سماجی انصاف اور تفویض اختیارات کی وزارت
azadi ka amrit mahotsav

سماجی انصاف کے تحت  قوانین

Posted On: 26 JUL 2022 4:45PM by PIB Delhi

سماجی انصاف اورتفویض اختیارات کے وزیر مملکت جناب اے نارائن سوامی نے آج لوک سبھا میں ایک تحریری جواب میں  یہ معلومات فراہم کی کہ سماجی انصاف اور تفویض اختیارات  بنانے کا محکمہ مندرجہ ذیل ایکٹ پر عمل درآمد کر رہا ہے:-

  1. چھوت چھات کو ختم کرنے اور اس کے رواج کو کسی بھی شکل میں ممنوع قرار دینے کے لیے پارلیمنٹ کا ایک ایکٹ یعنی پروٹیکشن آف سول رائٹس(پی سی آر) ایکٹ، 1955 نافذ ہے۔
  2. درج فہرست ذاتوں اور درج فہرست قبائل سے تعلق رکھنے والے افراد کے خلاف جرائم کو روکنے اور ان پر قدغن لگانے کے لئے، پارلیمنٹ کا ایک اور ایکٹ یعنی ‘‘ درج فہرست ذاتیں اور درج فہرست قبائل ( مظالم کی روک تھام) ایکٹ، 1989’’ نافذ ہے۔
  3. والدین اور بزرگ شہریوں کی دیکھ بھال اور بہبود ایکٹ۔
  4. دستی صفائی کرنے والوں کے طور پر ملازمت کی ممانعت اور ان کی بازآبادکاری ایکٹ، 2013۔
  5.  مخنث  افراد  (تحفظ حقوق) ایکٹ، 2019۔

 پی سی آر اور پی او اے ایکٹ

چھوت چھات کو ختم کرنے اور اس کے رواج کو کسی بھی شکل میں ممنوع قرار دینے کے لیے پارلیمنٹ کا ایک ایکٹ یعنی پروٹیکشن آف سول رائٹس(پی سی آر) ایکٹ، 1955 نافذ ہے۔

مزید برآں، درج فہرست ذاتوں اور درج فہرست قبائل کے ارکان کے خلاف جرائم کو روکنے اور  ان پر قدغن  لگانے  کے لیے، پارلیمنٹ کا ایک اور ایکٹ یعنی ‘‘درجہ فہرست ذاتیں اور درج فہرست قبائل (مظالم کی روک تھام) ایکٹ، 1989’’نافذ ہے۔

ایکٹ کی دفعات کو مؤثر طریقے سے نافذ کرنے کے لیے شہری حقوق کے تحفظ کے قواعد، 1977 اورایس سی/ ایس ٹی ( پی او اے)  ضوابط ، 1995 بھی وضع کئے گئے ہیں۔

چونکہ ‘پولیس’ اور ‘ امن  عامہ’ ہندوستان کے آئین کے ساتویں شیڈول (فہرست-II) کے تحت ریاستوں سے تعلق رکھنے والے موضوعات  ہیں، اس لئے پی سی آر  ایکٹ، 1955 اور درج فہرست ذاتوں اور درج فہرست قبائل (مظالم کی روک تھام) ایکٹ، 1989 کے نفاذ کی بنیادی ذمہ داری ریاستی حکومتوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں  کی انتظامیہ کی  ہے۔

تاہم، حکومت ہند نے  درج فہرست ذاتوں اور درج فہرست قبائل  سے تعلق رکھنے والے افراد  پر ہونے و الے  مظالم کے خلاف قومی ہیلپ لائن قائم کی ہے تاکہ شکایات کے اندراج اور مختلف سطحوں پر ان کے ازالے کے لیے پیروی کی جا سکے۔ حکومت ایکٹ کے نفاذ کا قومی جائزہ بھی لیتی ہے، بشمول بروقت مجرمانہ کارروائی، اور معاوضے کی ادائیگی۔ حکومت وقتاً فوقتاً ریاستی حکومتوں/ مرکز کے زیرانتظام علاقوں کی  انتظامیہ کو پی او اے ایکٹ اور اس کے تحت بنائے گئے اصولوں کے مؤثر نفاذ کے لیے مشورے بھی جاری کرتی ہے۔

پی سی آر ایکٹ، 1955 اور درج فہرست ذات/ درج فہرست قبائل (پی او اے) ایکٹ، 1989 کے نفاذ کے لیے ایک مرکزی اسپانسر شدہ اسکیم بھی نافذ ہے جس کے تحت ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو اس کے تحت بنائے گئے ایکٹ اور قواعد کے مؤثر نفاذ کے لیے مرکزی امداد فراہم کی جاتی ہے۔ مرکزی امداد بنیادی طور پر درج ذیل امور کے لئے  فراہم کی جاتی ہے:-

  1. درج فہرست ذاتوں اور درج فہرست قبائل پروٹیکشن سیل اور اسپیشل پولیس اسٹیشنوں کا کام  کاج  چلانا  اور اُنہیں  مضبوط کرنا۔
  2.  مخصوص خصوصی عدالتوں کا قیام اور ان کا  کام کاج  چلانا۔
  3. ظلم کے متاثرین کی امداد اور بحالی۔
  4. بین ذات کی شادیوں کے لیے ترغیب، جہاں میاں بیوی میں سے کوئی ایک درج فہرست ذات کا رکن ہو۔
  5. بیداری پیدا کرنا۔

اسکیم کا فنڈنگ ​​پیٹرن اس طرح ہے کہ  مختص کردہ  ذمہ داری سے زیادہ کل اخراجات کو 50:50 کی بنیاد پر مرکزی حکومت اور متعلقہ ریاستی حکومت کے درمیان بانٹ دیا جاتا ہے اور مرکز کے زیرانتظام علاقوں  کی انتظامیہ کو 100فیصد مرکزی امداد ملتی ہے۔

ریاستی سطح پر نگرانی کا طریقہ کار:

درج فہرست ذاتوں اور درج فہرست قبائل (مظالم کی روک تھام) رولز، 1995 کا قاعدہ 16، قاعدہ 17 اور 17A چیف منسٹر کی صدارت میں ریاستی سطح کی چوکسی اور نگرانی کمیٹیوں (ایس ایل وی ایم سی) کے قیام کے لیے فراہم کرتا ہے، ضلعی سطح کی نگرانی اور نگرانی۔ ضلع مجسٹریٹ کی سربراہی میں کمیٹیاں(ڈی ایل وی ایم سی)  سب ڈویژنل لیول مجسٹریٹ کی صدارت میں سب ڈویژنل لیول ویجیلنس اینڈ مانیٹرنگ کمیٹی پی او اے ایکٹ کی دفعات کے نفاذ کا جائزہ لینے کے لیے۔

مرکزی سطح پر نگرانی کا طریقہ کار

  • مرکزی سطح پر، سماجی انصاف اور  تفویض اختیارات  کے مرکزی وزیر کی صدارت میں ایک کمیٹی بھی تشکیل دی گئی ہے جو   ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں شہری حقوق کے تحفظ کے ایکٹ 1955 اور درج فہرست ذاتوں اور درج فہرست قبائل (مظالم کی روک تھام) ایکٹ 1989 کے نفاذ کی صورتحال کا جائزہ لے گی۔ کمیٹی اس سلسلے میں اب تک 26 اجلاس کر چکی ہے۔
  • اسکیموں کی پیشرفت کا جائزہ لینے کے لیے مرکزی کابینہ کے وزیر اور وزیر مملکت کا ریاستوں کا دورہ۔
  • مرکزی حکومت کے افسران اسکیموں کی کارکردگی کا جائزہ لینے کے لیے ریاستوں/مرکز کے زیر انتظام علاقوں کا دورہ کرتے ہیں۔

 

والدین اور بزرگ شہریوں کی دیکھ بھال اور بہبود ایکٹ: دسمبر 2007 میں نافذ کیا گیا تھا تاکہ والدین اور بزرگ شہریوں کی ضرورت پر مبنی دیکھ بھال اور ان کی فلاح و بہبود کو یقینی بنایا جا سکے۔ یہ ایکٹ پورے ہندوستان تک پھیلا ہوا ہے اور ایکٹ کے نفاذ کی ذمہ داری بنیادی طور پر ریاستی حکومتوں پر ہے۔ ایکٹ کے تحت، ریاستی حکومتوں نے ٹربیونلز تشکیل دیے ہیں اور ٹربیونلز کے لیے مفاہمتی عمل سے تعلق رکھنے والے  نامزد افسران، دیکھ بھال سے وابستہ  آفیسرز اور پریذائیڈنگ افسران کو نامزد کیا ہے۔ مختلف اضلاع میں نادار بزرگ شہریوں کے لیے اولڈ ایج ہوم قائم کیے گئے ہیں۔ بزرگ شہریوں کی طبی نگہداشت کے انتظامات وزارت صحت اور خاندانی امور کے قومی پروگرام برائے صحت کی دیکھ بھال کے تحت آتے ہیں۔ مرکزی حکومت تمام ریاستی حکومتوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں سے سالانہ پیشرفت رپورٹ طلب کرتی ہے تاکہ ایکٹ کی مختلف دفعات کے نفاذ کے سلسلے میں ہونے والی  پیش رفت پر نظر رکھی جا سکے۔

دستی صفائی کرنے والوں کے طور پر ملازمت کی ممانعت اور ان کی بازآبادکاری ایکٹ: 2013 ایم ایس ایکٹ، 2013 کی مختلف دفعات کے نفاذ کی نگرانی کے لیے سینٹرل مانیٹرنگ کمیٹی، ریاستی سطح کی مانیٹرنگ کمیٹیوں اور ضلع اور سب ڈویژن کی سطح پر ویجیلنس کمیٹیوں کے ذریعے ایک بہتر طور پر  ترتیب دیا ہوا نگرانی کا طریقہ کار فراہم کرتا ہے۔ اس کے علاوہ، وقتاً فوقتاً رپورٹس، ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے سینئر افسران کے ساتھ باقاعدگی سے ملاقاتوں اور سماجی انصاف اور بااختیار بنانے کے وزیر کی صدارت میں مرکزی نگرانی کمیٹی کی میٹنگوں کے ذریعے بھی عمل آوری کی پیش رفت کی نگرانی کی جاتی ہے۔ ریاستی حکومتوں کو ایم ایس ایکٹ، 2013 کے نفاذ کے لیے کسی فنڈ کی ضرورت نہیں ہے۔

مخنث افراد ( حقوق کا تحفظ) ایکٹ 2019: 10 جنوری 2020 کو نافذ ہوا۔ مذکورہ ایکٹ کے سیکشن 17(b) کے مطابق، نیشنل کونسل فار ٹرانس جینڈر پرسنز (این سی ٹی پی)  پالیسیوں  اور ٹرانس جینڈر افراد کی مساوات اور مکمل شرکت کے لیے ڈیزائن کیے گئے پروگرام کے اثرات کی نگرانی کرے گی  اور جائزہ لے گی ۔ موجودہ بنیادی ڈھانچے اور وسائل کو ایکٹ کے نفاذ کے لیے استعمال کیا جانا ہے۔ مالی سال 2022-2021کے دوران 25 کروڑ روپے کی رقم مختص کی گئی تھی جس کے تحت مخنث افراد کی فلاح و بہبود کے لیے مرکزی سیکٹر اسکیم کے تحت ‘‘پسماندہ افراد اور روزی روٹی انٹرپرائز (ایس ایم آئی ایل ای) کے لیے سپورٹ’’۔ ذیلی اسکیم کے تحت ایکٹ سے اخذ کردہ گریما گرہ، مخنث افراد سیل وغیرہ کے قیام کے لیے فنڈز جاری کیے جاتے ہیں۔

مندرجہ بالا ایکٹ کے تحت پچھلے 03 سالوں کے دوران ریاستی حکومتوں بشمول اتر پردیش، گجرات، مغربی بنگال اور مہاراشٹر کو ریاست وار جاری کیے گئے فنڈز کی تفصیلات ضمیمہ میں ہیں۔

ضمیمہ

پی سی آر ایکٹ 1955 اور(پی او اے) درج فہرست ذات اور درج فہرست قبائل ایکٹ 1989 کے لیے مرکزی اسپانسر شدہ اسکیم کے تحت ریاست اتر پردیش، گجرات، مغربی بنگال اور مہاراشٹر سمیت ریاستی حکومتوں/ مرکز کے زیرانتظام علاقوں کی  انتظامیہ کو مرکزی امداد جاری کی گئی۔

 

نمبرشمار

 ریاست/ مرکز کے زیرانتظام علاقے

2019-20

2020-21

2021-22

1.

آندھرا پردیش

4814.34

3429.99

920.00

2.

آسام

0.00

15.00

10.00

3.

بہار

1220.00

1505.00

3500.00

4.

چھتیس گڑھ

1696.40

2159.19

1983.91

5.

چنڈی گڑھ

75.00

50.00

71.00

6.

 دہلی

16.00

25.00

7.45

7.

گوا

4.00

3.00

3.00

8.

گجرات

3981.16

3314.16

1978.63

9.

ہریانہ

1214.61

1360.00

1821.20

10.

ہماچل پردیش

477.00

382.75

314.96

11.

جموںو کشمیر

0.00

0.00

93.20

12.

جھار کھنڈ

266.00

28.83

319.33

13.

کرناٹک

6867.25

6542.75

6185.26

14.

کیرالہ

2746.07

1099.15

1763.52

15.

لکشدیپ

0.00

0.00

12.00

16.

مدھیہ پردیش

7900.33

8349.19

10341.53

17.

مہاراشٹر

6194.75

5813.52

773.00

18.

اوڈیشہ

3206.31

3508.79

4408.71

19.

پڈوچیری

209.00

787.55

365.63

20.

پنجاب

0.00

18.66

780.49

21.

راجستھان

2048.33

4770.06

7163.45

22.

سکم

25.00

0.00

0.83

23.

تملناڈو

1833.05

3852.48

3544.94

24.

تلنگانہ

1993.88

819.20

1717.92

25.

تریپورہ

39.14

0.00

20.33

26.

اترا کھنڈ

102.87

94.82

78.30

27.

اترپردیش

14136.04

11302.62

12671.72

28.

مغربی بنگال

897.61

37.41

87.00

29.

دیگر(پلان ڈویژن)

0.00

3.89

0.00

30.

این ایچ اے

0.00

69.97

73.78

 

مجموعی

61964.14

59342.98

61011.09

 ایس اے پی ایس آر سی کے تحت مختلف ریاستوں/مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو گزشتہ 03 سالوں کے دوران جاری کیے گئے فنڈز کی تفصیل درج ذیل ہے:-

 

 

 

کروڑ روپے میں

 

نمبرشمار

ریاست/ مرکز کے زیرانتظام علاقے

 جاری کردہ فنڈز 2019-20

جاری کردہ فنڈز 2020-21

جاری کردہ فنڈز 2021-22

  1.  

انڈمان ونکوبار جزائر

0.375

0.0

0.0

  1.  

آندھرا پردیش

1.000

0.0

0.0

  1.  

ارونا چل پردیش

0.375

0.0

0.0

  1.  

آسام

0.750

0.0

0.22

  1.  

بہار

1.500

0.0

0.0

  1.  

چنڈی گڑھ

0.375

0.0

0.0

  1.  

چھتیس گڑھ

0.750

0.0

0.0

  1.  

دادر و نگرحویلی اور دمن اور دیو

0.75

0.0

0.0

  1.  

گوا

0.500

0.0

0.0

  1.  

گجرات

0.750

0.0

0.0

  1.  

ہریانہ

0.750

0.0

0.0

  1.  

ہماچل پردیش

0.750

0.0

0.0

  1.  

جموںو کشمیر

0.750

0.0

0.0

  1.  

جھار کھنڈ

0.750

0.0

0.0

  1.  

کرناٹک

1.500

0.0

0.0

  1.  

کیرالہ

0.750

0.0

0.0

  1.  

لکشدیپ

0.375

0.0

0.0

  1.  

مدھیہ پردیش

1.500

0.0

0.0

  1.  

مہاراشٹر

1.500

0.0

0.0

  1.  

منی پور

0.375

0.0

0.0

  1.  

میگھالیہ

0.375

0.0

0.0

  1.  

میزورم

0.500

3.04

0.0

  1.  

ناگا لینڈ

0.375

0.0

1.98

  1.  

این سی ٹی اور دہلی

0.750

0.0

0.0

  1.  

اوڈیشہ

1.000

0.0

0.0

  1.  

پڈوچیری

0.375

0.0

0.0

  1.  

پنجاب

0.750

0.0

0.0

  1.  

راجستھان

1.500

0.0

0.0

  1.  

سکم

0.500

0.0

0.16

  1.  

تملناڈو

1.500

0.0

0.0

  1.  

تلنگانہ

1.000

4.02

0.0

  1.  

تریپورہ

0.500

0.0

0.0

  1.  

اترپردیش

1.500

0.0

0.0

  1.  

اترا کھنڈ

0.750

0.19

0.0

  1.  

مغربی بنگال

1.500

0.0

0.0

 

مجموعی

29.00

7.25

2.36

مالی سال 2021-22 کے دوران ‘‘پسماندہ افراد اور روزی روٹی انٹرپرائز (ایس ایم آئی ایل ای) کے لیے سپورٹ’’ کی مرکزی سیکٹر اسکیم کے تحت ٹرانس جینڈر افراد کی بہبود کے ذیلی جزو کے تحت ریاستوں/ مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو جاری کیے گئے فنڈز

نمبرشمار

ریاست کانام

جاری کردہ رقم( لاکھ روپے میں)

1.

بہار

14.586

2.

دہلی

14.586

3.

چھتیس گڑھ

14.586

4.

گجرات

14.586

5.

مہاراشٹر

14.586

6.

اوڈیشہ

14.586

7.

راجستھان

14.586

8.

تملناڈو

14.586

9.

مغربی بنگال

14.586

 

مجموعی

131.274

*************

 

 

ش ح۔ س ب۔ رض

U. No.9059



(Release ID: 1855992) Visitor Counter : 23


Read this release in: English