پنچایتی راج کی وزارت
azadi ka amrit mahotsav

پسماندہ علاقوں کے لئے گرانٹ فنڈ (بی آر جی ایف)

Posted On: 21 DEC 2021 5:08PM by PIB Delhi

نئی دہلی:21 دسمبر،2021۔پنچایتی راج کے مرکزی وزیر مملکت جناب کپل موریشور پاٹل نے آج لوک سبھا میں ایک سوال کے تحریری جواب میں اطلاع فراہم کی کہ پنچایتی راج کی وزارت (ایم او پی آر) 07-2006 سے 15-2014 کی مدت کے دوران پسماندہ علاقوں کے گرانٹ فنڈ (بی آر جی ایف) پروگرام (ضلعی جزو) کو نافذ کر رہی تھی جس نے شناخت شدہ اضلاع میں موجودہ ترقیاتی رقوم کی تکمیل کے لیے مالی وسائل فراہم کیے تھے تاکہ مقامی بنیادی ڈھانچہ اور دیگر ترقیاتی ضروریات میں اہم خلا کو پر کیا جا سکے۔ بی آر جی ایف پروگرام کو چودھویں مالیاتی کمیشن کی سفارشات کے نفاذ کے نتیجے میں 16-2015 سے مرکزی حکومت کی بجٹ امداد سے الگ کر دیا گیا ہے جس کے تحت مرکزی ٹیکسوں کی خالص آمدنی میں ریاستوں کا حصہ نمایاں طور پر 32 فیصد سے بڑھا کر 42 فیصد کر دیا گیا ہے، جس نے ریاستوں کو خاص طور پر پسماندہ علاقوں کے لیے ترقیاتی اسکیموں کی مالی اعانت اور ڈیزائننگ کے لیے زیادہ خود مختاری کی اجازت دی۔ مزید برآں جیسا کہ نیتی آیوگ کی طرف سے مطلع کیا گیا ہے، نیتی آیوگ کے ذریعے نافذ کردہ امنگوں والے اضلاع کے پروگرام کا مقصد 112 امنگوں والے اضلاع میں تیزی سے تبدیلی لانا ہے جو کہ صحت اور غذائیت، اسکولی تعلیم اور بنیادی ڈھانچے، زراعت وغیرہ جیسے اہم سماجی اور اقتصادی اشاریوں میں نسبتاً کم پیش رفت کو ظاہر کرتا ہے۔ ان اضلاع کی کارکردگی کی نگرانی ماہانہ بنیادوں پر کی جاتی ہے جو عوامی ڈومین میں چیمپئنز آف چینج ڈیش بورڈ (http://championsofchange.gov.in/site/coc-home/)پر دستیاب ہے۔ امنگوں والے اضلاع کے پروگرام کی وسیع حکمت عملی 3 سی پر منحصر ہے - کلی میل (مرکزی اور ریاستی اسکیموں کے درمیان)، تعاون (مرکز، ریاست، ضلعی انتظامیہ، ترقیاتی شراکت داروں اور شہریوں کے درمیان) اور مقابلہ (اضلاع کے درمیان)۔ ہر ماہ اضلاع کی درجہ بندی مذکورہ بالا اہم کارکردگی کے اشاریوں پر ہونے والی پیشرفت کی بنیاد پر کی جاتی ہے اور اس سے ان میں مسابقت کا جذبہ پیدا ہوتا ہے جس کے نتیجے میں تیزی سے بہتری آتی ہے۔

-----------------------

ش ح۔م ع۔ ع ن

U NO: 14615



(Release ID: 1784067) Visitor Counter : 73


Read this release in: English