امور داخلہ کی وزارت

مرکزی وزیر داخلہ و تعاون جناب امت شاہ نے نیو رائے پور، چھتیس گڑھ میں قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) کے دفتر کا افتتاح کیا

Posted On: 27 AUG 2022 9:00PM by PIB Delhi

وزیراعظم جناب نریندر مودی کی قیادت میں مرکزی حکومت نے این آئی اے کو وفاقی جرائم کی تحقیقاتی ایجنسی کے طور پر مزید مضبوط بنانے کے لیے کئی اہم اقدامات کیے ہیں۔

این آئی اے نے مختصر عرصے میں اپنے کام کے شعبے کے ہر پہلو میں اعلی معیار قائم کرکے خود کو دنیا میں انسداد دہشت گردی کی ایک اہم تحقیقاتی ایجنسی کے طور پر منوایا ہے۔

این آئی اے نے سزا میں طلائی معیار ات طے کیے ہیں اور سزا کی شرح 94 فیصد تک حاصل کر لی ہے اور وہ بھی ایسے معاملات میں جہاں ثبوت تلاش کرنا مشکل تھا

جناب نریندر مودی کی قیادت میں حکومت نے بائیں بازو کی انتہا پسندی سے لے کر جعلی کرنسی اور منشیات سمیت دہشت گردی تک کے تمام جرائم کے خلاف زیرو ٹالرنس کی پالیسی اپنائی ہے۔

زیرو ٹالرنس پالیسی کو مزید مستحکم کرنے کے لیے جناب نریندر مودی کی قیادت میں حکومت دہشت گردی سے متعلق معلومات ریاستوں کے ساتھ شیئر کرنے اور انسداد دہشت گردی قوانین کو مضبوط اور سخت تر بنانے کے لیے کام کر رہی ہے۔

ایجنسی کو مضبوط بنانے کے لیے این آئی اے کے طریقہ کار میں تفتیش کا معیار، بہترین افرادی قوت اور تربیت، مسلسل سیکھنے کا عمل، بہترین تکنیک - سائبر اور فورینسک مدد شامل کی گئی ہے

2019 کے بعد حکومت نے این آئی اے ایکٹ اور یو اے پی اے ایکٹ میں انتہائی اہم ترامیم کی ہیں، اس کے ساتھ ساتھ دہشت گرد تنظیموں پر پابندی عائد کرنے اور انھیں دہشت گرد تنظیم قرار دینے کے ساتھ ساتھ این آئی اے کو تنظیموں کے ساتھ ساتھ افراد کو دہشت گرد قرار دینے کا اختیار دیا گیا ہے۔

اب تک این آئی اے نے 36 افراد کو دہشت گرد قرار دیا ہے اور ان افراد کو دہشت گرد قرار دیا ہے۔

جناب نریندر مودی کی قیادت میں حکومت دہشت گردی کے واقعات سے متعلق مقدمات پر ایف آئی آر، تحقیقات اور سپریم کورٹ کے فیصلوں کے پچھلے 50 برسوں کا ڈیٹا بیس بنا رہی ہے

مودی سرکار کے قیام کے بعد کشمیر کو مکمل طور پر دہشت گردی سے پاک کرنے کی کوشش کی گئی ہے، دفعہ 370 کی منسوخی کے بعد کشمیر میں امن قائم ہے اور سیکورٹی اداروں نے مکمل بالادستی قائم کرکے دہشت گردی کی سرگرمیوں کو روکا ہے۔

جناب نریندر مودی کی قیادت میں حکومت بائیں بازو کی انتہا پسندی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لیے بھی پرعزم ہے اور آج بائیں بازو کی انتہا پسندی کے اثرات چند اضلاع تک محدود ہو چکے ہیں۔

2009 میں بائیں بازو کی دہشت گردی کے 2258 واقعات ہوئے جو سب سے زیادہ تھے، ان میں 77 فیصد کمی کی گئی اور 2021 میں یہ تعداد 509 تک پہنچ گئی، 2010 میں 1005 شہری اور سیکورٹی اہلکار اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے جو سب سے زیادہ تھے، 2021 میں یہ تعداد 147 تھی جو 85 فیصد کم تھی۔

اس سے قبل بائیں بازو کی انتہا پسندی 120 اضلاع میں پھیل چکی تھی جو اب کم ہو کر صرف 46 رہ گئی ہے اور یہ ایک بہت بڑی کامیابی ہے، پرتشدد واقعات میں 50 فیصد کمی اور ہتھیار ڈالنے میں 140 فیصد اضافہ ظاہر کرتا ہے کہ بہت اچھی کامیابی ملی ہے۔

چھتیس گڑھ کے کچھ علاقے اب بھی بائیں بازو کی انتہا پسندی سے متاثر ہیں لیکن ہمیں یقین ہے کہ حکومت ہند اور چھتیس گڑھ کی حکومت دونوں مل کر بائیں بازو کی انتہا پسندی کو ختم کرنے میں کامیاب ہوں گے۔

انتہا پسندوں کی لڑائی کسی ریاستی حکومت یا مرکزی حکومت کی نہیں بلکہ انسانیت، ملک اور معیشت کے خلاف ہے۔

جب تک بائیں بازو کی انتہا پسندی کا خاتمہ نہیں ہوتا، ترقی متاثرہ علاقوں تک نہیں پہنچ سکتی اور جب تک ترقی نہیں ہوتی، عوام ترقی کے فوائد حاصل نہیں کر سکتے۔

حکومت نے بائیں بازو کی انتہا پسندی سے متاثرہ علاقوں میں ترقی کے لیے بھی متعدد اقدامات کیے ہیں جیسے رابطے، تعلیم، روزگار، سڑکوں کی تعمیر اور سیکورٹی فورسز کو مضبوط بنایا جا رہا ہے، گذشتہ 8 برسوں میں اس جنگ کو فیصلہ کن مرحلے تک لے جانے میں کامیابی ملی ہے۔

جناب امت شاہ نے تیجا پولا تہوار کے موقع پر چھتیس گڑھ کے عوام کو گرم جوشی سے مبارکباد پیش کی۔ انھوں نے کہا کہ ہمارے اجداد نے بہت سوچ بچار کے ساتھ تہوار تخلیق کیے ہیں۔

 

مرکزی وزیر داخلہ و تعاون جناب امت شاہ نے آج چھتیس گڑھ کے نیو رائے پور میں قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) کے دفتر کا افتتاح کیا۔ اس موقع پر چھتیس گڑھ کے وزیر اعلی جناب بھوپیش بگھیل، سابق وزیر اعلی جناب رمن سنگھ، مرکزی وزیر محترمہ رینوکا سنگھ، این آئی اے کے ڈائریکٹر جنرل دینکر گپتا اور تفتیشی ایجنسی کے سینئر افسران موجود تھے۔ جناب امت شاہ نے چھتیس گڑھ کے عوام کو تیجا پولا تہوار کے موقع پر مبارکباد پیش کی اور کہا کہ ہمارے اجداد نے بہت سوچ بچار کے ساتھ تہوار تخلیق کیے ہیں۔

مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ چھتیس گڑھ میں قومی تحقیقاتی ایجنسی کی نئی عمارت این آئی اے کی بڑھتی ہوئی صلاحیت کی علامت ہے۔ انھوں نے کہا کہ کسی ایجنسی کے قیام، ابھرنے، ساکھ پیدا کرنے اور اپنے نظام کے قیام اور نتائج لانے میں کافی وقت لگتا ہے۔ این آئی اے کے قیام میں زیادہ وقت نہیں ہوا ہے لیکن کچھ ہی عرصے میں این آئی اے نے انسداد دہشت گردی کی ایک اہم تحقیقاتی ایجنسی کے طور پر پہچان بنالی ہے اور اسے دنیا بھر میں تسلیم کیا گیا ہے۔ یہ اس کے کام کے ہر پہلو میں ایک معیار قائم کرکے ممکن ہوا ہے اور یہ قوم کے لیے فخر کی بات ہے۔

جناب امت شاہ نے کہا کہ این آئی اے نے سزا میں گولڈ اسٹینڈرڈ قائم کیا ہے۔ این آئی اے نے تقریبا 94 فیصد سزا کی شرح حاصل کی ہے اور وہ بھی ایسے معاملات میں جہاں ثبوت تلاش کرنا مشکل ہے۔ وزیر داخلہ نے کہا کہ این آئی اے نے اس معاملے کی کامیابی سے تفتیش کرکے اپنے قیام کے تمام مقاصد کو باوقار طریقے سے پورا کیا جہاں یہ سازش بھارت سے باہر کی گئی تھی اور ان مقدمات میں ملوث زیادہ تر افراد کے موقع پر ہی ہلاک ہونے کا امکان تھا۔ ایجنسی ان معاملات کی تہہ تک پہنچی اور ملوث لوگوں کو تلاش کیا اور ملک کی سرحدوں کے اندر اور باہر سازشیوں کا نیٹ ورک تلاش کیا اور ان کا خاتمہ کیا۔ مرکزی وزیر داخلہ نے این آئی اے کے ڈائریکٹر جنرل اور این آئی اے کی پوری ٹیم کو اس محاذ کے لیے مبارکباد دی۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image002XWHJ.jpg

وزیر داخلہ نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت میں حکومت ہند نے این آئی اے کو اعلی درجے کی وفاقی جرائم کی تحقیقاتی ایجنسی بنانے کے لیے پچھلے تین برسوں میں کئی اہم قدم  اٹھائے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ گذشتہ برسوں میں این آئی اے نے اپنی کارروائیوں کو 10 ریاستوں تک توسیع دی ہے اور 3 برسوں میں 18 ریاستوں میں اپنی رسائی کو مضبوط کیا ہے۔ جناب شاہ نے امید ظاہر کی کہ مئی 2024 تک این آئی اے تمام ریاستوں میں اپنی موجودگی کا احساس دلائے گی۔

امیت شاہ نے کہا کہ جناب نریندر مودی کی قیادت میں حکومت نے بائیں بازو کی انتہا پسندی، جعلی کرنسی، منشیات اور دہشت گردی سے متعلق جرائم کے خلاف زیرو ٹالرنس پالیسی اپنائی ہے اور یہی وجہ ہے کہ حکومت نے این آئی اے کو مضبوط بنانے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی ہے۔ انھوں نے کہا کہ زیرو ٹالرنس پالیسی کو مزید مستحکم کرنے کے لیے جناب نریندر مودی کی قیادت میں حکومت دہشت گردی سے متعلق تمام معلومات ریاستوں کے ساتھ شیئر کرنے اور انسداد دہشت گردی کے تمام قوانین کو مضبوط اور سخت بنانے کے لیے سیاست سے بالاتر ہو کر کام کر رہی ہے۔ انھوں نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف تحقیقات کرنے والے تمام اداروں کو مضبوط بنانے اور سزا کی شرح 100 فیصد کرنے کا مقصد رکھنے کی ضرورت ہے۔ مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ این آئی اے کو مضبوط بنانے میں تفتیش کا معیار، بہترین افرادی قوت اور تربیت، سیکھنے کا مسلسل عمل، بہترین تکنیک ، سائبر اور فورینسک مدد شامل کی گئی ہے۔ اس کے نتیجے میں این آئی اے نے بتدریج خود کو دہشت گردی کے خلاف ادارے کے طور پر منوایا ہے اور اسے یقین ہے کہ وہ آنے والے دنوں میں ملک کو دہشت گردی اور بائیں بازو کی انتہا پسندی کی لعنت سے نجات دلائے گی۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image003R71E.jpg

مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ 2019 کے بعد حکومت نے این آئی اے ایکٹ اور یو اے پی اے ایکٹ میں بہت اہم ترامیم کی ہیں۔ اس نے ملک سے این آئی اے کا دائرہ کار ان ممالک تک بڑھا دیا ہے جن کے ساتھ ہمارے سفارتی معاہدے ہیں تاکہ این آئی اے سازشیوں تک پہنچ سکے اور ملک سے باہر سے ہونے والے کسی بھی دہشت گردحملے کی جڑ کی تحقیقات کرسکے۔ اس کے علاوہ این آئی اے کو انسانی اسمگلنگ، پابندی وں والے دھماکہ خیز مواد اور سائبر جرائم جیسے معاملات کی تحقیقات کا اختیار بھی دیا گیا ہے۔ دہشت گرد تنظیموں پر پابندی لگانے اور انھیں دہشت گرد تنظیمیں قرار دینے کے ساتھ ساتھ این آئی اے کو تنظیموں کے ساتھ ساتھ افراد کو دہشت گرد قرار دینے کا اختیار بھی دیا گیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ عام طور پر دیکھا گیا کہ جب کسی تنظیم پر پابندی عائد کی جائے گی تو دہشت گرد کسی اور نام سے نئی تنظیم تشکیل دیں گے لیکن جب کسی شخص کو دہشت گرد قرار دے کر اس پر پابندی عائد کر دی جائے گی تو پھر ان کے مسائل بڑھ جاتے ہیں۔ مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ اب تک این آئی اے نے 136 افراد کو دہشت گرد قرار دیا ہے اور ان افراد کو دہشت گرد قرار دینے کو بین الاقوامی سطح پر تسلیم کیا گیا ہے۔

جناب امت شاہ نے کہا کہ این آئی اے کو نہ صرف ایک تفتیشی ایجنسی ہونا چاہیے بلکہ ایک ایسی تنظیم ہونی چاہیے جو اس شعبے میں مکمل ڈیٹا بیس تیار کرسکے۔ حکومت نے گذشتہ 50 برسوں میں ہونے والے دہشت گردی کے واقعات کے بارے میں ایف آئی آر، ان کی تحقیقات اور سپریم کورٹ کے فیصلوں کے این آئی اے کے ساتھ ڈیٹا بیس بنانا شروع کردیا ہے۔ اسی طرح دھماکہ خیز مواد کا ڈیٹا بیس بنانے کی کوشش کی گئی ہے اور این آئی اے آرٹیفیشل انٹیلی جنس کے ذریعے اس ڈیٹا بیس کے تجزیے کے ذریعے دہشت گردوں کے کام کا طریقہ کار تلاش کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ یہ تجزیہ ریاستی اے ٹی ایس اور کرائم برانچوں کے افسران کی تربیت میں بہت مفید ثابت ہوگا۔

مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ مودی حکومت کے قیام کے بعد کشمیر کو دہشت گردی سے مکمل طور پر پاک کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ آرٹیکل 370 کی منسوخی کے بعد کشمیر میں امن نظر آ رہا ہے اور سیکورٹی اداروں نے مکمل غلبہ قائم کرکے دہشت گردی کی سرگرمیوں کو روکا ہے۔ انھوں نے کہا کہ اس کی ایک اہم وجہ این آئی اے کی جانب سے دہشت گردی کی مالی معاونت کرنے والے افراد کے خلاف 2018، 2019 اور 2020 میں کی گئی سخت کارروائیاں ہیں۔ جناب شاہ نے کہا کہ اس عرصے کے دوران دہشت گردی کی مالی معاونت کے 105 مقدمات درج کیے گئے اور 876 ملزمان کو پکڑا گیا جبکہ 105 میں سے 94 مقدمات میں چارج شیٹس دائر کی گئیں۔

مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ جناب نریندر مودی کی قیادت میں حکومت بائیں بازو کی انتہا پسندی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لیے پرعزم ہے۔ اب بائیں بازو کی انتہا پسندی بہت کم اضلاع تک محدود ہو چکی ہے۔ انھوں نے کہا کہ 2009 میں بائیں بازو کی انتہا پسندی کے سب سے زیادہ واقعات 2258 تھے جن میں 77 فیصد کی کمی واقع ہوئی تھی جو 2021 میں کم ہو کر صرف 509 رہ گئی تھی۔ عام شہری اور سیکورٹی اہلکار جو اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے جو 2009 میں سب سے زیادہ 1005 تھے، 2021 میں 85 فیصد کم ہو کر صرف 147 ہو گئے۔ جناب شاہ نے کہا کہ اس سے قبل بائیں بازو کی انتہا پسندی 120 اضلاع میں پھیلی ہوئی تھی جو اب کم ہو کر صرف 46 رہ گئی ہے، یہ ایک بہت بڑی کامیابی ہے۔ پرتشدد واقعات میں 50 فیصد کمی اور ہتھیار ڈالنے والوں میں 140 فیصد اضافہ ظاہر کرتا ہے کہ بڑی کامیابی ملی ہے۔ انھوں نے کہا کہ چھتیس گڑھ کے کچھ علاقے اب بھی بائیں بازو کی انتہا پسندی سے متاثر ہیں لیکن انھیں یقین ہے کہ حکومت ہند اور چھتیس گڑھ کی حکومت دونوں مل کر بائیں بازو کی انتہا پسندی کے خاتمے میں کامیاب ہوں گے۔ مرکزی وزیر داخلہ نے کہا کہ حکومت ہند بائیں بازو کی انتہا پسندی اور دہشت گردی کے خلاف ریاستی حکومتوں کا تعاون بھی لے رہی ہے اور ریاستی حکومت کو تعاون فراہم کرتی ہے۔ یہ لڑائی کسی ریاستی حکومت یا مرکزی حکومت کی جنگ نہیں ہے بلکہ یہ انسانیت، ملک اور معیشت کے لیے ہے۔ جب تک بائیں بازو کی انتہا پسندی کا خاتمہ نہیں ہوتا، ترقی متاثرہ علاقوں تک نہیں پہنچ سکتی اور جب تک ترقی نہیں ہوتی، عوام ترقی کے فوائد حاصل نہیں کر سکتے۔ جناب امت شاہ نے کہا کہ حکومت نے بائیں بازو کی انتہا پسندی سے متاثرہ علاقوں میں ترقی کے لیے بھی بہت سے اقدامات کیے ہیں۔ ان علاقوں میں رابطے، تعلیم، روزگار، سڑکوں کی تعمیر اور سیکورٹی فورسز کی مضبوطی کا کام شروع کیا جا رہا ہے۔ انھوں نے کہا کہ گذشتہ 8 برسوں میں اس لڑائی کو اپنے حتمی نتیجے تک پہنچانے میں کافی کامیابی دیکھی گئی ہے۔

***

(ش ح – ع ا – ع ر)

U. No. 9598



(Release ID: 1854940) Visitor Counter : 135


Read this release in: English , Marathi