بندرگاہوں، جہاز رانی اور آبی راستوں کی وزارت

بھارت میں کروز ٹورزم 10 گنا بڑھنے کی صلاحیت رکھتا ہے: جہاز رانی کے وزیر سربانند سونووال


پہلی انکریڈیبل انڈیا انٹرنیشنل کروز کانفرنس 2022 ممبئی میں جاری ہے

Posted On: 14 MAY 2022 4:06PM by PIB Delhi

 

بندرگاہوں، جہاز رانی اور آبی گزرگاہوں کے مرکزی وزیر جناب سربانند سونووال نے اس بات پر زور دیا ہے کہ ہندوستانی کروز مارکیٹ میں اگلی دہائی میں 10 گنا بڑھنے کی صلاحیت ہے جو بڑھتی ہوئی مانگ اور قابل استعمال آمدنی سے حوصلہ مل رہا ہے۔ انہوں نے آج ممبئی میں پہلی ناقابل یقین انڈیا انٹرنیشنل کروز کانفرنس 2022 کا افتتاح کرنے کے بعد کہا کہ ‘‘حکومت ہند اس صلاحیت کا ادراک کر رہی ہے اور ہندوستان کو سمندری اور دریائی دونوں سفروں کے لیے جدید ترین انفراسٹرکچر کے ساتھ ایک عالمی کروز ہب کے طور قائم کرنے  کیلئے پُرعزم ہے’’۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/Sonowal1.JPEGQCCF.jpg

جناب سونووال نے کہا کہ ہندوستان ایک شاندار کروز منزل ہے۔ انہوں نے کہا کہ 7,500 کلومیٹر ساحلی پٹی اور وسیع دریا کے نظام کے ساتھ، ہندوستان کے بہت سے پرکشش مقامات کو دنیا کے سامنے آنا باقی ہے۔ انہوں نے کہا کہ عالمی کھلاڑیوں نے ہندوستان میں کروز ٹورازم کو فروغ دینے میں گہری دلچسپی ظاہر کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ صحیح بنیادی ڈھانچے کی ترقی اور جدید ٹکنالوجی کی تعیناتی کے ساتھ ہندوستان یقیناً دنیا کے اعلیٰ سیاحتی مقامات میں شامل ہو جائے گا۔

کروز ٹورازم پر ٹاسک فورس کی مدد کے لیے ایڈوائزری پینل کا قیام

جناب سونووال نے کہا کہ حکومت نے کروز ٹورازم کی ترقی کے لیے سکریٹری ٹورازم اور شپنگ سکریٹری کی صدارت میں ایک ٹاسک فورس تشکیل دی ہے۔ وزیر نے آج قومی اور بین الاقوامی ماہرین پر مشتمل ایک اعلیٰ سطحی مشاورتی کمیٹی کے قیام کا اعلان کیا تاکہ ملک میں کروز ٹورازم کی ترقی کے لیے سازگار ماحول پیدا کرنے میں ٹاسک فورس کی مدد کی جا سکے۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/Sonowal2.JPEGFYK2.jpg

وزیر اعظم جناب نریندر مودی کی اپیل کا حوالہ دیتے ہوئے جناب سونووال نے کہا ‘ٹرانسپورٹیشن کے ذریعے تبدیلی ممکن ہے اور اس کے لیے ہمیں ٹیکنالوجی سے فائدہ اٹھانے کی ضرورت ہے۔’ بندرگاہوں کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے کہا تھا کہ کروز ٹورازم کے تناظر میں بندرگاہ پر مبنی ترقی خاص طور پر نقل و حمل اور سیاحت میں ایک جامع ماحولیاتی نظام کو فروغ دینے میں مدد دے سکتی ہے۔

سیاحت اور بندرگاہوں، جہاز رانی اور آبی گزرگاہوں کی وزارت کی کوششوں کی وضاحت کرتے ہوئے، ریاستی وزیر جناب شریپد نائک نے کہا، ‘‘چار تھیم والے ساحلی منزل کے سرکٹس جیسے گجرات تیرتھ یاترا، مغربی ساحل - ثقافتی اور قدرتی سیاحت، جنوبی ساحل - آیورویدک فلاح و بہبود اور مشرق۔ ساحلی ثقافتی سیاحت کو فعال کروز کی طلب کے لیے تیار کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ساحلی سیاحوں کو راغب کرنے کے لیے لائٹ ہاؤس اور جزیرہ بھی تیار کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ریور کروز یا ان لینڈ کروز،کروز ٹورازم کا ایک اور ممکنہ جزو ہے جس میں امکانات تلاش کیے جا سکتے ہیں۔

سکریٹری، بندرگاہوں اور جہاز رانی جناب سنجیو رنجن نے کہا کہ عالمی وبا کے بعد ہندوستان میں سیاحت کا شعبہ تیزی سے ترقی کر رہا ہے اور کروز ٹورازم میں سال بہ سال 35 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ہند نے ہیریٹیج ٹورازم، آیوروید ٹورازم، کوسٹل ٹورازم، ریور کروز ٹورازم وغیرہ پر فوکس کرتے ہوئے میری ٹائم ویژن ڈاکیومنٹ 2030 تیار کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ صبح کے اسٹیک ہولڈر میٹنگ میں عالمی کروز لائنرز کے ساتھ ساتھ اسٹارٹ اپس کے لیے نئے کاروباری مواقع پر تفصیل سے تبادلہ خیال کیا گیا۔

حکومت ہند کے اقدامات

ہندوستان کا ہدف کروز مسافروں کی تعداد کو موجودہ 4 لاکھ سے بڑھا کر 40 لاکھ کرنا ہے۔ آنے والے برسوں میں کروز ٹورازم کی اقتصادی صلاحیت110 ملین سے بڑھ کر 5.5 بلین ہونے کی توقع ہے۔ ملک میں کروز ٹورازم کی صنعت کو فروغ دینے کے لیے حکومت ہند نے کئی اقدامات کیے ہیں جیسے بنیادی ڈھانچے کی اپ گریڈیشن، بندرگاہ چارجز کو معقول بنانا، بے دخلی کے چارجز کو ہٹانا، کروز جہازوں کو ترجیح دینا، ای ویزا کی سہولت فراہم کرنا وغیرہ۔

ملک کی سات بڑی بندرگاہوں کو اپ گریڈ اور جدید بنایا جا رہا ہے۔ اس میں ممبئی کا نیا بین الاقوامی کروز ٹرمینل بھی شامل ہے جس کی کل لاگت 495 کروڑ روپے ہے۔بی پی ایکس اندرا ڈاک میں تعمیر کیا جانے والا مشہور میری ٹائم کروز ٹرمینل کے جولائی 2024 تک کام کرنے کی امید ہے۔ ٹرمینل میں سالانہ 200 جہازوں اور 10 لاکھ مسافروں کو سنبھالنے کی گنجائش ہوگی۔ اسی طرح کے بنیادی ڈھانچے کی اپ گریڈیشن گوا، نیو منگلورو، کوچی، چنئی، وشاکھاپٹنم اور کولکتہ میں بھی ہو رہی ہے۔

پیر پاؤ میں ممبئی پورٹ اتھارٹی کی تیسری کیمیکل برتھ کا سنگ بنیاد

افتتاحی اجلاس کے دوران مرکزی وزراء جناب سونووال اور جناب نائک نے پیر پاؤ جیٹی میں ممبئی پورٹ اتھارٹی کی تیسری کیمیکل برتھ کا سنگ بنیاد رکھا جس میں ایل پی جی سمیت کیمیکلز کو ہینڈل کیا جا سکتا ہے۔ اس برتھ کی درجہ بندی کی گنجائش 2 ایم ٹی پی اے  ہوگی اور اسے وہاں سے 72,500 ٹن تک کے بڑے گیس کیریئرز اور ٹینکروں کو فراہم کیا جائے گا۔ یہ او آئی ایس ڈی کے اصولوں کے تحت جدید ترین حفاظتی معیارات سے لیس ہوگا۔

رتناگیری ضلع میں کیلشی لائٹ ہاؤس کا افتتاح

کانفرنس کے دوران مہاراشٹر کے رتناگیری ضلع میں کیلشی لائٹ ہاؤس کا بھی دور سے افتتاح کیا گیا۔ نیا لائٹ ہاؤس ضلع رائے گڑھ میں نانویل پوائنٹ لائٹ ہاؤس اور ضلع رتناگیری میں تولکیشور لائٹ ہاؤس کے درمیان 85 کلومیٹر کا فاصلہ پورا کرتا ہے۔ اس سے مقامی ماہی گیروں کی دن رات حفاظت یقینی ہو گی۔

کانفرنس کے بارے میں

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/Sonowal3.JPEG5CV8.jpg

پہلی ناقابل یقین انڈیا انٹرنیشنل کروز کانفرنس کا اہتمام بندرگاہوں، جہاز رانی اور آبی گزرگاہوں کی وزارت، حکومت ہند اور فکی نے مشترکہ طور پر کیا ہے۔ دو روزہ پروگرام کے دوران مختلف امور پر تبادلہ خیال کیا جائے گا جس میں ہندوستان کو کروز ہب کے طور پر ترقی دینے کی حکمت عملی، پالیسی اقدامات، بندرگاہ کا بنیادی ڈھانچہ، دریائی کروز ٹورازم کی صلاحیت، عالمی وبا کے بعد کی دنیا میں ٹکنالوجی کا کردار وغیرہ اہم ہے۔

کانفرنس میں بین الاقوامی اور ہندوستانی کروز لائن آپریٹرز، سرمایہ کاروں، صنعت کے ماہرین، صلاحکار، مرکز اور ریاستی حکومتوں کے سینئر عہدیداروں، بندرگاہوں، میری ٹائم بورڈز اور ٹورازم بورڈ سمیت مختلف اسٹیک ہولڈرز کے 300 سے زیادہ مندوبین شرکت کر رہے ہیں۔

 

 

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ش ح۔م ع۔ع ن

                                                                                                                                      (U: 5400)



(Release ID: 1825733) Visitor Counter : 176


Read this release in: English , Hindi , Marathi