آئی ایچ ا یس زراعت میں انٹرنیٹ آف تھنگز (آئی او ٹی) اور مصنوعی ذہانت  (اےآئی) کی ایپلی کیشنز میں شامل ہیں جس کا مقصد آئی او ٹی اور مصنوعی ذہانت سمیت مختلف ٹیکنالوجیز کے لیے تحقیق، تبدیلی اور ٹیکنالوجی کا فروغ انجام دیناہے ، یعنی:

روپڑ  کےانڈین انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی (آئی آئی ٹی) میں قائم "ٹیکنالوجیز فار ایگریکلچر اینڈ واٹر" کے عمودی ٹیکنالوجی میں ٹیکنالوجی اینڈ انوویشن فاؤنڈیشن،

آئی آئی ٹی بمبئی میں قائم ہرانٹرنیٹ آف تھنگ اورانٹرنیٹ آف تھنگس کے انٹرنیٹ کےلئےٹکنالوجی عمودی میں  انٹرنیٹ تھنگس اورانٹرنیٹ ایوری تھنگس کا قیام

آئی آئی ٹی کھڑگپور میں قائم ٹکنالوجی عمودی مصنوعی ذہانت اور مشین لرننگ میں اے ون 41 سی پی ایس کا قیام

زراعت میں مصنوعی ذہانت اور انٹرنیٹ آف تھنگس کی کچھ ایپلی کیشنز  صحیح کھیتی باڑی ، زرعی ڈرونز اور ہوپنگ سسٹمز، مویشیوں کی نگرانی ، آب وہوا کے حالات کی نگرانی، اسمارٹ گرین ہاؤسز، مصنوعی ذہانت اورکمپیونٹر امیجنگ وغیرہ کے شعبوں میں ہیں۔مذکورہ 3 اداروں کی طرف سے شروع کی گئی سرگرمیاں اورکام  درج ذیل ہیں:

آئی آئی ٹی روپڑٹیکنالوجی اینڈ انوویشن فاؤنڈیشن انٹرنیٹ آف تھنگس پر مبنی آلات اور سینسر کی سمت کام کر رہا ہے جو کہ پورے ہندوستان میں زعفران کی پیداوار اور سپلائی کے لیے متعارف کرائے جا رہے ہیں۔

آئی او ٹی اور آئی او ای کا ٹی آئی ایچ فاؤنڈیشن موثر اور موثر زرعی ٹیکنالوجی کے ایک منصوبے پر عمل کر رہی ہے، جس کا مقصد موسم میں فصل کی پیداوار کی پیش گوئی کرنے کے لیے زرعی ٹیکنالوجی (ایگری ٹیک) کے لیے ایک اختتامی حل تیار کرنا ہے۔  ای ایگری ایس ایک آئی او ٹی پر مبنی پلیٹ فارم ہے جو اس مقصد کے لیے تیار کیا گیا ہے۔ صحیح زراعت میںآئی او ٹی کے اطلاق کے طور پر، ٹی آئی ایچ زمینی پیرامیٹرز کی نگرانی، ڈرون پر مبنی تصویر کشی اور ڈرون پر مبنی چھڑکاؤکے لیے فضائی روبوٹکس پر توجہ مرکوز کرتا ہے۔ صحیح زراعت میں ا ے آئی کے اطلاق کے لیے، ٹی آئی ایچ کی توجہ ڈیٹا تجزیات کے ماڈل کی پیش گوئی کو فروغ دینے پر ہے تاکہ  محیطی حالات (درجہ حرارت، نمی، ہوا کی رفتار اور بارش کی سمت)، مٹی کے پیرامیٹرز (نمی، درجہ حرارت، برقی کنکٹویٹی، پی ایچ ، این پی کے، سلفر)  اورپتیوں کے گیلے پن کی بنیاد پردانشورانہ فیصلے کئے جاسکیں ۔

اے ون 41 سی پی ایس فاؤنڈیشن فصل کی صحت کی نگرانی اور مٹی کی زرخیزی کی نگرانی کے لیے مصنوعی ذہانت کا استعمال کرتے ہوئے درست زراعت، پیشین گوئی اور پیشن گوئی کے ماڈلز کے لیے  مصنوعی ذہا نت پر مبنی ٹیکنالوجیز تیار کر رہی ہے۔

ڈیجیٹل انڈیا کے اقدامات کے تحت، الیکٹرانکس اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کی وزارت (ایم ای آئی ٹی وی) نے ناسکام اور ریاستی حکومتوں کے ساتھ مل کر بنگلورو، گروگرام، گاندھی نگر اور وشاکھاپٹنم میں انٹرنیٹ آف تھنگس پر مہارت کے سینٹر قائم کیے ہیں۔ ان مراکز کا ایک مقصد یہ ہے کہ ہندوستان کو جدت طرازی کی جمہوریت سازی اور پروٹو ٹائپس کے حصول کے ذریعے آئی او ٹی میں اختراعی مرکز کے طور پر ابھرنے کے قابل بنایا جائے۔ وشاکھاپٹنم میں آئی او ٹی پر مہارت کے سینٹروں کے فوکس ایریاز میں سے ایک زرعی ٹیک ہے اور یہ مختلف اداروں جیسے اسٹارٹ اپس، انٹرپرائزز، وینچر کیپیٹلسٹ، حکومت اور اکیڈمیا کو جوڑتا ہے۔

زراعت اور کسانوں کی بہبود کے محکمے کے تحت  نیشنل ای گورننس پلان ان ایگریکلچر (این ای جی پی اے) پروگرام کے تحت ریاستی حکومتوں کو ڈیجیٹل زراعت کے پروجیکٹوں کے لیے مصنوعی ذہانت اور مشین لرننگ (اے آئی / ایم ایل) ، انٹرنیٹ آف تھنگس (اے آئی /ایم ایل) جیسی ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجیز کے لیے فنڈنگ دیاجاتا ہے۔

 2018-19 کے بعد سے راشٹریہ کرشی وکاس یوجنا (آر کے وی وائی) کے تحت "اختراری زرعی صنعت کاری  کی ترقی کے نام سے ایک پروگرام چل رہا ہے، جس کا مقصد مالی مدد فراہم کرکے اور انکیوبیشن ایکو سسٹم کی پرورش کے ذریعہ اختراعات اور زرعی کاروبار کو فروغ دینا ہے۔ زراعت اور اس سے منسلک شعبوں سے متعلق اسٹارٹ اپس کی حوصلہ افزائی کی جارہی ہے تاکہ کسانوں کو مواقع فراہم کرکے ان کی آمدنی میں اضافہ کیا جائے اور نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے میں براہ راست اور بالواسطہ  طور پر تعاون کیا جائے ۔ اس سلسلے میں، پانچ (5) نالج پارٹنرز (کے پیز) اور 24  ایگری بزنس انکیوبیٹرس(آر۔اے بی آئیز) کو اس محکمے نے ملک بھر کی مختلف ریاستوں میں اس پروگرام کو فعال اور خوش اسلوبی سے انجام دینے کے لیے مشورہ دینے کے لیے مقرر کیا ہے۔ تفصیلات ضمیمہ -I میں ہیں۔

اس پروگرام کے تحت اسٹارٹ اپ زراعت اور ایگرو پروسیسنگ، فوڈ ٹکنالوجی اور ویلیو ایڈیشن، مصنوعی ذہانت (AI)، انٹرنیٹ آف تھنگز ٍ(آئی او ٹی) ، انفارمیشن اینڈ کمیونیکیشن ٹیکنالوجی (آئی سی ٹی) ، بلاک چین ٹکنالوجی (بی سی ٹی)، پریزین فارمنگ اور ڈیجیٹل ایگریکلچر، بلاک چین ٹیکنالوجی، ایگری۔ لاجسٹکس، ویلیو اینڈ سپلائی چین مینجمنٹ، آن لائن/ورچوئل پلیٹ فارم، زرعی۔ توسیع، زرعی۔ معلومات، زرعی میکانائزیشن اور اختراعات، نامیاتی کاشتکاری اور مصنوعات، قدرتی وسائل کا انتظام، قابل تجدید توانائی، کچرے سے دولت حالت کرنا، مویشی پروری، ماہری پروری، ڈیری، ثانوی زراعت، وغیرہ جیسے  متعلقہ سیکٹروں کے مختلف شعبوں میں پروجیکٹس شروع کئے جارہے ہیں ۔

اب تک، زراعت اور اس سے منسلک شعبوں میں کام کرنے والے 1102 اسٹارٹ اپس کاانتخاب کیا گیا ہے  اور 66.83 کروڑ روپے قسطوں میں جاری کیے گئے ہیں۔ ان اسٹارٹ اپس مالی امداد فراہم کرنے سے پہلے مختلف زرعی کاروبار کے انکیوبیشن مراکز یعنی کے پی ایس اورآر۔ اے بی آئی ایس میں دو ماہ تک تربیت دی گئی۔

زرعی تحقیق کی بھارتی کونسل (آئی سی اے آر) کے تحت اداروں نے زراعت میں آئی او ٹی اوراے آئی کے اطلاق پر کام شروع کیا ہے۔ شروع کی گئی سرگرمیوں کی فہرست ضمیمہ II میں دی گئی ہے۔

مہالانوبس نیشنل کراپ فورکاسٹ سنٹر (ایم این سی ایف سی) نے مختلف سرکاری اور پرائیویٹ ایجنسیوں کے ذریعہ فصل کی پیداوار کے تخمینہ کےلئے اختراعی ٹیکنالوجیز کا استعمال کرتے ہوئے پردھان منتری فصل بیمہ یوجنا کے تحت کچھ تجرباتی مطالعات انجام دیئے ہیں ۔ 2019-20 کے دوران،تجربات مطالعات  15 ریاستوں کے 64 اضلاع میں 9 فصلوں کے لیے 12 ایجنسیوں کے ذریعے خلائی ٹیکنالوجی کااستعمال کرتے ہوئے انجام دی گئیں، جب کہ 6 ریاستوں کے 15 بلاکس میں ربیع 2019-20 میں ان طریقوں کی توثیق کی گئی۔ مزید، 2020-21 کے دوران، تجرباتی مطالعات کی ملک کی 9 ریاستوں  پر محیط 100 اضلاع تک وسعت دی گئی۔ خریف 2020 میں دھان کی فصل کے لیے 7 ایجنسیوں کی مدد سے، جو2020-21 ربیع  کےچاول اور گندم کی فصل کے لیےہے۔

گرام پنچایت کی سطح پر پیداوار کا تخمینہ حاصل کرنے کے لیے مطالعہ میں مختلف ٹیکنالوجیز مثلاً سیٹلائٹ، بغیر پائلٹ کے فضائی گاڑیاں (یو اے ویز) ، نقلی ماڈل، آئی او ٹی آلات اور اے آئی / ایم ایل تکنیکوں کا استعمال کیا گیا۔

ضمیمہ - I

آر کے وی وائی اسٹارٹ اپ پروگرام کے تحت 5 نالج پارٹنرز (کے پیز) اور 24 آر۔اے بی آئیز) کی فہرست

  1. نالج پارٹنرس (کے پیز):

 

  1. نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ایگریکلچرل ایکسٹینشن مینجمنٹ (MANAGE)، حیدرآباد
  2. نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ایگریکلچرل مارکیٹنگ (NIAM) جے پور
  • iii. (3) انڈین ایگریکلچرل ریسرچ انسٹی ٹیوٹ (IARI) پوسا، نئی دہلی
  • iv. یونیورسٹی آف ایگریکلچر سائنس، دھارواڑ، کرناٹک اور
  1. آسام زرعی یونیورسٹی، جورہاٹ، آسام

2.آر کے وی وائی  ایگری بزنس انکیوبیٹرز(آر۔ اے بی آئیز):

 

  1. چودھری چرن سنگھ یونیورسٹی، حصار، ہریانہ
  2. سی ایس کے ہماچل پردیش کرشی وشو ودیالیہ، پالم پور، ہماچل پردیش
  • iii. آئی آئی ٹی ۔بنارس ہندویونیورسٹی ، وارانسی، اتر پردیش
  • iv. جواہر لعل نہرو کرشی وشو ودیالیہ، جبل پور، مدھیہ پردیش
  1. آئی سی اے آر۔ انڈین ویٹرنری ریسرچ انسٹی ٹیوٹ، عزت نگر، بریلی، اتر پردیش
  • vi. پنجاب زرعی یونیورسٹی، لدھیانہ، پنجاب
  1. اندرا گاندھی کرشی وشو ودیالیہ، رائے پور، چھتیس گڑھ
  2. شیر کشمیر یونیورسٹی آف ایگریکلچرل سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی، جموں، جموں و کشمیر
  • ix. آئی آئی ایم، کاشی پور، اتراکھنڈ
  1. کیرالہ زرعی یونیورسٹی، تھریسور، کیرالہ
  • xi. آئی سی اے آر- انڈین انسٹی ٹیوٹ آف ملٹس ریسرچ، حیدرآباد، تلنگانہ
  1. تمل ناڈو زرعی یونیورسٹی (ٹی ا ین اے یو) ، کوئمبٹور، تمل ناڈو
  2. ایگری انوویشن اینڈ انٹرپرینیورشپ سیل، انگرا، آندھرا پردیش
  3. نیشنل رائس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ، کٹک، اوڈیشہ
  4. ایس کے این ایگریکلچر یونیورسٹی، جوبنر، راجستھان
  5. انڈین انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی کھڑگپور، مغربی بنگال
  6. بہار زرعی یونیورسٹی، بھاگلپور، بہار
  7. آنند زرعی یونیورسٹی، آنند، گجرات
  8. آئی سی اے آر- سنٹرل انسٹی ٹیوٹ فار ریسرچ آن کاٹن ٹیکنالوجی، ممبئی، مہاراشٹر
  9. ڈاکٹر پنجاب راؤ دیش مکھ کرشی ودیا پیٹھ، اکولا، مہاراشٹر
  10. آئی سی اے آر۔این آ:ی وی ای ڈی آئی ، بنگلورو، کرناٹک
  11. کالج آف فشریز، لیمبوچیرا، تریپورہ
  12. محکمہ ویٹرنری میڈیسن کالج آف ویٹرنری سائنسز اینڈ اینیمل ہسبنڈری، میزورم
  13. کالج آف ہارٹیکلچر اینڈ فاریسٹری، پاسیگھاٹ، اروناچل پردیش

 

 

ضمیمہ۔ II

نمبرشمار

سرگرمی

اپلیکیشن

1.

کیلے کی سپلائی چین کے لیے بلاک چین ٹیکنالوجی کے ساتھ امیج (بصری اور ایکس رے) کی بنیاد پر آم کی چھانٹی اور درجہ بندی کے نظام اور سینسر پر مبنی مانیٹرنگ سسٹم  کا فروغ

آم کی مختلف کوالٹی کی درجہ بندی کرنے کے لیے جو آم کی پروسیسنگ صنعتوں کے ساتھ ساتھ کسی بھی تجارتی ایپلی کیشنز کے لیے اولین ضرورت ہے۔ بلاک چین ٹیکنالوجی کا استعمال سپلائی چین میں کیلے کے معیار تک رسائی اور نگرانی کے لیے کیا جائے گا اور اس لیے منبع سے آخر تک کیلے کا سراغ لگانا ممکن ہے۔

2.

کولڈ سٹوریج کے لیےآئی او ٹی پر مبنی ریئل ٹائم انٹیلیجنٹ مانیٹرنگ اور کنٹرولنگ سسٹم کا فروغ

اسٹوریج روم کے اندر مائیکرو انوائرمنٹ کی ریئل ٹائم مانیٹرنگ اور کنٹرول کے لیے ذخیرہ کیے جانے والے اجناس کے لیے پروڈکٹ کے معیار کی حالت کی پیشین گوئی

3.

زراعت اور ماحولیات میں الیکٹرانکس اور آئی سی ٹی ایپلی کیشنز پر قومی پروگرام کے تحتاے آئی  پر مبنی سے چلنے والے روبوٹک ایپل ہارویسٹ کی رہنمائی کے لیے وژن کافروغ۔

مشین ویژن تکنیک کا استعمال کرتے ہوئے  پکے ہوئے سیب کی شناخت اور اسٹوریج یونٹ میں سیب کی کٹائی اور حفاظت

4.

خودکار جوٹ گریڈنگ سسٹم کی ترقی۔

جوٹ کی موثر درجہ بندی کے لیے۔

5.

آئی او ٹی پر مبنی سینچائی کے نظام کا فروغ

زرعی فصل کی خودکار اور موثر آبپاشی کے لیے۔

 

**********

ش ح۔ ح ا۔ ف ر

U. No.14434



(Release ID: 1887006) Visitor Counter : 150


Read this release in: English