سائنس اور ٹیکنالوجی کی وزارت

بلیو اسٹریگلر-ایک بڑا اور نیلا ستارہ اس وقت  بنتا ہے جب ایک ستارہ دوسرے کو نگل جائے

Posted On: 02 SEP 2021 5:31PM by PIB Delhi

نئی دہلی ، 02ستمبر    ،  2021

 

بلیو اسٹریگلر کھلے یا گولے کی شکل کے گروپوں میں ستاروں کا ایک ایسا زمرہ ہے جو الگ ہی دکھائی دیتا ہے کیونکہ وہ باقی ستاروں کے مقابلے میں نسبتاً بڑے اور نیلے رنگ کے ہوتے ہیں۔یہ ان سائنس دانوں کو تشویش میں ڈالتے ہیں جنہوں نے طویل عرصے سے ان ستاروں کی اصلیت  کا مطالعہ کیا ہے۔

بلیو اسٹریگلرز کے پہلے جامع تجزیے میں ، ہندوستانی محققین نے پایا ہے کہ ان کے مشاہدہ کردہ نیلے رنگ کے آدھے حصے دو قریبی دو قطبی ساتھی ستارے سے مادے کی بڑے پیمانے پر منتقلی کے ذریعے تشکیل پاتے ہیں۔ ایک تہائی ممکن ہے کہ دو ستاروں کے درمیان ٹکراؤ کے ذریعہ سے بنتے ہیں  اور باقی دو سے زیادہ ستاروں کے باہمی عمل سے بنتے ہیں۔

ستاروں کا ایک گروہ جو کہ ایک ہی وقت میں پیدا ہوتا ہے ایک ہی بادل سے جو کہ اسٹار سسٹم میں موجود ہے ایک اور گروپ الگ سے تشکیل دیتا ہے۔ وقت گزرنے کے ساتھ ، ہر ستارہ اپنے بڑے پیمانے پر مختلف انداز میں بڑھنے لگتا ہے۔ ان ستاروں میں سے سب سے بڑے اور روشن ترین ستارے تیار ہوتے ہیں اور مرکزی ترتیب سے ہٹ جاتے ہیں ، جس کی وجہ سے ان کے راستے میں رکاوٹ پیدا ہوتی ہے جسے ٹرن آف کہا جاتا ہے۔ گرم اور روشن ستارے جو اس موڑ سے گزر چکے ہیں ان سے دوبارہ اسی گروپ میں رہنے کی توقع نہیں ہے ، کیونکہ وہ پھر مرکزی دھارے کو چھوڑ کر ریڈ دیو بن جاتے ہیں۔ لیکن 1953 میں ، ایلن سینڈیج نے دریافت کیا کہ کچھ ستارے پیرنٹ کلسٹر کے ٹرن آف سے زیادہ گرم لگتے ہیں۔ ابتدائی طور پر یہ نیلے ستارے ٹرن آف کے اوپر اور اس کے گرد منڈلاتے ہیں ان کلسٹروں کا حصہ نہیں تھے۔ تاہم ، بعد کے مطالعے نے تصدیق کی کہ یہ ستارے واقعی ایک ہی کلسٹر کے ممبر تھے اور پھر انہیں "بلیو اسٹریگلرز" کہا جاتا ہے۔ یہ ستارے اب بھی اس طرح کے جھرمٹ میں موجود ہوسکتے ہیں کہ وہ راستے میں کچھ اضافی بڑے پیمانے پر حاصل کر سکتے ہیں ، ممکنہ طور پر ابھی تک مرکزی دھارے میں ہیں۔ اس طرح اضافی نظام کو حاصل کرنے والے نظام کی تصدیق کرنے کے لیے نیلے رنگ کے ستاروں کے بڑے نمونے اور ان کے حاصل کردہ بڑے پیمانے کے تخمینوں کا استعمال کرتے ہوئے مجموعی مطالعہ کی ضرورت ہوتی ہے۔

انڈین انسٹی ٹیوٹ آف ایروفزکس (آئی آئی اے) کے وکرانت جادھو اور ان کے پی ایچ ڈی سپروائزر اناپورنی سبرامنیم نے یورپی خلائی ایجنسی کی جانب سے2013 میں لانچ کی گئی گایا ٹیلی اسکوپ کا استعمال کیا، تاکہ کلسٹروں میں نیلے رنگ کے اسٹرگلرز کو ان کی بہترین پوزیشننگ کی درستگی کے ساتھ دیکھا جا سکےکہ ابھی ایسے کئی ستارے وہاں موجود ہیں ، وہ کہاں ہیں اور کیسے بنتے ہیں؟

انہوں نے پایا کہ جن گروپوں کو انہوں نے دیکھا اور اسکین کیا ان میں 868 میں سے کُل 228بلیو اسٹریگلرس ہیں۔ بلیو اسٹریگلرس  کا یہ پہلا وسیع تجزیہ رائل ایسٹرونامیکل سوسائٹی کے ماہانہ نوٹس میگزین میں شائع ہوا ہے۔ اس سے پتہ چلا کہ یہ ستارے بنیادی طورپر پرانے اور بڑے ستاروں کے گروپوں  میں ہی موجود ہیں اور ان کے زیادہ بڑے پیمانے پر ہونے کی وجہ سے وہ گروپوں کے مرکز کی طرف الگ کردئے گئے ہیں۔

اس کام کی قیادت کرنے والے تحقیق کے طالب علم   وکرانت جادھو نے کہا ،’’کُل ملاکر ،ہم نے پایا کہ 54فیصد سے زیادہ بلیو اسٹریگلرز ایک قریبی بائنری ساتھ ستارے سے بڑے پیمانے پر منتقل ہونے سے بنتے ہیں اور 30فیصد بلیو اسٹریگلرز آپسی ٹکراؤ کے ذریعہ سے بنتے ہیں۔باقی دو ستاروں کی دلچسپ بات یہ  ہے کہ دس سے 16 فیصد بلیو اسٹریگلرز دو سے زیادہ ستاروں کے باہمی عمل کے ذریعہ سے بنتے ہیں۔‘‘

 

یہ مطالعہ مختلف کہکشاؤں سمیت بڑی تارکیی آبادیوں کے مطالعے کے دلچسپ نتائج کو عیاں  کرے گا ، نیز ان تارکیی نظاموں کے بارے میں معلومات کو سمجھنے میں بہتری لائے گا۔ ان نتائج کے بعد ، محققین مختلف اقسام میں انفرادی نیلے رنگ کے اسٹرگلرز کا تفصیلی تجزیہ کر رہے ہیں تاکہ شاندار خصوصیات حاصل کریں۔ اس کے علاوہ ، اس مطالعے میں جن دلچسپ کلسٹروں اور نیلے رنگ کے اسٹرگلرز کی نشاندہی کی گئی ہے ان کی پیروی الٹرا وایلیٹ امیجنگ ٹیلی اسکوپ کے ساتھ بھارت کی پہلی وقف شدہ خلائی آبزرویٹری ، ایسٹرو سیٹ کے ساتھ ساتھ نینی تال میں 3.6 میٹر دیوستھل آپٹیکل ٹیلی اسکوپ پر کی جائے گی۔

 

 

https://static.pib.gov.in/WriteReadData/userfiles/image/image001UXXN.jpeg

 

 

Publication Link: https://arxiv.org/abs/2108.01396

مزید معلومات کےلئے وکرانت جادھو (vikrant.jadhav@iiap.res.in)  سے رابطہ کیا جاسکتا ہے

 

ش ح ۔ا م۔

U:8723



(Release ID: 1752713) Visitor Counter : 338


Read this release in: English , Hindi