بھاری صنعتوں کی وزارت
azadi ka amrit mahotsav

بھاری صنعتوں کی وزارت نے پی ایل آئی کے درخواست دہندہ کے ای آر پی سسٹم سے پی ایل آئی خودکار پورٹل پر گھریلو قدر میں اضافہ (ڈی وی اے) سے متعلق اہم ڈیٹا اکٹھا کرنے کے لیے خودکار آن لائن ڈیٹا ٹرانسفر کا آغاز کیا


بھاری صنعتوں کی وزارت شفافیت، کاروبار کرنے میں آسانی، چہرے کے بغیر اور خودکار سرٹیفیکیشن پر مبنی تشخیص کو فعال کرنے میں پیش پیش ہے

آئی ٹی سے چلنے والے اس عمل کو متعارف کروا کر کاغذ کے بغیر ادائیگی کو یقینی بنایا جائے

عالی جناب وزیر اعظم نریندر مودی کے میک ان انڈیا اور آتم نربھر بھارت ابھیان کو بڑا فروغ

Posted On: 11 AUG 2022 3:49PM by PIB Delhi

بھاری صنعتوں کی وزارت نے آج پی ایل آئی درخواست دہندگان کے ای آر پی (انٹرپرائز ریسورس پلاننگ) سسٹم سے پی ایل آئی خودکار پورٹل میں گھریلو قدر میں اضافہ (ڈی وی اے) سے متعلق اہم ڈیٹا اکٹھا کرنے کے لیے خودکار آن لائن ڈیٹا ٹرانسفر کا آغاز کیا ہے۔

پی ایل آئی اسکیم کے تمام منظور شدہ درخواست دہندگان کا اپنا ای آر پی سسٹم ہے۔ ای آر پی سافٹ ویئر کی ایک قسم ہے جسے تنظیمیں کاروباری سرگرمیوں کو منظم کرنے کے لیے استعمال کرتی ہیں۔ آئی ٹی سے چلنے والا نظام درخواست دہندہ کے موجودہ ای آر پی سسٹم سے محفوظ ماحول میں بھاری صنعتوں کی وزارت کے پی ایل آئی خودکار پورٹل پر ڈیٹا کی آسانی سے منتقلی کے قابل بنانے کے لیے وضع کیا گیا ہے۔ ایپلیکیشن پروگرامنگ انٹرفیس (اے پی آئی) درخواست دہندہ کے ای آر پی سسٹم کے ساتھ سرایت کرے گا اور اس اسکیم میں خودکار اور کاغذ سے مبرا پروسیسنگ کو قابل بنائے گا۔ عام حالات میں درخواست دہندگان کو بڑے پیمانے پر دعوے دائر کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ یہ سہولت خودکاری لاکر کاغذی کام کو ختم کر دیتی ہے۔ اس طرح آئی ٹی سے چلنے والا یہ نظام ایک طرف درخواست دہندگان کی طرف سے تعمیل کے بوجھ کو کم کرے گا اور دوسری طرف یہ دعوے کی تیز تر کارروائی کے قابل بنائے گا۔

یہ نظام معروف او ای ایم اور خودکار جزو مینوفیکچرنگ کمپنیوں کے ساتھ مکمل اسٹیک ہولڈرز کی مشاورت کے بعد وضع کیا گیا ہے۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے بھاری صنعتوں کے مرکزی وزیر ڈاکٹر مہیندر ناتھ پانڈے نے کہا کہ یہ عمل شفافیت، کاروبار کرنے میں آسانی، چہرے کے بغیر اور خودکار سرٹیفیکیشن پر مبنی تشخیص اور کاغذ سے پاک ڈیلیوری کے لیے اہم اقدامات ہیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ عزت مآب وزیر اعظم نریندر مودی کی میک ان انڈیا اور آتم نربھر بھارت مہم کو اس نظام سے بڑا فروغ ملے گا۔

حکومت نے 25,938 کروڑ روپے کے بجٹ کے ساتھ ایڈوانسڈ آٹو موٹیو پروڈکٹس (اے اے ٹی) کے لیے بھارت کی مینوفیکچرنگ صلاحیتوں کو بڑھانے کے لیے پیداوار سے منسلک ترغیبات (پی ایل آئی) اسکیم برائے آٹوموبائل اور آٹو جزو انڈسٹری (پی ایل آئی-خودکار) کو منظوری دی ہے۔ یہ اسکیم پانچ سالوں کی مدت میں 42,500 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کے ہدف کے تخمینہ کے مقابلے میں 67,690 کروڑ روپے کی مجوزہ سرمایہ کاری کو راغب کرنے میں کامیاب رہی ہے۔ یہ اسکیم 2.3 لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ کی اے اے ٹی مصنوعات کی بڑھتی ہوئی پیداوار لائے گی۔

زبردست ردعمل ظاہر کرتا ہے کہ صنعت نے ایک عالمی معیار کی مینوفیکچرنگ مرکز کے طور پر بھارت کی شاندار ترقی پر اپنے اعتماد کا اظہار کیا ہے جو کہ عزت مآب وزیر اعظم کے آتم نربھر بھارت - ایک خودکفیل ہندوستان کی پرزور اپیل کے ساتھ مضبوطی سے گونجتا ہے۔

پی ایل آئی-خودکار اسکیم ایڈوانسڈ آٹوموٹیو ٹیکنالوجی (اے اے ٹی) مصنوعات کی گھریلو مینوفیکچرنگ کو فروغ دینے اور آٹوموٹیو مینوفیکچرنگ ویلیو چین میں سرمایہ کاری کو راغب کرنے کے لیے مالی مراعات کی تجویز پیش کرتی ہے۔

ایڈوانسڈ آٹوموٹیو ٹیکنالوجی (اے اے ٹی) اسکیم صرف ان اہل پروڈکٹس کو ترغیب دیتی ہے جن کے لیے کم از کم 50 فیصد گھریلو ویلیو ایڈیشن (ڈی وی اے) حاصل کیا جاتا ہے۔ اس اسکیم کے تحت کم از کم 50 فیصد گھریلو ویلیو ایڈیشن کے ساتھ پہلے سے منظور شدہ اہل مصنوعات ترغیب کے لیے اہل ہوں گی۔ یہ معیار ہندوستان کے باہر سے درآمدات کو کم کرے گا۔ بھارت میں اے اے ٹی پروڈکٹس کے لیے گہری مقامیت کو فعال کرے گا اور بھارت کی آٹو موٹیو انڈسٹری کو عالمی سپلائی چین کے اہم کھلاڑی کے قابل بنائے گا۔

مالی سال 23-2022 پہلا مالی سال ہے جس کے لیے ایک منظور شدہ درخواست دہندہ طے شدہ فروخت پر ترغیب کا دعویٰ کر سکتا ہے۔ کم از کم 50 فیصد ڈی وی اے کے ساتھ اے اے ٹی مصنوعات کی فروخت، یکم اپریل 2022 سے فروخت کے ساتھ 5 سال کی مدت کے لیے ترغیب کے لیے اہل ہوں گے۔

پی ایل آئی خودکار میں کام کرنے اور پروسیسنگ کا پورا نظام باہمی اعتماد پر مبنی ہے۔ فائدہ اٹھانے والے کے ذریعہ جو کچھ بھی دائر کیا جائے گا اسے بھاری صنعتوں کی وزارت کے ذریعہ مانا جائے گا اور قبول کیا جائے گا۔ تاہم، کسی بھی شکایت پر، یہ بھاری صنعتوں کی وزارت کو تصدیق کے لیے ڈیجیٹل فٹ پرنٹ تلاش کرنے کی اجازت دے گا۔

خودکار آن لائن گھریلو ویلیو ایڈیشن (ڈی وی اے) اکٹھا کرنے کے عمل کی نمایاں خصوصیات:

درخواست دہندگان اپنی تمام اہل مصنوعات کے لیے تفصیلی ڈی وی اے کیلکولیشن کو اپنے انٹرپرائز ریسورس پلاننگ (ای آر پی) سسٹم میں برقرار رکھیں گے۔ ای آر پی سسٹم، اے اے ٹی پروڈکٹ کی سطح پر اجزاء کے لحاظ سے قدروں، اجزاء کے حساب سے ڈی وی اے اور حتمی ڈی وی اے کی تفصیلات کے ساتھ ہر بیچ/ پروڈکٹ/ ماڈل/ مختلف کے لیے ڈی وی اے کیلکولیشن کو برقرار رکھے گا۔

درخواست دہندگان کا ای آر پی سہ ماہی بنیادوں پر ایپلیکیشن پروگرامنگ انٹرفیس (اے پی آئی) کے ذریعے پروڈکٹ کے لحاظ سے ڈی وی اے کو پی ایل آئی خودکار پورٹل پر بھیجے گا۔ ایک اے پی آئی، قواعد کا ایک مجموعہ ہے جو مختلف پروگراموں کو ایک دوسرے سے بات چیت کرنے دیتا ہے، جس سے انٹرنیٹ پر ڈیٹا اور فعالیت کو ظاہر ہوتا ہے۔ یہ ایک آرکیٹیکچرل پیٹرن ہے جو بتاتا ہے کہ کس طرح تقسیم شدہ نظام محفوظ سائبر ماحول میں ایک مستقل انٹرفیس کو بے نقاب کر سکتے ہیں۔

 

اے پی آئی تک رسائی حاصل کرنے کے لیے درخواست دہندگان کی ای آر پی کو ​​https://pliauto.in/api/authenticate  لنک تک رسائی حاصل کرکے خود کو مستند کرنا ہوگا اور پھر https://pliauto.in/api/postDVA  تک رسائی حاصل کرکے ڈی وی اے ڈیٹا جمع کرانا ہوگا۔

درخواست دہندگان کا ای آر پی صرف پروڈکٹ کے حساب سے ڈی وی اے کو پی ایل آئی خودکار پورٹل پر بھیجے گا۔ ہر پروڈکٹ کے لیے ڈی وی اے کا تفصیلی حساب صرف درخواست دہندہ کے ای آر پی میں رکھا جائے گا تاکہ ان کے تجارتی راز یا رازداری/ فراہم کنندگان یا صارفین کے ساتھ رازداری ظاہر نہ کرنے کے معاہدوں کی خلاف ورزی نہ ہو۔

درخواست دہندگان کو اپنے ای آر پی سسٹم میں سہ ماہی ڈی وی اے حساب کتاب کو ضروری آڈٹ ٹریلز کے ساتھ کم از کم 31مارچ 2030 تک (یعنی اسکیم کے بند ہونے کے دو سال) تک یا جیسا کہ بھاری صنعتوں کی وزارت کی طرف سے مشورہ دیا جا سکتا ہے۔ مزید برآں درخواست دہندگان کو صرف بھاری صنعتوں کی وزارت سے پیشگی اجازت کے ساتھ اپنے ای آر پی پورٹل سے ڈی وی اے ڈیٹا کو حذف/تباہ کرنے کی اجازت ہوگی۔

خودکار اور کاغذ کے بغیر کام کرنے کا یہ نظام اسکیم کے تحت 5 سال کی مدت میں یعنی مالی برس 23-2022 سے مالی برس 27-2026 تک جاری رہے گا۔

مندرجہ بالا سسٹم/پروٹوکول گزشتہ چار ماہ سے زیادہ عرصے سے معروف او ای ایم اور اجزاء کمپنیوں کے ساتھ مکمل مشاورت کے بعد وضع کیا گیا ہے۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

ش ح۔ م ع۔ع ن

 (U: 9034)



(Release ID: 1851050) Visitor Counter : 39


Read this release in: English , Hindi