کارپوریٹ امور کی وزارتت

کارپوریٹ امور کی وزارت کے ذریعہ کووڈ – 19  کی وبا کے سبب پیدا شدہ دشواریوں کے ازالے کے لئے کئے گئے اقدامات

Posted On: 29 NOV 2021 6:17PM by PIB Delhi

کارپوریٹ اُمور کی وزارت (ایم سی اے) کمپنی قانون 2013 ، محدود جواب دہی ، شراکت  داری قانون 2008 اور  دیوالہ و  دیوالیہ پن  قانون 2016 کے  التزامات  کا  انتظام و انصرام کرتی ہے۔ ایم سی اے  ایونٹ بیس اعداد وشمار  نہیں رکھتی۔ یہ بات  کارپوریٹ  امور کے مرکزی وزیر مملکت  جناب راؤ اندر جیت  سنگھ نے  آج  لوک سبھا میں  ایک سوال کے   جواب میں کہی۔

 تاہم وزیر موصوف نے کہا کہ  یکم اپریل 2016  سے  31  مارچ  2021 کے دوران آج کی تاریخ  تک   نئی  رجسٹرڈ کمپنیوں  کی  مجموعی تعداد  ضمیمہ ایک  (Annexure A)میں دی گئی ہے ۔

مزید تفصیلات  پیش کرتے ہوئے  وزیر موصوف نے کہا کہ  ’’بند کمپنی‘‘ اصطلاح  کی  تعریف  بھی  قانون کے  اندر  نہیں کی گئی ہے۔ تاہم  متعلقہ قانون کی دفعہ  248 (1) کے  التزامات  کو  پیش نظر  رکھتے ہوئے  اگر  رجسٹرار  کے پاس  یہ  یقین  کرنے کی  معقول  وجہ ہو  کہ  کمپنیاں  مسلسل دو  مالی  برسوں  سے  کوئی کام  یا  آپریشن  انجام  نہیں دے رہی ہیں اور  اس مدت کے دوران  دفعہ 455  کے تحت   ڈورمنٹ کمپنی  کی صورت حال  کے حصول کے لئے  کوئی درخواست  نہیں دی ہے  تو  وہ  قانونی  طریقہ کار پر  عمل کرتے ہوئے ایسی کمپنیوں کے نام  کمپنیوں کے  رجسٹر سے  ہٹا سکتا ہے۔

وزیر  موصوف نے مزید کہا کہ  کمپنیاں  انضمام  یا   ہائی کورٹس کی  منظوری سے بھی  ختم  کی جاسکتی ہیں۔ اس ضمن میں یکم  اپریل  2016  سے 31  مارچ 2021  کے دوران  آج تک  ایسی  کمپنیوں  کی تعداد  کی  تفصیل ضمیمہ بی (Annexure B)  میں دی گئی ہے۔

وزیر موصوف نے مزید کہا کہ  کووڈ – 19  کی وبا کے سبب  پیدا شدہ  دشواریوں  کو دور کرنے کے لئے  کارپوریٹ امور کی  وزارت کے ذریعہ کئے گئے اقدامات  حسب ذیل ہیں۔

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/specificdocs/documents/2021/nov/doc2021113011.pdf

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۰۰۰۰۰۰۰۰

(ش ح- م م- ق ر)

U-13476



(Release ID: 1776374) Visitor Counter : 173


Read this release in: English